ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر : فاروق عبداللہ سے غلام نبی آزاد نے کی ملاقات ، دیا یہ بڑا بیان

غلام نبی آزاد نے کہا کہ ریاست کو مرکزی زیر انتظام علاقہ میں تبدیل کرنا ریاستی عوام کی توہین ہے۔ انہوں نے کہا کہ امن ، ترقی اور خوشحالی صرف اور صرف جمہوری نظام میں ممکن ہے ۔

  • UNI
  • Last Updated: Mar 14, 2020 10:51 PM IST
  • Share this:
جموں و کشمیر : فاروق عبداللہ سے غلام نبی آزاد نے کی ملاقات ، دیا یہ بڑا بیان
جموں و کشمیر : فاروق عبداللہ سے غلام نبی آزاد نے کی ملاقات ، دیا یہ بڑا بیان ۔ تصویر : اے این آئی ۔

راجیہ سبھا میں اپوزیشن کے لیڈر غلام نبی آزاد نے ہفتہ کو ساڑھے سات ماہ کی نظربندی کے بعد رہائی پانے والے نیشنل کانفرنس کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ کے ساتھ ان کی رہائش گاہ پر ملاقات کی ۔ این سی کی طرف سے جاری ایک پریس بیان کے مطابق دونوں لیڈران نے تقریبا 2 گھنٹے تک تبادلہ خیال کیا اور بعد میں نامہ نگاروں سے بات چیت بھی کی۔ اس دوران فاروق عبداللہ نے غلام نبی آزاد اور راجیہ سبھا اور لوک سبھا کے اُن دیگر ممبران اور ملک لیڈران کا شکریہ ادا کیا ، جنہوں نے ان کی رہائی کے لئے بار بار آواز بلند کی۔


اس موقع پر غلام نبی آزاد نے کہا کہ میں تمام اپوزیشن جماعتوں کا نمائندہ بن کر ڈاکٹر فاروق عبداللہ سے ملنے کیلئے آیا ہوں اور پوری اپوزیشن کی طرف سے اُن کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتا ہوں ۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر صاحب کی 7 ماہ طویل نظربندی سراسر غیر قانونی اور غیر جمہوری تھی اور دیگر لیڈران بھی بلا جواز نظربند رکھے گئے ہیں ۔ جو لیڈران نظربند ہیں ، انہوں نے کون سی ملک دشمن کارروائی کی تھی اور کن بنیادوں پر انہیں نظربند رکھا گیا ہے؟ ۔ آزاد نے کہا کہ ریاست کو مرکزی زیر انتظام علاقہ میں تبدیل کرنا ریاستی عوام کی توہین ہے۔ انہوں نے کہا کہ امن ، ترقی اور خوشحالی صرف اور صرف جمہوری نظام میں ممکن ہے ۔


اس سے قبل دن بھر وادی کے اطراف و اکناف سے پارٹی کارکنوں ، عہدیداروں اور عوامی وفود کا تانتا بندھا رہا اور ڈاکٹر فاروق عبد اللہ نے ہر ایک کے ساتھ فرداً فرداً ملاقات کی اور ان سب کا شکریہ ادا کیا ، جنہوں نے اُن کی رہائی کے لئے دعائیں مانگی تھیں۔ انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ اتحاد و اتفاق بنائے رکھیں کیونکہ اسی میں کامیابی اور کامرانی کا راز مضمر ہے۔

First published: Mar 14, 2020 10:51 PM IST