اپنا ضلع منتخب کریں۔

    FAAامیدواروں کا جموں۔کشمیر میں احتجاجی مظاہرہ، منتخب امیدواروں کی حتمی فہرست جاری کرنے کا مطالبہ

    jammu and kashmir: ۔ پیر کے روز شام کو محکمہ انفارمیشن اور پبلک ریلیشنز جموں و کشمیر کی طرف سے ایک ٹویٹ جاری کرکے بتایا گیا کہ اس امتحان کے بارے میں تحقیقات کی جارہی ہے اور اگر اس میں کسی قسم کی کوئی دھاندلی پائی گئی تو سخت کاروائی کی جائے گی۔

    jammu and kashmir: ۔ پیر کے روز شام کو محکمہ انفارمیشن اور پبلک ریلیشنز جموں و کشمیر کی طرف سے ایک ٹویٹ جاری کرکے بتایا گیا کہ اس امتحان کے بارے میں تحقیقات کی جارہی ہے اور اگر اس میں کسی قسم کی کوئی دھاندلی پائی گئی تو سخت کاروائی کی جائے گی۔

    jammu and kashmir: ۔ پیر کے روز شام کو محکمہ انفارمیشن اور پبلک ریلیشنز جموں و کشمیر کی طرف سے ایک ٹویٹ جاری کرکے بتایا گیا کہ اس امتحان کے بارے میں تحقیقات کی جارہی ہے اور اگر اس میں کسی قسم کی کوئی دھاندلی پائی گئی تو سخت کاروائی کی جائے گی۔

    • Share this:
    جموں و کشمیر: محکمہ فائنینس میں بطور اکاؤنٹس اسسٹنٹ منتخب ہونے والے امیدواروں کی جانب سے آج بھی جموں و کشمیر میں احتجاجی مظاہرہ جاری رہا۔ مظاہرین منتخب امیدواروں کی حتمی فہرست جاری کرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ یہ امیدوار مذکورہ فہرست کو کلعدم قرار دئے جانے کے خدشے کے پیش نظر سڑکوں پر اتر آئے ہیں کیونکہ ان کے مطابق ایسا مانا جارہا ہے کہ اس عہدے کے لئے منعقدہ امتحان میں دھاندلیاں ہوئی ہیں۔ اگرچہ گزشتہ کئی دنوں سے یہ مظاہرے جاری ہیں تاہم سرکار کی جانب سے کل تک اس کے بارے میں کوئی بیان سامنے نہیں آیا۔ پیر کے روز شام کو محکمہ انفارمیشن اور پبلک ریلیشنز جموں و کشمیر کی طرف سے ایک ٹویٹ جاری کرکے بتایا گیا کہ اس امتحان کے بارے میں تحقیقات کی جارہی ہے اور اگر اس میں کسی قسم کی کوئی دھاندلی پائی گئی تو سخت کاروائی کی جائے گی۔

    اس ٹویٹ کے منظر عام پر آنے سے امیدوار مزید تزبزب کا شکار ہوئے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ اس ٹویٹ میں یہ بات واضح نہیں کی گئی ہے کہ اگر اس پورے عمل میں کسی طرح کی دھاندلی پائی گئی تو کاروائی کس کے خلاف ہوگی۔ امتحان منعقد کرنے والی ایجنسی کے خلاف، امتحانی پرچے بیچنے اور خریدنے والے افراد یا کسی اور کے خلاف۔ جموں میں احتجاجی مظاہرہ کرنے والے ان امیدواروں نے منگل کے روز بھی ہاتھوں میں پلے کارڈ لئے سرکار سے یہی سوال پوچھا کہ آخر وہ کس کے خلاف کاروائی کرنا چاہتی ہے۔ مدثر طاریق بٹ نامی ایک امیدوار نے نیوز ایٹین اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا : ڈی آئی پی آر کی جانب سے کل شام ایک ٹویٹ کیا گیا جس میں یہ بتایا گیا کہ اس بھرتی عمل میں تحقیقات کی جارہی ہے اور اس معاملے میں دھاندلی پائے جانے کی صورت میں سخت کاروائی کی جائے گی لیکن یہ بات واضح نہیں کی گی کہ کاروائی کس کے خلاف ہوگی۔

    سرکار نے ہمیں اس ٹویٹ کے ذریعے مزید تزبزب میں مبتلا کردیا ہے کیونکہ پی ایس آئی کی بھرتی کے معاملے میں بھی ایسا ہی کہا گیا تھا جسکے بعد وہ پوری فہرست ہی قلعدم قرار دی گئی یہی وجہ ہے کہ ہم آج بھی احتجاج کر رہے ہیں تاکہ سرکار یہ بات واضح کرے کہ وہ اس معاملے کیا رُخ اپناتی ہے۔ احتجاجی دھرنا میں موجود ایک اور امیدوار یاسمین کا کہنا ہے کہ سرکار کو ان لوگوں کے خلاف کاروائی کرنی چاہئیے جو غیر قانونی فعل میں ملوث ہونگے۔ نیوز ایٹین اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے یاسمین نے کہا : ہمیں نہیں معلوم کہ اس معاملے میں کوئی دھاندلی ہوئی ہے یا نہیں ۔ اگر سرکار کو لگتا ہے کہ اس میں دھاندلی ہوئی ہے تو وہ اسکی جانچ کروائیں ۔





    سی آئی ڈی، سی بی آئی یا کسی اور ایجنسی کے ‌ذریعے سرکار اگر اس معاملے کی جانچ کرنا چاہتی ہے تو ہمیں اس سے کوئی اعتراض نہیں ۔ ہم سرکار اور جانچ ایجنسیون کو اپنا پورا تعاون دینے کے لئے تیار ہیں لیکن ہم یہ بات واضح کرنا چاہتے ہیں کہ سرکار اس معاملے میں ملوث افراد چاہے وہ ایجنسی کے لوگ ہوں یا پھر امیدوار کے خلاف کاروائی کرکے انہیں قانونی کے مطابق سزا دے۔ لیکن اگر سرکار اس پوری فہرست کو منسوخ کرنے کا فیصلہ کرتی ہے تو ہم ہرگز ایسا نہیں ہونے دیں گے کیونکہ وہ ہمارے ساتھ نا انصافی ہوگی۔ واضح رہے کہ فینانس محکمے میں اکاؤنٹس اسسٹنٹ کی اسامیوں کے لئے لگ بھگ دو ہزار امیدوار کامیاب قرار دئے گئے ہیں۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: