உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ایک حادثے میں اپنے دونوں بازو کھو جانے کے باوجود جموں۔کشمیر کے ایتھلیٹ چندیپ سنگھ نے رقم کی تاریخ، پیرا ورلڈ تائکیونڈو چیمپئن شپ میں جیتا میڈل

    Youtube Video

    ایک حادثے میں اپنے دونوں بازو کھو جانے کے باوجود جموں کے پیرا ایتھلیٹ چندیپ سنگھ نے بین الاقوامی سطح پر ملک کا نام کیا روشن۔اس حوصلہ مند نوجوان کھلاڑی کی کامیابی کے پیچھے کیا راز ہے، یہاں جانئے

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir, India
    • Share this:
    جموں کے رہنے والے چندیپ سنگھ 11 سال پہلے بجلی کا کرنٹ لگنے سے اپنے دونوں بازو کھو بیٹھے تھے۔ اس سانحے کا مقابلہ کرتے ہوئے انہوں نے ہمت نہیں ہاری بلکہ اپنے حوصلے کو بلند رکھ کر اپنی زندگی میں کچھ منفرد کرنے کا فیصلہ کیا۔ چونکہ وہ حادثے سے پہلے اپنے اسکول کی ٹیم کے لیے گول کیپر ہوا کرتا تھا، اس لیے وہ کھیلوں کے میدان میں آگے بڑھ کر ملک کا نام روشن کرنا چاہتے تھے۔ابتداء میں مندیپ سنگھ نے اسکیٹنگ کو اپنایا اور پھر اپنی توجہ تائیکوانڈو کی طرف مبذول کرائی۔ قومی سطح پر اپنی صلاحیتوں کو ثابت کرنے کے بعد پیرا ایتھلیٹ مندیپ سنگھ نے 2018 میں انٹرنیشنل پیرا تائیکوانڈو چیمپئن شپ میں حصہ لیا اور 04 گولڈ اور ایک کانسی کا تمغہ حاصل کیا۔ ان کی عالمی رینکنگ تیسرے نمبر پررہی۔ ان کی کامیابی یہیں نہیں رکی، بلکہ چندیپ سنگھ نے 2019 میں پیرا تائیکوانڈو چیمپئن شپ میں بھارت کی نمائندگی کی اور چاندی کا تمغہ اپنے نام کردیا۔ اس طرح وہ پیرا تائیکوانڈو میں ہندوستان کے لیے تمغہ جیتنے والے پہلے پیرا ایتھلیٹ بن گئے۔

    پیرا تائیکوانڈو کے علاوہ مندیپ سنگھ نے پیرا سوئمنگ کے لیے بھی کوشش کی۔ اس نے 2021 میں عالمی پیرا سوئمنگ چیمپئن شپ میں ہندوستان کی نمائندگی کی اور چاندی کا تمغہ حاصل کیا۔ چندیپ سنگھ نے حال ہی میں گوہاٹی میں منعقدہ پیرا سوئمنگ میں دو سلور اور ایک کانسی کا تمغہ حاصل کیا۔ نیوز 18 سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا کہ پیرا تائیکوانڈو اور پیرا سوئمنگ کو بیک وقت اپنانے سے ان کی کارکردگی پر کبھی کوئی فرق نہیں پڑاانہوں نے کہا، "کوئی بھی کھیل کھیلنے کے لیے ایک کھلاڑی کو اچھی ذہنی صحت کی ضرورت ہوتی ہے۔ میں اپنی توجہ کو برقرار رکھنے کے لیے محنت کرتا ہوں۔ تیراکی سے میرے دماغ کو سکون ملتا ہے اور تائیکوانڈو میری ٹانگوں کو طاقت فراہم کرتا ہے اور میں اس طاقت کو تیراکی کے لیے استعمال کرتا ہوں" چندیپ سنگھ کا کہنا ہے کہ کھیلوں کی سرگرمیوں پر ماضی کی نسبت اب زیادہ توجہ دی جارہی ہے۔

    جیل میں مالش کراتے نظرآئے ستیندر جین توBJPبولی۔ تہاڑ میں کیجریوال نے مساج پارلر کھول دیا


     


    نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا"حکومت اب ایسے کھلاڑیوں کی حوصلہ افزائی کر رہی ہےجو بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہیں۔ جس سے انہیں مزید بہتر کارکردگی کرنے کی ترغیب ملتی ہے۔ گزشتہ دوبرسوں سے حکومت جموں و کشمیر میں کھیلوں کو فروغ دینے کے لیے مختلف اقدامات کر رہی ہے۔ جیسا کہ آپ جانتے ہیں کہ ایک کھلاڑی کو حکومت کی طرف سے حوصلہ افزائی کی ضرورت ہوتی ہے جس کے ذریعے وہ مستقبل میں بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کر سکتا ہے۔ مجھے یقین ہے کہ تمام قسم کی کھیلوں کی سرگرمیوں کو اب مزید فروغ ملے گا"چندیپ سنگھ کا کہنا ہے کہ جو لوگ مشکل وقت سے گزرنے کے بعد امید کھو دیتے ہیں انہیں ہمیشہ منفی سوچ سے باہر آنے اور آگے بڑھنے کے لئے کوششیں کرنی چاہیے۔



    شردھا قتل کیس: آفتاب کا کیا جائے گا نارکو ٹیسٹ، ساکیت کورٹ کا روہنی فانسک لیب کو حکم

    انہوں نے کہا،” انسان کو مشکل وقت سے لڑنا پڑتا ہے تاکہ وہ آگے بڑھ سکے۔ میں ہر ایک سے اپیل کروں گا کہ وہ ایک خوشگوار زندگی گزارنے کے لیے مشکل حالات کا مقابلہ کریں اور معاشرے میں اپنالوہا منوائیں" پیرا ایتھلیٹ چندیپ سنگھ جیسے لوگ نوجوان لوگوں کے لیے ایک تحریک ہیں جو بعض مواقع پر کسی نہ کسی وجہ سے آگے بڑھنے سے ہچکچاتے ہیں۔ ایسے افراد کو چاہے کہ وہ چندیپ سنگھ کی طرح حوصلہ بلند رکھیں تاکہ وہ آسمان کی بلندیوں کو چھو سکیں۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: