உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    چنار کور نے شالہ ٹینگ سرینگر کی جنگ کے عنوان سے شریف آباد ہیڈ کوارٹر میں ایک منفرد لائٹ اینڈ ساؤنڈ شو کا کیا اہتمام

    جموں و کشمیر کو بچانے کے لیے ہندوستان کی آزادی کے بعد شالہ ٹینگ سرینگر میں پاکستانی قبائلیوں اور ہندوستانی مسلح افواج کے درمیان ہوئی جنگ میں پہلی فتح کی یاد میں شریف آباد سرینگر میں تقریب منعقد ہوئی۔ لائٹ اینڈ ساؤنڈ شو کے ذریعے سے شہیدوں کو خراج عقیدت پیش کیا گیا۔

    جموں و کشمیر کو بچانے کے لیے ہندوستان کی آزادی کے بعد شالہ ٹینگ سرینگر میں پاکستانی قبائلیوں اور ہندوستانی مسلح افواج کے درمیان ہوئی جنگ میں پہلی فتح کی یاد میں شریف آباد سرینگر میں تقریب منعقد ہوئی۔ لائٹ اینڈ ساؤنڈ شو کے ذریعے سے شہیدوں کو خراج عقیدت پیش کیا گیا۔

    جموں و کشمیر کو بچانے کے لیے ہندوستان کی آزادی کے بعد شالہ ٹینگ سرینگر میں پاکستانی قبائلیوں اور ہندوستانی مسلح افواج کے درمیان ہوئی جنگ میں پہلی فتح کی یاد میں شریف آباد سرینگر میں تقریب منعقد ہوئی۔ لائٹ اینڈ ساؤنڈ شو کے ذریعے سے شہیدوں کو خراج عقیدت پیش کیا گیا۔

    • Share this:
    آزادی کا امرت مہوتسو کے جشن کے ایک حصے کے طور پر اور ہندوستان کی آزادی کے بعد اپنی پہلی جنگ میں ہندوستانی مسلح افواج کی تاریخی فتح کی یاد منانے کے لیے چنار کور نے شالہ ٹینگ سرینگر کی جنگ کے عنوان سے شریف آباد ہیڈ کوارٹر میں ایک منفرد لائٹ اینڈ ساؤنڈ شو کا اہتمام کیا گیا۔ شالہ ٹینگ سرینگر کی جنگ انیس سینتالیس کی پہلی پاکستان اور بھارت کے مابین جنگ کی سب سے فیصلہ کن جنگ تھی اور اس کا جموں و کشمیر کی تاریخ اور جغرافیہ پرکافی اثر رہا۔ اس جنگ نے سرینگر کو پاکستانی فوج اور قبائلی لشکروں کے حملے سے بچا لیا۔ اس زمانے میں ایک سکھ، ایک   kumaonکماون  ، چار کماون اور سات لائٹ cavalry کیولری کے ایک سکواڈرن کی طرف سے اچھی طرح سے مربوط اور انجام دی گئی کارروائیوں نے، جس کی حمایت بھارتی فضائیہ کے حملوں سے کی گئی، نے جنگ کا رخ بدل دیا، جس میں کشمیری شہریوں اور بھارتی فوج کے سپاہیوں نے بہادری سے لڑا۔ پاکستانی افواج کو بے دخل کرنے کے ساتھ ساتھ، پانچ جنوری انیس سو انچاس کو جنگ بندی تک انہیں جموں و کشمیر کے بیشتر علاقوں سے باہر نکال دیاگیا۔تقریب میں شہید مقبول شیروانی کی قربانیوں کو بھی یاد کیاگیا۔لائٹ اینڈ ساؤنڈ extravaganza ایکسٹراوگنزا کی شکل میں بیٹل آف شالہ ٹینگ کے واقعات کویاد کرنا اور  بہادر فوجیوں کو خراج عقیدت پیش کرنے اور جموں و کشمیر کے لوگوں کی انمول شراکت کو خراج تحسین پیش کرنے کے لیے منعقد کیاگیا۔

    میڈیا سے بات کرتے ہوئے لیفٹیننٹ جنرل ڈی پی پانڈے نے کہاکہ شالہ ٹینگ میں یہ پہلا ملیٹری آپریشن تھا یہ کشمیریوں کی مدد اور حمایت کے بغیر ناممکن تھا۔پانڈے نےکہاکہ پاکستان کے خلاف اس کامیابی میں کشمیری اور بھارتی افواج دونوں برابر کے شریک ہیں۔ انہوں نے مزید کہاکہ پاکستانی قبائلیوں نے اس دور میں کشمیر میں لوٹ مار کیا یہاں کی خواتین کی عصمت دری کی۔ تاہم بھارتی فوج نے بعد میں کشمیریوں کو لوٹ مار سے بچایا۔ ڈی پی پانڈے نے بتایاکہ کشمیریوں نے پاکستانی قبائلیوں کو دھکیلنے کے لئے بھارتی افواج کا ساتھ دیا اور گائیڈ اور ٹرانسپورٹ بھی فراہم کیا۔جس سے بھارتی فوج بہ آسانی کشمیر کو اپنے قبضے میں لے گئے اور پاکستانی قبائلیوں کو واپس دھکیلنے میں کامیاب ہوگئے۔ڈی پی پانڈے نےمزید کہاکہ انڈین آرمی اور کشمیر کے لوگ ایک ساتھ ہیں۔انہوں نے کہاکہ انیس سو اکہتر،کرگل جنگ اور گزشتہ تیس برسوں سے کشمیری اور بھارتی فوج ایک ساتھ دشمن کے خلاف لڑ رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ  آج کے نوجوان کو تاریخ سمجھنے اور اپنے مستقبل کو تابناک بنانے کی ضرورت ہے۔ تاکہ وہ حقیقت سے روشناس ہوسکیں۔ انہوں نے نوجوانوں کو تلقین کی وہ صحیح تاریخ کا مطالعہ کریں۔ تاریخ کی پرانی یادوں کو دہرانے کے لئے منعقدہ اس تقریب میں لیفٹیننٹ جنرل ڈی پی پانڈے، چنار کور کمانڈر کے علاوہ اور کئی دیگر سول شخصیات اور فوج کے دیگر اعلیٰ افسران  نے شرکت کی۔

    این سی سی کیڈٹ کے ساتھ ساتھ کافی تعداد میں عام لوگوں نے بھی شرکت کی۔  اس میگا ایونٹ کا حصہ بننے کے لیے ملک بھر سے آئے ہوئے جنگی سابق فوجیوں کے قریبی رشتہ داروں نے بھی شرکت کی۔تقریب پرشالہ ٹینگ جنگ میں ان شہیدوں کی قربانیوں کویاد کیاگیا اور لواحقین کو اعزازات سے نوازا گیا۔اعزاز پانے والوں میں برگیڈیئر راجندر سنگھ کی بیٹی اوشا پرمار،جموں وکشمیر ریاستی افواج کے چیف آف سٹاف مہاویر چکرا اور لیفٹیننٹ کرنل نارائن سنگھ سمیال کی بیٹی شیر مشرا رانا، چار جے اے کے آر آئی ایف شامل ہیں۔۔ مقامی نوجوانوں نے اس تاریخی واقعے کو دہرانے اور نوجوانوں کو اس کی جانکاری دینے پر مسرت کا اظہار کیا۔ سیاسی و سماجی کارکن جاوید بیگ نے نیوز18اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ انہیں آج بہت خوشی ہوئی کہ انہیں اصل تاریخ کا پتہ چلا۔ یہاں انہیں اپنے ملک پر قربان ہوئے جوانوں پر فخر ہواجنہوں نے کشمیر کو پاکستانی قبائلیوں کے چنگل سے بچالیا۔

    میونسپل کمیٹی بارہمولہ کے صدر توصیف رینہ نے نیوز18اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ آج کا دن انتہائی اہم دن ہے اس دن ہماری ملک کے فوجی جوانوں نے کشمیر کو بچایا۔اس پروگرام کا مقصد انیس سو سینتالیس اور اڑتالیس کی ہند و پاک جنگ کے حقیقی تاریخی واقعات کی نمائش یہاں کے نوجوانوں میں جموں و کشمیر کی حقیقی تاریخ سے روشناس کرانا۔ اور جموں وکشمیر کے لوگوں کی حفاظت کے لیے بے لوث اپنی جانوں کو داؤ پر لگانے والوں کی بہادری کا مظاہرہ دکھانا تھا۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: