உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    70 مرکزی وزراء 9 ہفتےطویل پبلک آؤٹ ریچ II میں جموں و کشمیرکا کرسکتے ہیں دورہ

    70 مرکزی وزراء 9 ہفتے طویل پبلک آؤٹ ریچ II میں جموں و کشمیرکا کرسکتے ہیں دورہ

    70 مرکزی وزراء 9 ہفتے طویل پبلک آؤٹ ریچ II میں جموں و کشمیرکا کرسکتے ہیں دورہ

    وزیر اعظم نریندر مودی کی وزارت کونسل میں سے تقریباً 70 وزراء جموں و کشمیرکے9 ہفتوں پر محیط عوامی آؤٹ ریچ پروگرام کا آغاز کریں گے اور 8 وزرا ہرہفتے 10 ستمبر سے مرکز کے زیر انتظام علاقے کا دورہ کریں گے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
    سری نگر: وزیر اعظم نریندر مودی کی وزارت کونسل میں سے تقریباً 70 وزراء جموں و کشمیرکے9 ہفتوں پر محیط عوامی آؤٹ ریچ پروگرام II کا آغازکریں گے اور 8 وزرا ہرہفتے 10 ستمبر سے مرکز کے زیر انتظام علاقے کا دورہ کریں گے، جس کے دوران وہ عوام، انتظامیہ اور پنچایتی نمائندوں کے ساتھ براہ راست بات چیت کریں گے۔ پنچایتی راج اداروں کے دیگر مسائل کے ساتھ ساتھ ان کو درپیش مسائل کی فہرست بنانا اور ان میں سے جو بھی ان کے دائرہ میں ہے ان کو حل کرنا اور وزارت داخلہ اور وزیر اعظم کے دفتر کو صحیح رپورٹس پیش کریں گے۔

    سال 2020 میں 18 سے 24 جنوری تک 36 مرکزی وزراء کے مرکز کے زیر انتظام علاقے کے دورے کے بعد یہ جموں و کشمیر کے عوام کے ساتھ مرکزی حکومت کی دوسری براہ راست رسائی ہوگی۔ ذرائع کے مطابق یہ پتہ چلا ہے کہ نریندر مودی کی وزارت کونسل کے 78 میں سے تقریباً 70 کے قریب کابینہ کے سینئر وزراء سمیت جموں وکشمیرکا دورہ کریں گے۔ تاہم، ابھی تک، وزیر اعظم کے یونین ٹیریٹری کے دورے کا کوئی شیڈول نہیں ہے۔

    وزیر اعظم کے دفتر میں مرکزی وزیر مملکت ڈاکٹر جیتیندر سنگھ، جو کہ سابقہ ​​ریاست جموں و کشمیر کے اکلوتے مرکزی وزیر ہیں، مرکزی وزرات کے مرکزی دورے کے بارے میں شیڈول کو حتمی شکل دینے میں مرکزی وزارت داخلہ کے ساتھ تعاون کر رہے ہیں۔

    ذرائع کے مطابق "شیڈول اگلے چند دنوں میں جاری ہونے کا امکان ہے۔" عارضی تجویز کے مطابق، 8 وزراء ہر ہفتے مرکزی علاقہ کا دورہ کریں گے۔ چار جموں ڈویژن میں اور چارکشمیر ڈویژن میں۔

    ذرائع نے بتایا کہ "آؤٹ ریچ پروگرام کم ازکم 9 ہفتوں تک جاری رہے گا کیونکہ تقریباً 70 وزراء جموں و کشمیرکا دورہ کریں گے۔" اس سال جولائی میں وزیر اعظم نریندر مودی کی طرف سے کئے گئے بڑے ردوبدل میں وزارت کے کونسل میں شامل کچھ وزراء نئی ذمہ داری سنبھالنے کے بعد پہلی بار جموں و کشمیر کا دورہ کریں گے۔

    ذرائع کے مطابق، "کچھ وزراء کے دورے علاقے کے مطابق ہوں گے"۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزیر زراعت کاشتکاری کے علاقوں کا دورہ کریں گے جبکہ دیہی ترقیاتی محکمہ اور شہری ترقیات کے وزیر بالترتیب دیہی اور شہری اور نیم شہری علاقوں کا دورہ کریں گے۔ مرکزی حکومت کی یہ کوشش ہوگی کہ وزٹ کرنے والے وزراء ہر بلاک میں نہ پہنچ  سکیں، لیکن ہرتحصیل میں دورہ کریں گے۔

    وزیر اعظم نریندر مودی کی وزارت کونسل میں سے تقریباً 70 وزراء جموں و کشمیرکے9 ہفتوں پر محیط عوامی آؤٹ ریچ پروگرام II کا آغازکریں گے اور 8 وزرا ہرہفتے 10 ستمبر سے مرکز کے زیر انتظام علاقے کا دورہ کریں گے۔
    وزیر اعظم نریندر مودی کی وزارت کونسل میں سے تقریباً 70 وزراء جموں و کشمیرکے9 ہفتوں پر محیط عوامی آؤٹ ریچ پروگرام II کا آغازکریں گے اور 8 وزرا ہرہفتے 10 ستمبر سے مرکز کے زیر انتظام علاقے کا دورہ کریں گے۔


    ذرائع کے مطابق، مرکزی وزراء کے مختلف حصوں کا دورہ کرنے کے بعد نئی دہلی واپسی پر وزراء اپنی رپورٹیں 2020 کی طرح وزارت داخلہ اور وزیراعظم کے دفترکو پیش کریں گے۔ لوگوں اور مرکزی وزراء نے اپنی رپورٹوں میں جموں وکشمیرکو ان سے خطاب کرنےکی طرف اشارہ کیا۔ ذرائع نے بتایا کہ"مرکزی وزارتوں سے متعلقہ کچھ مسائل کو حکومت ہند حل کرے گی جبکہ باقی کو جموں وکشمیر حکومت کے حوالے کیا جائے گا۔"

    پبلک آؤٹ ریچ پروگرام II بھی آؤٹ ریچ پروگرام I کی طرح کامیاب ثابت ہونے کا یقین ظاہر کرتے ہوئے مزید جانکاری دیتے ہوئے کہا کہ وزراء کے اس طرح کے دورے شمال مشرق میں بھی انتہائی کامیاب ثابت ہوئے ہیں، جس کے نتیجے میں کافی حد تک عوامی شکایات کا ازالہ بھی ہوا ہے۔

    سال 2020 میں، 36 مرکزی وزراء نے 18-24 جنوری تک مرکزکے زیرانتظام علاقےجموں و کشمیرکا دورہ کیا اور کئی دور دراز علاقوں کا بھی دورہ کیا۔ انہوں نے اپنی سفارشات ایم ایچ اے کے ساتھ ساتھ پی ایم او کو بھی پیش کی تھیں اور لوگوں کی طرف سے اٹھائے گئے مسائل کو مرکزی اور یوٹی حکومتوں نے حل کیا۔ پبلک آؤٹ ریچ II پہلے جولائی اور اگست کے مہینوں میں ہونے والا تھا، لیکن پارلیمنٹ کے مانسون سیشن کے بعد اسے موخر کر دیا گیا، جس کے بعد 75 واں یوم آزادی منایا گیا۔

    کانگریس کے سینئر لیڈر رمن بھلا نے کہا یہ کافی خوش آئین بات ہے کہ جموں وکشمیر میں اتنے سارے منسٹرز گھومنے کے لئے آئیں گے، لیکن باقی یہ جو باتیں ہورہی ہیں کہ پنچایت کے مسائل، شہروں کے مسائل اور لوگوں کے مسائل حل کرنے کے لئے آئیں گے، ایسا کچھ بھی نہیں ہونے والا۔ کیونکہ پچھلے سال بھی کافی سارے وزرا جموں وکشمیر میں آئے تھے اور لوگوں کے مسائل سُنے تھے، اُن میں سے ایک بھی مسائل حل نہیں ہوا ہے۔ میں مرکز سے پوچھنا چاہتا ہوں کہ پچھلے سال جب یہ آئے تھے تو کتنے مسائل لوگوں کے حل کئے گئے؟

    بی جے پی کے ریاستی صدر رویندر رینا نے بتایا کہ جموں وکشمیر کے لئے یہ ایک بہت اچھی بات ہے کہ اتنے سارے منسٹرز جموں وکشمیر میں لوگوں کے مسائل سننے آئیں گے۔ اس سے کافی حد تک لوگوں کے مسائل حل ہو جائیں گے۔ گزشتہ سال جب پہلے دورے پر جب یہ منسٹرز آئے تھے، تب بہت سارے مسائل لوگوں کے حل ہو گئے تھے۔ اُمید کرتے ہیں کہ اس بار بھی مرکزی وزرا کی ٹیم لوگوں کی فلاح وبہبود کے لئے قدم اُٹھائے گی۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: