உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    PSAJK: دواردوکتابوں میں اسلام کے خلاف متنازع مواد کے ضمن میں کارروائی، پابندی کا مطالبہ

    ’’ہم نے ایسی کتابوں کو نصاب سے فوری طور پر ہٹانے کی سفارش کی ہے‘‘۔

    ’’ہم نے ایسی کتابوں کو نصاب سے فوری طور پر ہٹانے کی سفارش کی ہے‘‘۔

    ماہرین کی کمیٹی کے چیئرمین خورشید بسمل نے کہا کہ جب ہم نے کتابوں کی جانچ شروع کی تو ہمیں معلوم ہوا کہ ’’محبوب اردو‘‘ کے نام سے دو اردو کتابوں میں اسلام کے خلاف قابل اعتراض مواد موجود ہے۔ ان کتابوں میں مختلف خاکے ہیں جن کی اسلام میں اجازت نہیں ہے۔

    • Share this:
      جموں و کشمیر میں پرائیویٹ اسکولز ایسوسی ایشن کی ایک ماہر کمیٹی (Expert Committee of Private Schools Association of Jammu and Kashmir) نے دو کتابوں میں اسلام کے خلاف متنازع مواد کا ذکر کیا ہے۔ کمیٹی نے کتاب میں قابل اعتراض مواد ملنے کے بعد تیسری اور پانچویں جماعت کی کتابوں پر پابندی لگانے کی سفارش کی۔

      یہ کمیٹی دہلی کے ایک پبلشر کی جانب سے ISCE بورڈ کی تاریخ اور شہریت کے عنوان سے کتاب کا نمونہ سری نگر بھیجنے کے بعد تشکیل دی گئی تھی۔ جس میں مبینہ طور پر کہا گیا ہے کہ ان کتابوں میں ممنوعہ تصویر کشی کی گئی ہے۔

      مذکورہ واقعہ کے بعد PSAJK نے ایک ایڈوائزری جاری کی ہے جس میں تمام اسکولوں سے کہا گیا ہے کہ جنہوں نے اپنے نصاب میں مخصوص کتابیں تجویز کی تھیں انہیں فوری طور پر ہٹا دیں۔ کمیٹی نے دی ہمالین پوسٹ کو بتایا کہ یہ ایک عام کتاب ہے اور اس کے سرورق پر کسی بورڈ کا ذکر نہیں ہے۔

      ماہرین کی کمیٹی نے کہا کہ فرینکلن انٹرنیشنل، نئی دہلی کی شائع کردہ محبوب اردو میں قابل اعتراض مواد ہے۔ ایسوسی ایشن نے یہ کمیٹی ایک خاص کتاب میں قابل اعتراض مواد سے متعلق حالیہ تنازعہ کے بعد کشمیر بھر میں تنقید کا نشانہ بننے کے بعد تشکیل دی تھی۔

      ماہرین کی کمیٹی کے چیئرمین خورشید بسمل نے کہا کہ جب ہم نے کتابوں کی جانچ شروع کی تو ہمیں معلوم ہوا کہ محبوب اردو کے نام سے دو اردو کتابوں میں اسلام کے خلاف قابل اعتراض مواد موجود ہے۔ ان کتابوں میں مختلف خاکے ہیں جن کی اسلام میں اجازت نہیں ہے۔ ایسی باتیں لوگوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچاتی ہیں۔ ہم نے ایسی کتابوں کو نصاب سے فوری طور پر ہٹانے کی سفارش کی ہے۔

      اسکولوں سے کہا گیا ہے کہ وہ ایسی کتابوں کی ہر ایک کاپی اپنے اسٹاک سے اور ہر طالب علم سے بھی جمع کریں۔ ایسوسی ایشن نے اسکولوں کو مشورہ دیا کہ ایسی کتابوں کی تمام کاپیاں تلف کر دی جائیں۔ مزید برآں کشمیر میں بک ڈیلروں سے بھی کہا گیا ہے کہ وہ مذکورہ کتابوں کا ذخیرہ اپنے مجموعے سے ہٹا دیں۔
      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔

      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: