ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

وادی کشمیر کے اس نوجوان نے سخت محنت کرکے منوایا اپنا لوہا، کم عمر میں فرحان مجید بنے پائلٹ

وادی کشمیر کے نوجوان جہاں ہر شعبے میں اپنا لوہا منواکر آگے بڑ رہے ہیں وہیں جنوبی کشمیر کے قصبہ اونتی پورہ سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان فرحان مجید نے کافی محنت کرکے کمر شیل جہاز اڈانے کے لئے اتراکھنڈ ٹرینگ اسکول سے تربیت حاصل کرکے لائسنس حاصل کیا ہے

  • Share this:
وادی کشمیر کے اس نوجوان نے سخت محنت کرکے منوایا اپنا لوہا، کم عمر میں فرحان مجید بنے پائلٹ
وادی کشمیر کے نوجوان جہاں ہر شعبے میں اپنا لوہا منواکر آگے بڑ رہے ہیں وہیں جنوبی کشمیر کے قصبہ اونتی پورہ سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان فرحان مجید نے کافی محنت کرکے کمر شیل جہاز اڈانے کے لئے اتراکھنڈ ٹرینگ اسکول سے تربیت حاصل کرکے لائسنس حاصل کیا ہے

وادی کشمیر کے نوجوان جہاں ہر شعبے میں اپنا لوہا منوا کر آگے بڑ رہے ہیں وہیں جنوبی کشمیر کے قصبے اونتی پورہ سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان نے کمرشیل جہاز اڑانے کے لئے لائسنس حاصل کر کے ملک کے ساتھ ساتھ جموں کشمیر کا نام روشن کیا ہے۔ وادی کشمیر کے نوجوان جہاں ہر شعبے میں اپنا لوہا منواکر آگے بڑ رہے ہیں وہیں جنوبی کشمیر کے قصبہ اونتی پورہ سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان فرحان مجید نے کافی محنت کرکے کمر شیل جہاز اڈانے کے لئے اتراکھنڈ ٹرینگ اسکول سے تربیت حاصل کرکے لائسنس حاصل کیا ہے ، جس کی عوامی حلقوں میں کافی سرہانہ کی جارہی ہے۔ فرحان کا کہنا ہے کہ وہ بچپن سے ہی پائلٹ بننے کی خواہش رکھتے تھے اور ان کے والدین نے بھی ان کا تعاون کیا جس کی وجہ سے وہ آج ایک پائلٹ بن گئے ہیں۔


فرحان کا مزید کہنا تھا کہ ہر کسی شعبے میں انسان کو محنت کرنی کی ضرورت ہے اس کے بعد انسان کو کامیابی حاصل ہوتی ہے انہوں اب ٹرینگ مکمل کی ہے اور اب کسی ایر لاینس کمپنی میں بحصیت پایلٹ کام کریں گے .فرحان کے پایلٹ بننے پر وادی کے اکثر لوگوں نے انہیں سوشل میڈیا پر مبارک باد پیش کی ہے وہی فرحان کے گھر ان کے رشتہدار ہمسایہ مبارک بادی کے لئے آکر انہیں ملائیں پہنا رہے ہیں ان کے رشتہ داروں اور ہمسایوں کا کہنا ہے کہ فرحان نے ان کا سر فخر سے اونچا کیا ہے۔


اکثر والدین اپنی خواہش کے مطابق بچوں پر دباو ڈالکر انہیں اپنی من پسند فیلڈ میں جانے کے لئے مجبور کرتے ہیں۔ جس کی وجہ سے بچے اس فیلڈ میں آگے نہیں بڑ پا رہے ہیں فرحان کے والد نے والدین سے اپیل کی ہے کہ وہ بچوں کو کسی دباو کے بغیر اپنی مرضی کے مطابق آگے بڑنے کا موقعہ فراہم کریں۔ تاکہ وہ فرحان کی طرح زندگی میں آگے بڑسکیں۔

Published by: Sana Naeem
First published: Jan 16, 2021 08:12 AM IST