ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

Corona in Kashmir:جموں کشمیرمیں گزشتہ ہفتے کووڈمثبت معاملوں میں 74فیصدکااضافہ،سرینگر ایک بارپھراورینج زون میں شامل

سرینگر کے ساتھ ساتھ اب جموں ضلع اور کشمیر کے بارہمولہ میں بھی کووڈ اپنا جال پھیلا رہا ہے۔پچھلے ہفتے سرینگر میں کُل معاملات کا 50 فیصد پایا گیا۔لیکن اس ہفتے جموں اور بارہمولہ میں کووڈ معاملات بڑھ گئے۔جسکی وجہ سے سرینگر میں کُل نئے کووڈ معاملے 42 فیصدپائے گئے۔اس ہفتے کُل سات اموات ہوئی ہیں جن میں سےچار کشمیر اور تین جموں صوبہ میں ہوئیں۔

  • Share this:
Corona in Kashmir:جموں کشمیرمیں گزشتہ ہفتے کووڈمثبت معاملوں میں 74فیصدکااضافہ،سرینگر ایک بارپھراورینج زون میں شامل
سرینگر کے ساتھ ساتھ اب جموں ضلع اور کشمیر کے بارہمولہ میں بھی کووڈ اپنا جال پھیلا رہا ہے۔پچھلے ہفتے سرینگر میں کُل معاملات کا 50 فیصد پایا گیا۔لیکن اس ہفتے جموں اور بارہمولہ میں کووڈ معاملات بڑھ گئے۔جسکی وجہ سے سرینگر میں کُل نئے کووڈ معاملے 42 فیصدپائے گئے۔اس ہفتے کُل سات اموات ہوئی ہیں جن میں سےچار کشمیر اور تین جموں صوبہ میں ہوئیں۔

جموں کشمیر میں کووڈ 19 کے کیس تیزی سے بڑھتے جارہےہیں۔ وادی کشمیر میں کووڈ زیادہ تیزی سے پھیل رہا ہے۔ 17 سے 23 مارچ تک کُل 1005 نئےکووڈ مثبت کیس درج کئے گئے جن میں سے کشمیر میں 797یعنی کُل معاملات کا 79 فیصد جن میں سے 500 معاملےاکیلے سرینگر ضلع میں پائے گئےتھے۔اس دوران 6 اموات بھی ہوئیں۔پچھلے ہفتے یعنی 24 سے 30 مارچ تک 1751 نئے کووڈمثبت کیس درج کئے گئے یعنی پچھلے ہفتے کے مقابلے میں 746نئے معاملوں کا اضافہ ہوا ہے۔ان میں سے کشمیر وادی میں 541کیسوں کا اضافہ ہوا ۔



سرینگر میں سب سے زیادہ اضافہ درجکیا جارہا ہے ۔ اس صورت حال کے چلتے سرینگر کو ایکبارپھر کووڈ اورینج زون میں شامل کیا گیا ہئے۔کووڈ نوڈل افسرمحمد سلیم خان کے مطابق سرینگر مُلک کے 46 کووڈ ہاٹ اسپاٹس میں شامل ہے۔سرینگر کے ساتھ ساتھ اب جموں ضلع اور کشمیر کے بارہمولہ میں بھی کووڈ اپنا جال پھیلا رہا ہے۔پچھلے ہفتے سرینگر میں کُل معاملات کا 50 فیصد پایا گیا۔لیکن اس ہفتے جموں اور بارہمولہ میں کووڈ معاملات بڑھ گئے۔جسکی وجہ سے سرینگر میں کُل نئے کووڈ معاملے 42 فیصدپائے گئے۔اس ہفتے کُل سات اموات ہوئی ہیں جن میں سےچار کشمیر اور تین جموں صوبہ میں ہوئیں۔

ماہرین کہتے ہیں کہ ابھی تک کشمیر میں کووڈ پھیلانے والےوائرس کی کوئی نئی سٹرین نہیں پائی گئی ہے لیکن وہ بڑھتے ہوئے کووڈ معاملات سے پریشان ہیں اورعوام سے ویکسین کے ساتھ ساتھ کووڈ کے قواعد و ضوابط پرسختی سے عمل کرنے کی تلقین کر رہے ہیں۔پچھلے مہینےسرینگر میں سعودی عرب سے لوٹا ایک ڈاکٹر ویکسین کے باوجود کشمیر میں کووڈ 19 سے متاثر ہوا تھا اور یہ شبہ ظاہر کیا گیا کہ انھیں کووڈ وائرس کی کسی نئی سٹرین نے متاثر کیا لیکن اب اُن سے لئے گئے نمونے کی جنیاتی جانچ رپورٹ آنے کے بعد پتا چلا کہ اُنھیں وائرس کی کسی تغیرشدہ قسم نے متاثر نہیں کیا تھا۔ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہویکسین کے اثردار ہونے کے بارے میں ابھی جانچ چل رہی ہئے لہذا عوام کو ویکسین کے ساتھ ساتھ ماسک اور سوشل ڈسٹنسنگ کا خیال رکھنا ضروری ہے۔
Published by: Mirzaghani Baig
First published: Apr 01, 2021 10:49 AM IST