உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سرینگر میں پولیس کا خفیہ آپریشن ناکام، پولیس اہلکار شہید، تین ملیٹنٹ فرار

    Youtube Video

    آئی جی پی کشمیر وجے کمار کا کہنا ہے کہ باسط نامی لشکر کمانڈر سمیت کل تین ملی ٹنٹ اس علاقہ میں گھوم رہے تھے۔ انھوں نے دوسرے ملی ٹنٹ کی پہچان ریحان کے طور کی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ فائرنگ کے دوران ایک ملی ٹنٹ کو بھی گولی لگی ہے لیکن وہ انکاؤنٹر کے مقام سے فرار ہونے میں کامیاب ہوئے۔

    • Share this:
    سرینگر: سرینگر کے صورہ علاقہ میں آج ایک مختصر جھڑپ میں پولیس کا ایک ہیڈ کانسٹیبل مارا گیا۔ عامر حسین نامی ہیڈ کانسٹیبل ملی ٹنٹوں کی فائرنگ میں زخمی ہوا اور بعد میں اسپتال میں زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا۔ آئی جی پی کشمیر وجے کمار نے کہا کہ یہ پولیس اہلکار ایک خفیہ مشن پر تھا جہاں یہ ایک مختصر جھڑپ میں مارا گیا۔ آئی جی پی کشمیر نے تفصیلات دیتے ہوئے کہا کہ پولیس نے تین ملی ٹنٹوں کی موجودگی کے بعد خفیہ آپریشن شروع کیا۔ عام لباس میں ملبوس پولیس اہلکار ایک گاڑی کا تعاقب کررہے تھے جس میں تین ملی ٹنٹ سوار تھے بعد میں فائرنگ کا تبادلہ ہوا اور ہری کپواڑہ سے تعلق رکھنے والے پولیس ہیڈ کانسٹیبل عامر حسین زخمی ہوا اور اسے اسکمز سرینگر منتقل کیا گیا جہاں وہ جانبر نہ ہوسکا۔

    آئی جی پی کشمیر وجے کمار کا کہنا ہے کہ باسط نامی لشکر کمانڈر سمیت کل تین ملی ٹنٹ اس علاقہ میں گھوم رہے تھے۔ انھوں نے دوسرے ملی ٹنٹ کی پہچان ریحان کے طور کی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ فائرنگ کے دوران ایک ملی ٹنٹ کو بھی گولی لگی ہے لیکن وہ انکاؤنٹر کے مقام سے فرار ہونے میں کامیاب ہوئے۔ پولیس لائنز سرینگر میں شہید عامر حسین کو ڈی جی پی جموں کشمیر دلباغ سنگھ اور دیگر اعلیٰ پولیس افسران اور ساتھیوں نے گلہائے عقیدت پیش کیا۔

    اس موقع پر آئی جی پی کشمیر وجے کمار نے کہا کہ ملی ٹنٹوں کا یہی گروپ پچھلے چوبیس گھنٹے میں ہوئی دو عام شہریوں کی ہلاکت میں بھی ملزم ہیں اور انھیں جلد ہی کیفر کردار تک پہنچایا جائے گا۔ تیس سالہ شہید ہیڈ کانسٹبل عامر حسین کی لاش جب انکے آبائی مقام واقع ہری کپواڑہ پہنچائی گئی تو پورے علاقے میں صف ماتم بچھ گیا۔ سینکڑوں کی تعداد میں لوگوں نے انکے نماز جنازہ میں شرکت کی۔

    شہید عامر حسین اور ان کے اہل خاnہ کو کچھ سال قبل ایک بڑی مصیبت سے گقرنا پڑا۔ انکا اکلوتا بیٹا ایک کنویں میں گر کر مر گیا تھا۔ اب ان کی تین بیٹیاں ہیں۔ ادھر پچھلے چوبیس گھنٹے میں کشمیر میں یہ تیسری ایسی واردات تھی۔ کل دیر شام پلوامہ اور بڈگام میں دو عام شہری مارے گئے اور آج یہ پولیس اہلکار ۔ حالانکہ سیکورٹی فورسز مسلسل انکاونٹرس میں ملیٹنٹوں کو مار گرا رہے ہیں لیکن ملی ٹنٹ حملے کسی نہ کسی صورت میں جاری ہیں۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: