ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

رشوت ستانی کےالزامات کے بعدشرپنچ اورپارٹی جنرل سکریٹری کوبی جے پی نے دکھایاباہرکاراستہ

صوفی یوسف نے مزید کہا کہ پولیس نے نثار خان پر دفعہ 420 کے تحت ایف آئی آر درج کر لی ہے جسکے بعد یہ معاملہ عدالت میں جائے گا تب تک نثار خان کو پارٹی سے برطرف کرنے کے احکامات صادرکئے گئے ہیں اور یو ٹی پارٹی صدر رویندر رینہ کو بھی اس حوالے سے آگاہ کیا گیا ہے۔

  • Share this:
رشوت ستانی کےالزامات کے بعدشرپنچ اورپارٹی جنرل سکریٹری کوبی جے پی نے دکھایاباہرکاراستہ
علامتی تصویر

بھارتیہ جنتا پارٹی(BJP) نے اننت ناگ ضلع کے پارٹی جنرل سکریٹری نثار احمد خان جو کہ ایک سرپنچ بھی ہے کو دھوکہ دہی اور فراڈ کرنے کے الزامات کی بنیاد پر پارٹی کی بنیادی رکنیت سے خارج کرکے انہیں باہر کا راستہ دکھا دیا۔ نثارخان نے بی جے پی کی ٹکٹ پر سرپنچ کا چناؤ لڑا تھا اور جیت کے بعد وہ بحیثیت سرپنچ اپنے علاقے کی نمایندگی بھی کر رہا ہے۔ نثار خان کو رشوت ستانی اور دھوکہ دہی کے الزامات کی بنا پر پولیس نے گرفتار کر لیا تھا جسکے بعد پارٹی نے الزامات کے تناظر میں نثار خان کو پارٹی سے نکال دیا۔ بی جے پی کے یو ٹی نائب صدر، صوفی محمد یوسف نے اس حوالے سے کہا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کا منشور جموں کشمیر کو رشوت ستانی سے صاف و پاک بنانا ہے اور اسکے لئے کسی بھی لیڈر کی جانب سے کسی بھی غلطی کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔


ثار خان کو رشوت ستانی اور دھوکہ دہی کے الزامات کی بنا پر پولیس نے گرفتار کر لیا تھا
ثار خان کو رشوت ستانی اور دھوکہ دہی کے الزامات کی بنا پر پولیس نے گرفتار کر لیا تھا


صوفی یوسف نے کہا کہ وزیراعظم مودی کی دلی خواہش ہے کہ جموں کشمیر میں رشوت ستانی کا دور ختم ہو اور نئے کشمیر کی تعمیر کے لیے وہ ہمیشہ اپنی ٹیم کی ستائش کرتے ہیں لیکن جس طرح سے نثار خان کے الزامات سامنے آئے ہیں ایسے میں خان کی پارٹی میں مزید رہنے کا کوئی جواز نہیں بنتا تھا اس لئے اسے پارٹی کی بنیادی رکنیت سے بے دخل کر دیا گیا۔ صوفی یوسف نے مزید کہا کہ پولیس نے نثار خان پر دفعہ 420 کے تحت ایف آئی آر درج کر لی ہے جسکے بعد یہ معاملہ عدالت میں جائے گا تب تک نثار خان کو پارٹی سے برطرف کرنے کے احکامات صادرکئے گئے ہیں اور یو ٹی پارٹی صدر رویندر رینہ کو بھی اس حوالے سے آگاہ کیا گیا ہے۔


صوفی یوسف نے مزید کہا کہ اگر کورٹ میں نثار خان بے گناہ ثابت ہوتے ہیں تو بعد میں اسکی رکنیت کا فیصلہ از سر نو کیا جائے گا۔ واضح رہے کہ نثار خان کو پولیس نے دو نوجوانوں کی پولیس حراست سے رہائی کے بدلے 1 لاکھ 10 ہزار روپے وصولنے کے الزام میں گرفتار کر لیا ہے۔ پولیس کے مطابق ملی ٹینسی سے منسلک ایک کیس کی تحقیقات کےلئے کوکرناگ کے دو افراد کو پولیس تھانہ میں طلب کیا گیا تھا۔ جسکے بعد دونوں افراد کی رہائی کے لئے انکے اہل خانہ نے بی جے پی جنرل سکریٹری اننت ناگ نثار خان سے رابطہ کیا۔ لیکن خان نے مبینہ طور پر گھروالوں سے روپیوں کا تقاضہ کر کے ان سے 1 لاکھ 10 ہزار روپے وصولے۔ حالانکہ دونوں نوجوانوں کو پولیس نے ایک معاملے میں تحقیقات کے بعد رہا کر دیاتھا۔ تاہم اسکے بعد دونوں افراد کے گھر والوں کی شکایت پر نثار خان ساکن گوپالپورہ اننت ناگ کو گرفتار کر لیا گیا۔
Published by: Mirzaghani Baig
First published: May 29, 2021 10:56 AM IST