உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Congress لیڈران پر حملہ اور فاروق عبداللہ کی تعریف... آخر چاہتے کیا ہیں غلام نبی آزاد؟

     کانگریس لیڈران پر حملہ اور فاروق عبداللہ کی تعریف... آخر چاہتے کیا ہیں غلام نبی آزاد؟

     کانگریس لیڈران پر حملہ اور فاروق عبداللہ کی تعریف... آخر چاہتے کیا ہیں غلام نبی آزاد؟

    جموں وکشمیر کے غلام نبی آزاد نے نیشنل کانفرنس کے سربراہ فاروق عبداللہ کی تعریف کی اور کہا کہ کانگریس پارٹی سے ان کے باہر نکلنے پر فاروق عبداللہ کے تبصرہ سے ان کے بالغ نظری سیاست کا پتہ چلتا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir, India
    • Share this:
      جموں: جموں وکشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ غلام نبی آزاد نے کانگریس لیڈران پر راست طور پر حملہ کرتے ہوئے گزشتہ اتوار کو کہا کہ انہوں نے پارٹی کے لئے خون پسینہ بہایا ہے جبکہ کانگریس کے کچھ لیڈران سوشل میڈیا کے ذریعہ ’جھوٹ‘ پھیلا رہے ہیں۔ غلام نبی آزاد نے حالانکہ نیشنل کانفرنس کے صدر فاروق عبداللہ کی تعریف کی اور کہا کہ کانگریس پارٹی سے ان کے باہر نکلنے پر فاروق عبداللہ کے تبصرہ سے ان کے بالغ نظری سیاست کا پتہ چلتا ہے۔

      کانگریس کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد نے تقریباً پانچ دہائیوں کے بعد 26 اگست کو پارٹی کو الوداع کہہ دیا اور دعویٰ کیا کہ ملک کی سب سے پرانی جماعت اب ‘مکمل طور پر برباد ہوچکی ہے‘ اور اس کی قیادت داخلی انتخابات کے نام پر دھوکہ دے رہی ہے‘۔انہوں نے پارٹی کے سابق صدر راہل گاندھی پر ‘نادان اور بچکانہ رویہ‘ کا بھی الزام لگاتے ہوئے کہا کہ اب سونیا گاندھی صرف نام کی لیڈر رہ گئی ہیں کیونکہ فیصلے راہل گاندھی کے ‘سیکورٹی گارڈ اور معاون اسٹاف‘ کرتے ہیں۔

      کانگریس کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد نے تقریباً پانچ دہائیوں کے بعد 26 اگست کو پارٹی کو الوداع کہہ دیا۔
      کانگریس کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد نے تقریباً پانچ دہائیوں کے بعد 26 اگست کو پارٹی کو الوداع کہہ دیا۔


      جموں وکشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ نے کانگریس لیڈران کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا، ’جو لوگ مجھے بدنام کرنا چاہتے ہیں، ان کی پہنچ صرف ٹوئٹر یا کمپوٹر تک ہی ہے، جو ایس ایم ایس کے ذریعہ جھوٹ کی تشہیر کرتے ہیں، یہی اہم وجہ ہے کہ کانگریس زمین سے غائب ہوگئی ہے‘۔  کانگریس سے مستعفی ہونے کے بعد غلام نبی آزاد نے جموں میں اپنے پہلے عوامی جلسہ کو خطاب کرتے ہوئے یہ باتیں کہیں۔ غلام نبی آزاد نے کسی کانگریس لیڈر کا نام لئے بغیر کہا، ‘میں اس شخص کی طرح نہیں ہوں، جو دہلی میں اپنے گھر پر بیٹھ کر جھوٹ پھیلا رہا ہے۔ میں ہمیشہ سے ہی زمین سے جڑا رہا ہوں اور میں نے تشہیر کے دوران پنچوں اور سرپنچوں کے گھروں میں وقت گزارا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      غلام نبی آزاد کا  جموں سے کانگریس پر نشانہ، کہا- میری نئی پارٹی سے ان میں بوکھلاہٹ

      یہ بھی پڑھیں۔

      Ghulam Nabi Azad نے آخر کیوں 50 سال بعد کانگریس اور راہل گاندھی سے حاصل کی آزادی

      غلام نبی آزاد نے 1977 میں سابق وزیر اعظم اندرا گاندھی کی گرفتاری کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اس کی مخالفت میں تقریباً پانچ ہزار نوجوان کانگریسی کارکنان کی قیادت کی اور انہیں کئی ماہ تک جیل میں رہنا پڑا۔ کیونکہ انہوں نے بانڈ پر باہر آنے سے انکار کردیا تھا۔ انہوں نے کہا، ’آج میں دیکھ رہا ہوں کہ کانگریس کارکنان جیل جانے سے پہلے پولیس جنرل ڈائریکٹر اور پولیس کمشنروں سے فون پر رابطہ کر رہے ہیں اور ایک گھنٹے کے اندر رہائی کا مطالبہ کرتے ہیں۔ یہی ایک وجہ ہے کہ کانگریس آگے نہیں بڑھ رہی ہے‘۔

      غلام نبی آزاد نے کہا کہ انہیں کانگریس قیادت کے تئیں ہمدردی ہے کیونکہ پارٹی کمپیوٹر اور ٹوئٹر پر نہیں بنی ہے۔ ایس ایم ایس کے ذریعہ ہمارے خلاف جھوٹ کی تشہیر کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا، ‘کانگریس ہمارے خون اور پسینے کی وجہ سے مضبوط تھی۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: