உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں کشمیر کے مختلف علاقوں میں سی بی آئی کی چھاپہ ماری ، ہاتھ لگے کئی اہم ثبوت

    جموں کشمیر کے مختلف علاقوں میں سی بی آئی کی چھاپہ ماری ، ہاتھ لگے کئی اہم ثبوت

    جموں کشمیر کے مختلف علاقوں میں سی بی آئی کی چھاپہ ماری ، ہاتھ لگے کئی اہم ثبوت

    مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) نے منگل کے روز تقریبا 41 مقامات پر چھاپہ ماری کارروائی انجام دی ، جن میں سری نگر ، اننت ناگ ، بنیہال ، بارہمولہ ، جموں ، ڈوڈہ ، راجوری ، کشتواڑ (جموں و کشمیر) ، لیہ ، دہلی اور بھنڈ (مدھیہ پردیش) شامل ہیں۔

    • Share this:
    جموں : مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) نے منگل کے روز تقریبا 41 مقامات پر چھاپہ ماری کارروائی انجام دی ، جن میں سری نگر ، اننت ناگ ، بنیہال ، بارہمولہ ، جموں ، ڈوڈہ ، راجوری ، کشتواڑ (جموں و کشمیر) ، لیہ ، دہلی اور بھنڈ (مدھیہ پردیش) شامل ہیں۔ چھاپہ ماری تقریبا 14 سرکاری اور رہائشی احاطے میں کی گئیں جن میں اس وقت کے ڈی ایم (آئی اے ایس/کے اے ایس) ، ڈی آئی او ، کلرک وغیرہ شامل تھے۔  تقریبا پانچ نجی افراد (درمیانی/ایجنٹ)  اسلحہ لائسنس ریکیٹ سے متعلق ایک کیس کی جاری تحقیقات میں تقریبا 10 گن ہاؤسز/ڈیلرز۔

    چھاپہ ماری کے دوران اسلحہ لائسنس کے اجراء ، فائدہ اٹھانے والوں کی فہرست ، ایف ڈی آر میں سرمایہ کاری سے متعلق دستاویزات اور دیگر فروخت کی آمدنی ، جائیداد کے دستاویزات ، بینک اکاؤنٹ کی تفصیلات ، لاکر کی چابیاں ، مجرمانہ تفصیلات پر مشتمل ڈائری ، اسلحہ لائسنس رجسٹر ، الیکٹرانک گیجٹ/موبائل فون  اور کچھ کرنسی بشمول پرانی کرنسی برآمد ہوئی ۔

    سی بی آئی نے جموں وکشمیر حکومت کی درخواست اور حکومت ہند کی جانب سے مزید نوٹیفکیشن پر دو مقدمات درج کیے تھے اور دو ایف آئی آر کی تفتیش سنبھالی تھی ۔ یہ الزام لگایا گیا کہ 2.78 لاکھ سے زائد اسلحہ لائسنس غیر حقدار افراد کو جاری کیے گئے۔  اس میں کہا گیا کہ سی بی آئی نے مبینہ طور پر جموں و کشمیر کے 22 اضلاع میں پھیلے ہوئے مسلح لائسنس کے اجراء سے متعلق دستاویزات بھی اکٹھی کیں۔

    تفتیش اور دستاویزات کی جانچ پڑتال کے دوران کچھ بندوق فروشوں کا کردار پایا گیا ، جنہوں نے متعلقہ ضلع کے سرکاری ملازمین یعنی اس وقت کے ڈی ایم اور اے ڈی ایم وغیرہ کے ساتھ مل کر مبینہ طور پر نااہل افراد کو غیر قانونی طور پر اسلحہ لائسنس جاری کیے تھے۔  یہ بھی الزام لگایا گیا کہ جن افراد کو یہ لائسنس ملے وہ ان جگہوں کے رہائشی نہیں تھے جہاں سے اسلحہ لائسنس جاری کیے گئے تھے۔

    اس کے علاوہ بصیر احمد خان کے گھر پہ بھی چھاپہ مارا گیا۔ ذرائع نے اطلاع دی ہے کہ نئی دہلی سے سی بی آئی کے عہدیداروں کی ایک ٹیم مقامی پولیس کے ہمراہ سری نگر کے علاقے بلبل باغ میں خان کی رہائش گاہ پر پہنچی اور گھر کی تلاشی شروع کی ۔ بصیر خان مارچ 2020 سے لیفٹیننٹ گورنر گریش چندر مرمو اور ان کے جانشین منوج سنہا کے مشیر تھے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: