ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

فاروق عبداللہ کا متنازعہ بیان، کہا۔ چین کی مدد سے بحال ہو گا آرٹیکل 370

بتا دیں کہ مودی حکومت نے 5 اگست 2019 کو جموں وکشمیر کو خصوصی درجہ دینے والے آرٹیکل 370 اور 35 اے کو پوری طرح سے ہٹا دیا تھا۔ سرکار کے اس قدم کی پاکستان اور چین نے دنیا بھر کے سامنے مخالفت کی۔ حالانکہ، ہندستان نے پوری دنیا کو یہ بتا دیا کہ یہ ان کا داخلی معاملہ ہے جسے لے کر کوئی بھی دخل اندازی نہیں کر سکتا ہے۔

  • Share this:
فاروق عبداللہ کا متنازعہ بیان، کہا۔ چین کی مدد سے بحال ہو گا آرٹیکل 370
فاروق عبداللہ کی فائل فوٹو

نئی دہلی۔ نیشنل کانفرنس کے لیڈر اور جموں وکشمیر (Jammu-Kashmir) کے سابق وزیر اعلیٰ فاروق عبداللہ ( Farooq Abdullah )نے ریاست سے ہٹائے گئے آرٹیکل 370 (Article 370) کو لے کر متنازعہ بیان دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جموں۔ کشمیر سے آرٹیکل 370 کو بحال کرنے میں چین سے مدد مل سکتی ہے۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے مودی حکومت کے اس کے قدم میں ساتھ دینے والوں کو غدار بھی بتایا ہے۔


فاروق عبداللہ نے انڈیا ٹوڈے سے بات چیت میں کہا' جہاں تک چین کا سوال ہے میں نے کبھی بھی چین کے صدر کو کشمیر میں نہیں بلایا ہے۔ ہمارے وزیر اعظم نے انہیں گجرات میں بلایا تھا اور انہیں جھولے پر بٹھایا تھا۔ اس کے بعد انہیں چنئی بھی لے گئے تھے۔ وہاں بھی انہیں خوب کھلایا گیا لیکن انہیں یہ سب پسند نہیں آیا۔ انہوں نے وزیر اعظم کے سب کچھ کرنے کے بعد بھی کہا کہ آرٹیکل 370 ہٹایا جانا انہیں قبول نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ آپ جب تک آرٹیکل 370 کو بحال نہیں کریں گے تب تک ہم رکنے والے نہیں ہیں۔ فاروق عبداللہ نے کہا کہ اللہ کرے کہ چین کے اس زور سے ہمارے لوگوں کو مدد ملے اور آرٹیکل 370 اور 35 اے بحال ہو۔


بتا دیں کہ مودی حکومت نے 5 اگست 2019 کو جموں وکشمیر کو خصوصی درجہ دینے والے آرٹیکل 370 اور 35 اے کو پوری طرح سے ہٹا دیا تھا۔ سرکار کے اس قدم کی پاکستان اور چین نے دنیا بھر کے سامنے مخالفت کی۔ حالانکہ، ہندستان نے پوری دنیا کو یہ بتا دیا کہ یہ ان کا داخلی معاملہ ہے جسے لے کر کوئی بھی دخل اندازی نہیں کر سکتا ہے۔


لوک سبھا میں بھی فاروق عبداللہ نے اٹھایا تھا یہ معاملہ
بتا دیں کہ نیشنل کانفرنس کے لیڈر اور جموں وکشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ فاروق عبداللہ شروع سے ہی پہلے کی صورت حال بحال کرنے کی مانگ کرتے رہے ہیں۔ پارلیمنٹ کے مانسون اجلاس میں بھی انہوں نے اس معاملہ کو اٹھایا تھا۔ لوک سبھا میں بولتے ہوئے فاروق عبداللہ نے کہا تھا کہ جموں وکشمیر کی صورت حال آج ایسی ہے کہ جہاں پیش رفت ہونی تھی وہاں کوئی پیش رفت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ پورے ہندستان میں 4 جی نیٹ ورک کی سہولت ہے جبکہ ہمارے یہاں ابھی بھی نہیں ہے۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Oct 12, 2020 10:27 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading