உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں وکشمیر: کنڈی کپواڑہ میں المناک حادثہ، کنویں کی صفائی کے دوران باپ بیٹے سمیت چار افرادلقمہ اجل بن گئے

    جموں وکشمیر: کنڈی کپواڑہ میں المناک حادثہ، کنویں کی صفائی کے دوران باپ بیٹے سمیت چارافراد ہلاک

    جموں وکشمیر: کنڈی کپواڑہ میں المناک حادثہ، کنویں کی صفائی کے دوران باپ بیٹے سمیت چارافراد ہلاک

    کنڈی کپوارہ میں المناک حادثے میں کنویں کی صفائی کے دوران زہریلے گیس کے اخراج کی نتیجے میں باپ بیٹے سمیت چار افراد لقمہ اجل بن گئے۔ ہلاک ہونے والوں میں چار دن بعد بننے والا ایک دولہا بھی تھا۔ پورے علاقے میں اس واقعہ کو لے کر صف ماتم بچھ گئی ہے۔

    • Share this:
    سری نگر: کنڈی کپوارہ میں المناک حادثے میں کنویں کی صفائی کے دوران  زہریلے گیس کے اخراج کی نتیجے میں باپ بیٹے سمیت چار افراد لقمہ اجل بن گئے۔ ہلاک ہونے والوں میں چار دن بعد بننے والا ایک دولہا بھی تھا۔ پورے علاقے میں اس واقعہ کو لے کر صف ماتم بچھ گئی ہے۔ یہ واقعہ اس  وقت پیش آیا، جب کپواڑہ کے کندی علاقے میں ایک گھر کے افراد کنویں کی صفائی کرنے لگے۔

    صفائی کے دوران وہ کنویں کے اندر بے ہوش ہوگئے اورکنارے پر بیٹھے باپ نے بیٹے کو آواز دی، لیکن جب کوئی جواب نہیں ملا، تو وہ خود کنویں میں اترکر بیٹے کی کیفیت معلوم کرنے لگا تو وہ بھی بے ہوش ہوگیا۔ چنانچہ یکے بعد دیگرے پانچ افراد زہریلے گیس کے اخراج کا شکار ہو کر بے ہوش ہوگئے۔

    کنڈی کپوارہ میں المناک حادثے میں کنویں کی صفائی کے دوران  زہریلے گیس کے اخراج کی نتیجے میں باپ بیٹے سمیت چار افراد لقمہ اجل بن گئے۔
    کنڈی کپوارہ میں المناک حادثے میں کنویں کی صفائی کے دوران زہریلے گیس کے اخراج کی نتیجے میں باپ بیٹے سمیت چار افراد لقمہ اجل بن گئے۔


    چنانچہ یہ خبر جنگل میں آگ کی طرح پھیل گئی اور پاس پڑوسیوں نے بے ہوش افراد کو نیم مردوں حالت میں کنویں سے باہر نکالا اور اسپتال میں انہیں مردوں قرار دے دیا گیا جبکہ ایک شخص ابھی بھی اسپتال میں زیرِ علاج ہے۔ المناک حادثہ میں کچھ روز میں دولہا بننے والا نوجوان بھی شامل ہے۔ پورے علاقے میں صف ماتم بچھ گئی۔پولس اور فوج نے مقامی لوگوں سے مل کر راحت اور بچاؤ کا کام شروع کیا، لکین انہیں نہیں بچا سکے۔

    واضح رہے کہ کپواڑہ ضلع کے مختلف علاقوں میں آج تک ان حادثات میں درجنوں افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔ ان علاقوں میں پانی کی کمی کا مسئلہ رہتا ہے، جس کی وجہ سے اس طرح کے حادثات پیش آ رہے ہیں۔ لوگوں کا کہنا تھا کہ پانی کی عدم دستیابی سے کنویں خشک ہوچکے ہیں، جس کے باعث اس طرح کے واقعات سامنے آرے ہیں۔ مقامی لوگ مطالبہ کر رہے تھے کہ یہ سبھی افردا غریب ہیں۔ گرچہ سرکار ان کی مدد کرے اور انہیں ریلف پیکیج فراہم کیا جائے۔ تاہم شام دیرگئے ان چاروں کو پُرنم آنکھوں سے سپرد خاک کیا گیا۔ نمازے جنازہ میں ہزاروں لوگوں نے شرکت کی۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: