உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں و کشمیر کے دیہی علاقوں میں تیز رفتار ترقی کو یقینی بنانے کیلئے حکومت کی پہل

     اس اقدام کے نتیجہ خیز نتائج برآمد ہوئے ہیں اور جموں و کشمیر کے دیہی علاقوں میں بہت سے ترقیاتی منصوبے یا تو مکمل ہوئے ہیں یا شروع کیے گئے ہیں۔ اب ایک بار پھر حکومت جموں و کشمیر میں چوتھے مرحلے کا بیک ٹو ولیج پروگرام منعقد کرنے جا رہی ہے۔

    اس اقدام کے نتیجہ خیز نتائج برآمد ہوئے ہیں اور جموں و کشمیر کے دیہی علاقوں میں بہت سے ترقیاتی منصوبے یا تو مکمل ہوئے ہیں یا شروع کیے گئے ہیں۔ اب ایک بار پھر حکومت جموں و کشمیر میں چوتھے مرحلے کا بیک ٹو ولیج پروگرام منعقد کرنے جا رہی ہے۔

    اس اقدام کے نتیجہ خیز نتائج برآمد ہوئے ہیں اور جموں و کشمیر کے دیہی علاقوں میں بہت سے ترقیاتی منصوبے یا تو مکمل ہوئے ہیں یا شروع کیے گئے ہیں۔ اب ایک بار پھر حکومت جموں و کشمیر میں چوتھے مرحلے کا بیک ٹو ولیج پروگرام منعقد کرنے جا رہی ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir, India
    • Share this:
    جموں و کشمیر کے دیہی علاقوں میں تیز رفتار ترقی کو یقینی بنانے کے لیے حکومت کی پہل کے اچھے نتائج برآمد ہو رہے ہیں۔ آپ کو یاد ہوگا کہ حکومت ہند نے اب تک تین مرحلوں میں گاؤں واپس جانے کا پروگرام چلایا ہے جس کے دوران بڑی تعداد میں مرکزی وزراء نے گاؤں کا دورہ کیا اور تحصیل ہیڈ کوارٹر اور مختلف ایجنسیوں کی طرف سے شروع کیے گئے مختلف ترقیاتی منصوبوں کی نگرانی کریں۔ اس اقدام کے نتیجہ خیز نتائج برآمد ہوئے ہیں اور جموں و کشمیر کے دیہی علاقوں میں بہت سے ترقیاتی منصوبے یا تو مکمل ہوئے ہیں یا شروع کیے گئے ہیں۔ اب ایک بار پھر حکومت جموں و کشمیر میں چوتھے مرحلے کا بیک ٹو ولیج پروگرام منعقد کرنے جا رہی ہے۔ اس سلسلے میں حکومت جموں و کشمیر نے "بیک ٹو ولیج پروگرام کے چوتھے مرحلے (B2V-4)" کے کامیاب انعقاد کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دی ہے۔ جو کہ مرکزی زیر انتظام علاقے میں جلد ہی شروع ہونے جا رہا ہے جس میں مختلف محکموں کی تمام نمایاں اسکیموں، ڈیجیٹل J&K، آن لائن خدمات، دیہاتوں میں روزگار کے مواقع پیدا کرنے کے ساتھ ساتھ لوگوں کی شکایات کا جائزہ لینے اور ترجیحی بنیادوں پر ان کے ازالے کے بارے میں بیداری پیدا کرنے پر توجہ دی جائے گی۔

    پرنسپل سیکرٹری ہائر ایجوکیشن/ انفارمیشن ڈیپارٹمنٹ روہت کنسل کو کمیٹی کا چیئرمین مقرر کیا گیا ہے جبکہ کمشنر/ سیکرٹری محکمہ دیہی ترقی و پنچایتی راج، ڈویژنل کمشنر جموں، ڈویژنل کمشنر کشمیر، کمشنر/ سیکرٹری محکمہ محصولات، کمشنر/ سیکرٹری محکمہ سماجی بہبود، کمشنر / سیکرٹری انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈیپارٹمنٹ، سیکرٹری یوتھ سروسز اینڈ سپورٹس ڈیپارٹمنٹ، سیکرٹری جی اے ڈی اور سیکرٹری پیننگ، ڈویلپمنٹ اینڈ مانیٹرنگ ڈیپارٹمنٹ اس کے ممبر ہوں گے۔ کمیٹی گاؤں واپس جانے کے پروگرام کے شیڈول کو حتمی شکل دے گی۔

    اس کے مواد کو ڈیزائن کرے گی اور پنچایت کی سطح پر جمع کی جانے والی درست معلومات/تفصیلات پر فیصلہ کرے گی۔ یہ پروگرام کے دوران شروع کی جانے والی سرگرمیوں کی قسم کا بھی فیصلہ کرے گا، جن کو منصوبہ بندی، ترقی اور نگرانی کے محکمے کے ساتھ ساتھ دیہی ترقی اور پنچایتی راج کے محکمے کے ساتھ مربوط کیا جائے گا۔ پروگرام کے لیے پنچایتوں کے مختص افسران کا مینڈیٹ بھی کمیٹی کو دیا گیا ہے اور محکمہ جنرل ایڈمنسٹریشن کے ساتھ ساتھ دیہی ترقی اور پنچایتی راج کا محکمہ اس پروگرام کے کامیاب انعقاد کے لیے اس کے ساتھ تال میل کرے گا۔ ذرائع کے مطابق، کچھ مرکزی وزراء کے بیک ٹو ولیج پروگرام کے چوتھے مرحلے کے دوران جموں و کشمیر کے مختلف حصوں میں منعقد کی جانے والی سرگرمیوں میں حصہ لینے کا امکان ہے کیونکہ ایل جی انتظامیہ نے پروگرام میں شرکت کے لیے ان میں سے کچھ سے رابطہ کیا ہے۔

    وراٹ کوہلی ورلڈ کپ کے بعد لے سکتے ہیں T20 فارمیٹ سے سنیاس، شعیب اختر نے کی پیشن گوئی

    ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ مرکزی حکومت کے افسران بھی B2V-4 کے تحت منعقد کی جانے والی سرگرمیوں میں حصہ لے سکتے ہیں اور پروگرام کے کامیاب انعقاد کے لیے ضروری انتظامات کرنے کے لیے متعلقہ محکمے کو ضروری ہدایات جاری کر دی گئی ہیں"پروگرام کے دوران، مختلف محکموں کی نمایاں اسکیموں، ڈیجیٹل J&K، آن لائن خدمات، یوتھ کلبوں کی تشکیل، دیہاتوں میں روزگار پیدا کرنے وغیرہ کے بارے میں بیداری پیدا کرنے پر توجہ مرکوز کی جائے گی،" ذرائع نے مزید کہا، انتظامی سیکرٹریز، جو سرپرست بھی ہیں۔

    دھماکیدار آفر! 35 ہزار روپے سے کم قیمت میں ملے گا iPhone 13، یہاں جانئے کیسے

    یونین ٹیریٹری کے مختلف اضلاع سے بھی کہا گیا ہے کہ وہ پروگرام کے دوران اپنے اپنے اضلاع کا دورہ کریں۔ یہاں یہ بتانا ضروری ہے کہ بیک ٹو ولیج پروگرام کا آغاز سال 2019 میں چار اہم اہداف پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے کیا گیا تھا- پنچایتوں کو متحرک کرنا، سرکاری اسکیموں/پروگراموں کی فراہمی پر رائے جمع کرنا، مخصوص اقتصادی صلاحیت کو حاصل کرنا اور دیہات کی ضروریات کا اندازہ لگانا۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: