உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    J&K News: جموں و کشمیر میں مضبوط سیاسی کھلاڑی کے طور پر ابھر رہے ہیں غلام نبی آزاد

    J&K News: جموں و کشمیر میں مضبوط سیاسی کھلاڑی کے طور پر ابھر رہے ہیں غلام نبی آزاد

    J&K News: جموں و کشمیر میں مضبوط سیاسی کھلاڑی کے طور پر ابھر رہے ہیں غلام نبی آزاد

    Jammu and Kashmir : سیاسی ماہرین کے مطابق آزاد کی اپنی سیاسی جماعت کو لانچ کرنے کے بعد جموں و کشمیر سے مزید سیاسی چہرے ان کی جماعت میں شامل ہو سکتے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu | Srinagar | Jammu and Kashmir
    • Share this:
    جموں: غلام نبی آزاد جنہوں نے حال ہی میں کانگریس سے استعفیٰ دیا ہے، 4 ستمبر کو جموں میں اپنی سیاسی پارٹی کا آغاز کرنے جا رہے ہیں۔ جبکہ اس سے پہلے انہیں ہر طرف سے حمایت مل رہی ہے اور نہ صرف کانگریس بلکہ دیگر پارٹیوں کے لیڈران اور کارکنان بھی ان کے گروپ میں شامل ہو رہے ہیں۔ سیاسی ماہرین کا یہ بھی کہنا ہے کہ غلام نبی آزاد جموں و کشمیر میں ایک مضبوط سیاسی کھلاڑی کے طور پر ابھر سکتے ہیں کیونکہ ان کی صاف ستھری شبیہ اور ترقی کے حامی بیان کی وجہ سے وہ ایک مقبول عام سیاستدان ہیں۔

    جموں و کشمیر میں سیاسی ماحول گرم ہو گیا ہے ۔ حالانکہ مستقبل قریب میں اسمبلی انتخابات کے انعقاد کے کوئی آثار نہیں ہیں۔ سیاسی ماحول کے گرم ہونے کی وجہ کانگریس کے سینئر لیڈر رہ چکے غلام نبی آزاد کا جمعہ کو استعفیٰ دینا ہے۔ جس کے جموں و کشمیر کانگریس میں اس کے بہت سے سابق قانون سازوں، وزراء، بلاک صدور، تعاون کاروں کے ساتھ بڑے پیمانے پر جھگڑا ہے یا تو غلام نبی آزاد کی حمایت میں پارٹی سے استعفیٰ دینے کا امکان ہے۔ آزاد کے ساتھ شامل ہونے والوں کا تعلق نہ صرف جموں خطے سے ہے بلکہ ایسے کارکنوں کی ایک بڑی تعداد وادی کشمیر سے بھی ہے۔

     

    یہ بھی پڑھئے: آزاد کے ساتھ سیاستدانوں کے ملاپ کا اپنی پارٹی پر نہیں پڑے گا اثر: رفیع احمد میر


    آزاد کے وفادار اور کانگریس کے سابق لیڈر سلمان نظامی نے کہا کہ وہ کانگریس اور یہاں تک کہ دوسری پارٹیوں کے بہت سے ہم خیال لیڈروں کے ساتھ رابطے میں ہیں اور ہر کوئی آنے والے دنوں میں آزاد کی قیادت والے نئے سیاسی گروپ میں بڑی تعداد میں لوگ شامل ہوتے ہوئے دیکھیں جا سکیں گے۔ سلمان نظامی نے مزید دعویٰ کیا کہ آزاد کو وسیع سیاسی تجربہ ہے اور انہوں نے اپنے ترقیاتی کاموں کو ثابت کیا جب وہ مختصر مدت کے لئے جموں و کشمیر کے چیف منسٹر تھے۔

    سلمان نظامی کے دعوؤں کی ٹھوس بنیاد نظر آتی ہے کیونکہ آج جموں و کشمیر اپنی پارٹی کے بہت سے سرکردہ رہنماؤں اور کارکنوں نے پارٹی چھوڑ کر غلام نبی آزاد کے آنے والے سیاسی محاذ میں شامل ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔ دوسری طرف آزاد کے جموں و کشمیر کی سیاست میں انٹری کے بعد نہ صرف کانگریس بلکہ دیگر سیاسی جماعتیں بھی پریشان ہیں۔ یہاں تک کہ بی جے پی کے لیڈر بھی تسلیم کرتے ہیں کہ آزاد کا زبردست اثر ہے اور وہ آنے والے دنوں میں ایک بڑی طاقت بن کر ابھر سکتے ہیں۔

     

    یہ بھی پڑھئے: راجوری اور پونچھ سے دراندازی کی پاکستان کیوں کررہا سازش؟ ماہرین نے بتائی یہ وجہ


    دوسری طرف سیاسی ماہرین کا یہ بھی ماننا ہے کہ آزاد کی جموں و کشمیر کی سیاست میں انٹری دیگر جماعتوں کے لیے اچھی علامت نہیں ہے۔ بی جے پی کے سینیر لیڈر کویندر گپتا سمیت کئی دیگر سیاسی رہنماؤں نے اس بات کو تسلیم کیا ہے کہ آزاد کی نہ صرف جموں و کشمیر بلکہ ملکی سطح کی سیاست پر بھی منفرد چھاپ ہے۔ کویندر گپتا کے مطابق غلام نبی آزاد نے اپنی سیاسی ساخت کو ثابت کیا ہے اور یقینی طور پر انکا کانگریس سے کنارہ کشی کرنا کانگریس کیلئے بہت بڑی پریشانی کا باعث ہے۔

    ادھر سیاسی ماہرین کے مطابق آزاد کی اپنی سیاسی جماعت کو لانچ کرنے کے بعد جموں و کشمیر سے مزید سیاسی چہرے ان کی جماعت میں شامل ہو سکتے ہیں۔ سیاسی ماہر سہیل کاظمی کے مطابق آزاد کا کانگریس سے نکلنا اور اپنی ایک الگ سیاسی جماعت شروع کرنا نہ صرف کانگریس کیلئے درد سر ہے بلکہ جموں و کشمیر کی دیگر علاقائی جماعتوں کیلئے بھی باعث تشویش ہے۔ کاظمی کا کہنا ہے کہ اس بات کا بخوبی اندیشہ لگایا جا سکتا ہے کہ مستقبل قریب میں جموں و کشمیر کی دیگر سیاسی جماعتوں سے مزید لوگ نکل کر آزاد کا دامن تھام سکتے ہیں۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: