உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں۔کشمیر پولیس کے سب انسپکٹر اسامیوں کے تحریری امتحانات میں مبینہ طور پر بے ضابطگیوں کا الزام، حکومت نے تحقیقات کیلئے جانچ کمیٹی دی تشکیل

     اس دوران کئی امیدواروں نے سلیکشن لسٹ میں بے ضابطگیوں کا الزام لگاتے ہوئے سرکار سے اس کی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔

    اس دوران کئی امیدواروں نے سلیکشن لسٹ میں بے ضابطگیوں کا الزام لگاتے ہوئے سرکار سے اس کی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔

    اس دوران کئی امیدواروں نے سلیکشن لسٹ میں بے ضابطگیوں کا الزام لگاتے ہوئے سرکار سے اس کی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔

    • Share this:
    جموں کشمیر: مرکز کے زیر انتظام جموں کشمیر یونین ٹیریٹوری میں حال ہی میں جموں کشمیر پولیس سب انسپکٹر کے تحریری امتحان کے نتائج منظر عام پر آ گئے۔ لیکن اس دوران کئی امیدواروں نے سلیکشن لسٹ میں بے ضابطگیوں کا الزام لگاتے ہوئے سرکار سے اس کی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔ جبکہ امیدواروں نے الزام لگایا کہ لسٹ میں مبینہ طور پر دھاندلیاں کی گئی ہیں اور منطور نظر امیدواروں کو سب انسپکٹر تحریری امتحان لسٹ میں جگہ ملی ہے۔ ان تمام تر الزامات کی رو سے جموں و کشمیر حکومت نے پیر کے روز جموں اور کشمیر سروس سلیکشن بورڈ (جے کے ایس ایس بی) کے ذریعہ جموں اور کشمیر پولیس میں سب انسپکٹر کے عہدوں کے لئے تحریری امتحان میں مبینہ بے ضابطگیوں کی انکوائری کے لئے ایک کمیٹی تشکیل دی ہے۔

    اس سلسلے میں حکومت کی طرف سے ایک حکمنامہ بھی صادر کیا گیا ہے۔ حکمنامے کے مطابق، داخلی امور محکمہ کے فنانشل کمشنر (ایڈیشنل چیف سکریٹری)، آر کے گوئل کی سربراہی میں قائم کمیٹی کو 24 جون تک اپنی حتمی رپورٹ پیش کرنے کو کہا گیا ہے۔ پرنسپل سیکرٹری جنرل ایڈمنسٹریشن ڈیپارٹمنٹ اور سیکرٹری محکمہ قانون، انصاف اور پارلیمانی امور کو کمیٹی کا ممبر مقرر کیا گیا ہے۔ کمیٹی ضرورت پڑنے پر کسی دوسرے رکن کو منتخب کر سکتی ہے اور اس کے اجراء کی تاریخ سے 15 دنوں کے اندر انتخابی عمل کے تمام پہلوؤں کو مدنظر رکھتے ہوئے رپورٹ/ سفارشات پیش کرے گی۔

    ادھر جموں کشمیر پولیس کے سب انسپکٹر بھرتی امیدواروں نے اس حکمنامے کا خیر مقدم کیا ہے اور امید ظاہر کی کہ حکومت کی جانب سے تشکیل دی گئی کمیٹی سچ کو منظر عام پر لانے میں کوئی کسر باقی نہیں رکھے گی اور صرف مستحق امیدواروں کو مرٹ کی بنا پر اس لسٹ میں جگہ ملے گی۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: