உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں وکشمیر: 18سے 62 سال کی عمر کے سائکلسٹ دوسوکلومیٹر کا طے کریں گے سفر

    جموں وکشمیر: سائکلنگ کے فروغ کے لئے کشمیر سےکنیا کماری تک سائیکل ریس کا اہتمام

    جموں وکشمیر: سائکلنگ کے فروغ کے لئے کشمیر سےکنیا کماری تک سائیکل ریس کا اہتمام

    کشمیر میں سائکلنگ کو زیادہ سے زیادہ فروغ دینے اور یہاں کے نوجوانوں کو اس جانب راغب کرنے کی ایک مہم کے تحت فوج کی ٹو آر آر کی جانب سے ایک اہم پہل کرتے ہوئے کشمیر سے کنیا کماری تک سائیکل ریس کا اہتمام کیا۔ اس ریس میں میں ملک کی مختلف ریاستوں سے نامور سائیکلٹس نے شرکت کی۔

    • Share this:
    Jammگلمرگ: کشمیر میں سائکلنگ کو زیادہ سے زیادہ فروغ دینے اور یہاں کے نوجوانوں کو اس جانب راغب کرنے کی ایک مہم کے تحت فوج کی ٹو آر آر کی جانب سے ایک اہم پہل کرتے ہوئے کشمیر سے کنیا کماری تک سائیکل ریس کا اہتمام کیا۔ اس ریس میں میں ملک کی مختلف ریاستوں سے نامور سائیکلٹس نے شرکت کی، جس میں خواتین سائیکلسٹ بھی شامل ہیں۔ یہ سائیکلسٹ 18 سے 62 سال کی عمر کے زمرے کے ہیں۔

    فوج کی ٹو آر آر کے زینہ کوٹ سری نگر ہیڈ کوارٹر سے اس ریس کا آغاز ہوا۔ کشمیر سے کنیا کماری تک عالمی ریکارڈ قائم کرنے والے کشمیری سائیکلسٹ عادل احمد تیلی نے فوجی افسران کی موجودگی میں ہری جھنڈی دکھا کر انہیں روانہ کیا۔ واضح رہے کہ یہ سائیکلسٹ دن میں دو سو کلو میٹر کا سفر طے کریں گے۔ ملک کے مختلف ریاستوں کے یہ سائیکلسٹ پہلے کشمیر پہنچے، یہاں انہوں نے کئی روز تک قیام کیا۔ انہوں نے کشمیر کی خوبصورتی اور یہاں کی مہمان نوازی کی بھی تعریفیں کیں۔

    کشمیر میں سائکلنگ کو زیادہ سے زیادہ فروغ دینے اور یہاں کے نوجوانوں کو اس جانب راغب کرنے کی ایک مہم کے تحت فوج کی ٹو آر آر کی جانب سے ایک اہم پہل کرتے ہوئے کشمیر سے کنیا کماری تک سائیکل ریس کا اہتمام کیا۔ اس ریس میں میں ملک کی مختلف ریاستوں سے نامور سائیکلٹس نے شرکت کی جس میں خواتین سائیکلسٹ بھی شامل ہیں۔ یہ سائیکلسٹ 18 سے 62 سال کی عمر کے زمرے کے ہیں۔ فوج کی ٹو آر آر کے زینہ کوٹ سرینگر ہیڈ کوارٹر سے اس ریس کا آغاز ہوا۔

    کشمیر سے کنیاکماری تک عالمی ریکارڈ قائم کرنے والے کشمیری سائیکلسٹ عادل احمد تیلی نے فوجی افسران کی موجودگی میں ہری جھنڈی دکھا کر انہیں روانہ کیا۔ واضح رہے کہ یہ سائیکلسٹ دن میں دو سو کلو میٹر کا سفر طے کریں گے۔ ملک کے مختلف ریاستوں کے یہ سائیکلسٹ پہلے کشمیر پہنچے یہاں انہوں نے کئی روز تک قیام کیا انہوں نے کشمیر کی خوبصورتی اور یہاں کی مہمان نوازی کی بھی تعریفیں کیں۔  کشمیر میں سائکلنگ کو زیادہ سے زیادہ فروغ دینے اور یہاں کے نوجوانوں کو اس جانب راغب کرنے کی ایک مہم کے تحت فوج کی ٹو آر آر کی جانب سے ایک اہم پہل کرتے ہوئے کشمیر سے کنیاکماری تک سائیکل ریس کا اہتمام کیا۔ اس ریس میں میں ملک کی مختلف ریاستوں سے نامور سائیکلٹس نے شرکت کی جس میں خواتین سائیکلسٹ بھی شامل ہیں۔ یہ سائیکلسٹ اٹھارہ سے بیسٹھ سال کی عمر کے زمرے کے ہیں۔ فوج کی ٹو آر آر کے زینہ کوٹ سرینگر ہیڈ کوارٹر سے اس ریس کا آغاز ہوا۔ کشمیر سے کنیاکماری تک عالمی ریکارڈ قائم کرنے والے کشمیری سائیکلسٹ عادل احمد تیلی نے فوجی افسران کی موجودگی میں ہری جھنڈی دکھا کر انہیں روانہ کیا۔

    یہ بھی پڑھیں۔

    جموں وکشمیر: کلگام میں فوج کا بڑی مہم، حزب المجاہدین کے دو دہشت گرد ہلاک، آپریشن جاری


    واضح رہے کہ یہ سائیکلسٹ دن میں دو سو کلو میٹر کا سفر طے کریں گے ۔ ملک کے مختلف ریاستوں کے یہ سائیکلسٹ پہلے کشمیر پہنچے یہاں انہوں نے کئی روز تک قیام کیا انہوں نے کشمیر کی خوبصورتی اور یہاں کی مہمان نوازی کی بھی تعریفیں کیں۔  کشمیر میں سائکلنگ کو زیادہ سے زیادہ فروغ دینے اور یہاں کے نوجوانوں کو اس جانب راغب کرنے کی ایک مہم کے تحت فوج کی ٹو آر آر کی جانب سے ایک اہم پہل کرتے ہوئے کشمیر سے کنیاکماری تک سائیکل ریس کا اہتمام کیا۔اس ریس میں میں ملک کی مختلف ریاستوں سے نامور سائیکلٹس نے شرکت کی جس میں خواتین سائیکلسٹ بھی شامل ہیں۔ یہ سائیکلسٹ 18 سے 62 سال کی عمر کے زمرے کے ہیں۔

    یہ بھی پڑھیں۔

    ٹی-20 عالمی کپ: امپائر کی غلطی سے بھی فائنل میں نہیں پہنچ سکا پاکستان! آسٹریلیا نے کی تھی بڑی غلطی


    فوج کی ٹو آر آر کے زینہ کوٹ سرینگر ہیڈ کوارٹر سے اس ریس کا آغاز ہوا۔ کشمیر سے کنیا کماری تک عالمی ریکارڈ قائم کرنے والے کشمیری سائیکلسٹ عادل احمد تیلی نے فوجی افسران کی موجودگی میں ہری جھنڈی دکھا کر انہیں روانہ کیا۔ واضح رہے کہ یہ سائیکلسٹ دن میں دو سو کلو میٹرکا سفر طے کریں گے۔ ملک کے مختلف ریاستوں کے یہ سائیکلسٹ پہلے کشمیر پہنچے یہاں انہوں نے کئی روز تک قیام کیا۔ انہوں نے کشمیرکی خوبصورتی اور یہاں کی مہمان نوازی کی بھی تعریفیں کیں۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: