உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    J&K News: اتراکھنڈ کے سیاح کی جان بچانے کیلئے کشمیری ٹورسٹ گائیڈ نے دے دی اپنی جان، تارسر جھیل سے شکیل احمد کی لاش برآمد

    J&K News: اتراکھنڈ کے سیاح کی جان بچانے کیلئے کشمیری ٹورسٹ گائیڈ نے دے دی اپنی جان، تارسر جھیل سے شکیل احمد کی لاش برآمد

    J&K News: اتراکھنڈ کے سیاح کی جان بچانے کیلئے کشمیری ٹورسٹ گائیڈ نے دے دی اپنی جان، تارسر جھیل سے شکیل احمد کی لاش برآمد

    Jammu and Kashmir: جنوبی کشمیر میں پہلگام کی تارسر جھیل میں بدھ کے روز غرق ہونے والے دو افراد میں سے لدروٹھ کے مقام پر ٹورسٹ گائیڈ شکیل احمد کی لاش برآمد کر لی گئی ہے، جبکہ اترا کھنڈ کے سیاح ڈاکٹر مہیش کی تلاش جاری ہے۔

    • Share this:
    جموں و کشمیر: جنوبی کشمیر میں پہلگام کی تارسر جھیل میں بدھ کے روز غرق ہونے والے دو افراد میں سے لدروٹھ کے مقام پر ٹورسٹ گائیڈ شکیل احمد کی لاش برآمد کر لی گئی ہے، جبکہ اترا کھنڈ کے سیاح ڈاکٹر مہیش کی تلاش جاری ہے۔ گزشتہ روز سے ہی انتظامیہ نے سیاحوں و دیگر لوگوں کی جان بچانے کی غرض سے ریسکیو آپریشن شروع  کیا تھا، جو اب بھی جاری پے۔ اگرچہ اس آپریشن کے دوران گگن گیر گاندربل کے شکیل احمد کی لاش کو دریائے لدھر سے نکالا گیا تھا، لیکن ابھی تک اترا کھنڈ سے تعلق رکھنے والے سیاح ڈاکٹر مہیش کا کوئی سراغ نہیں مل پایا ہے۔

     

    یہ بھی پڑھئے: جنوبی کشمیر میں تارسر جھیل کے نزدیک پھنسے 11 لوگوں کا کیا گیا ریسکیو


    مقامی لوگوں کے مطابق شکیل نے ڈاکٹر مہیش کی جان بچانے کی غرض سے کافی مشقت کی، جس کی وجہ سے وہ خود بھی تارسر جھیل کی تیز لہروں میں بہہ گئے۔ ٹور گائیڈ محمد ابراہیم رینہ نے نیوز18 اردو کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ خراب موسم کی وجہ سے تارسر ٹریکنگ ڈسٹینیشن سے اس گروپ نے آرو ویلی بیس کیمپ لوٹنے کا فیصلہ کیا، تاہم اس دوران ایک عارضی پل کو پار کرنے کی کوشش میں اتراکھنڈ کے سیاح ڈاکٹر مہیش تارسر جھیل میں گر گئے۔ اس دوران شکیل نے مہیش کا ہاتھ پکڑا اور انہیں واپس جھیل سے نکالنے کی کوشش میں وہ خود بھی تارسر میں بہہ گیا اور موت کی ابدی نیند سو گیا۔

     

    یہ بھی پڑھئے: عقیدت مندوں کیلئے جموں کے کاروباری اور ٹریول ایجنٹوں نے کیا خصوصی رعایت کا اعلان


    شکیل کی اس قربانی کو جہاں سیاحتی صنعت سے وابستہ افراد ایک بڑی قربانی کے طور پر دیکھ رہے ہیں وہیں مقامی لوگ بھی شکیل کی بہادری کو سلام پیش کر رہے ہیں۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ شکیل نے پھر ایک بار یہ ثابت کر دیا کہ کشمیر کے لوگ دوسروں کی جان بچانے کیلئے اپنی جان پر کھیلنے سے پیچھے نہیں رہتے ہیں۔ ادھر مقامی لوگوں کے ساتھ ساتھ پولیس، ایس ڈی آر ایف، این ڈی آر ایف اور ایڈونچر ٹور سے منسلک افراد ڈاکٹر مہیش کی تلاش میں جٹے ہیں۔

    واضح رہے کہ بدھ کے روز تارسر جھیل کے نزدیک خراب موسمی حالات میں سیاحوں سمیت 13 افراد پر مشتمل ایک ٹریکنگ گروپ پھنس گیا تھا اور اس دوران ڈاکٹر مہیش کے ساتھ ساتھ شکیل بھی تارسر جھیل میں ڈوب گئے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: