உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Jammu and Kashmir: غلام نبی آزاد کی حمایت میں 5 سابق اراکین اسمبلی کا کانگریس سے استعفیٰ

    جموں وکشمیر: غلام نبی آزاد کی حمایت میں 5 سابق اراکین اسمبلی کا کانگریس سے استعفیٰ

    جموں وکشمیر: غلام نبی آزاد کی حمایت میں 5 سابق اراکین اسمبلی کا کانگریس سے استعفیٰ

    Ghulam Nabi Azad News: غلام نبی آزاد نے جمعہ کو کانگریس پارٹی چھوڑنے کا اعلان کردیا ہے۔ انہوں نے پارٹی کے سبھی عہدوں اور رکنیت سے استعفیٰ دے دیا۔ کچھ رپورٹ میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ غلام نبی آزاد جموں وکشمیر میں نئی پارٹی بنائیں گے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir, India
    • Share this:
      نئی دہلی: سینئر لیڈر غلام نبی آزاد (Ghulam Nabi Azad) کے کانگریس (Congress) سے استعفیٰ دینے کے بعد جموں وکشمیر (Jammu-Kashmir) سے بڑی خبر ہے۔ جموں وکشمیر میں 5 سابق اراکین اسمبلی نے بھی کانگریس سے جمعہ کے روز استعفیٰ دے دیا ہے۔ یہ سبھی 2014 یعنی آخری اسمبلی الیکشن میں کانگریس کے ٹکٹ پر الیکشن جیت کر رکن اسمبلی بنے تھے۔ جی ایم سروری، حاجی عبدالرشید، محمد امین بھٹ، گلزار احمد وانی اور چودھری محمد اکرم نے غلام نبی آزاد کی حمایت میں کانگریس کی ابتدائی رکنیت سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ ان 5 سابق اراکین اسمبلی اور وزرا کے ساتھ ساتھ سابق وزیر آر ایس چب، سابق وزیر جگل کشور شرما اور جنرل سکریٹری اشونی ہانڈا نے بھی استعفیٰ دے دیا ہے۔

      غلام نبی آزاد نے جمعہ کے روز کانگریس پارٹی چھوڑ دی۔ انہوں نے پارٹی کے سبھی عہدوں اور رکنیت سے استعفیٰ دے دیا۔ کچھ رپورٹ میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ غلام نبی آزاد جموں وکشمیر میں نئی پارٹی بنائیں گے۔ آزاد کافی دنوں سے ہائی کمان کے فیصلوں سے ناراض تھے۔ اسی ماہ 16 اگست کو کانگریس نے غلام نبی آزاد کو جموں وکشمیر ریاست کی تشہیری کمیٹی کا چیئرمین بنایا تھا، لیکن انہوں نے چیئرمین بنائے جانے کے دو گھنٹے بعد ہی عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ آزاد نے کہا تھا کہ یہ میری تنزلی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      غلام نبی آزاد کے استعفیٰ پر فاروق عبداللہ نے کہا- پہلے خوب پیار برستا تھا، اب عزت نہیں ملتی ہوگی

      کانگریس کی کمان سنبھالنا چاہتے تھے آزاد

      73 سال کے غلام نبی آزاد اپنی سیاست کے آخری پڑاو پر پھر ریاستی کانگریس کی کمان سنبھالنا چاہتے تھے، لیکن مرکزی قیادت نے ان کے بجائے 47 سال کے وقار رسول وانی کو یہ ذمہ داری دے دی۔ وقار رسول وانی غلام نبی آزاد کے بے حد قریبی ہیں۔ وہ بانیہال سے رکن اسمبلی رہ چکے ہیں۔ بتایا جا رہا ہے کہ غلام نبی آزاد کو یہ فیصلہ پسند نہیں آیا۔ اس لئے انہوں نے کانگریس کا ہاتھ چھوڑنے کا فیصلہ کیا۔

      جی-23 گروپ کا حصہ تھے غلام نبی آزاد

      غلام نبی آزاد پارٹی سے الگ اسی جی-23 گروپ کا حصہ بھی تھے، جو پارٹی میں کئی بڑی تبدیلیوں کی پیروی کرتا ہے۔ ان تمام سرگرمیوں کے درمیان اس استعفیٰ نے غلام نبی آزاد اور ان کے کانگریس کے ساتھ رشتوں پر سوال کھڑا کردیا ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: