உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    وادی کشمیر کے مختلف اضلاع میں ژالہ باری، میوہ صنعت کو پہنچا شدید نقصان، ڈائریکٹر باغبانی نے کیا دورہ

    شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ کے پٹن اور ٹنگمرگ کے بیشتر علاقوں میں ہوئی شدید ژالہ باری نے کاشت کاروں کو کمر توڑ دی۔ اگر چہ میوہ باغات میں میوہ پھل کے درختوں پر پھول کی کلیاں نکلی ہے تو ان کے گرنے سے کافی نقصان ہواہے۔

    شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ کے پٹن اور ٹنگمرگ کے بیشتر علاقوں میں ہوئی شدید ژالہ باری نے کاشت کاروں کو کمر توڑ دی۔ اگر چہ میوہ باغات میں میوہ پھل کے درختوں پر پھول کی کلیاں نکلی ہے تو ان کے گرنے سے کافی نقصان ہواہے۔

    شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ کے پٹن اور ٹنگمرگ کے بیشتر علاقوں میں ہوئی شدید ژالہ باری نے کاشت کاروں کو کمر توڑ دی۔ اگر چہ میوہ باغات میں میوہ پھل کے درختوں پر پھول کی کلیاں نکلی ہے تو ان کے گرنے سے کافی نقصان ہواہے۔

    • Share this:
    jammu kashmir: تیرہ اپریل کو وادی کشمیر کے مختلف مقامات پر شدید ژالہ باری ہوئی جس کے نتیجے میں میوہ صنعت کو کافی نقصان پہنچاہے۔ شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ کے پٹن اور ٹنگمرگ کے بیشتر علاقوں میں ہوئی شدید ژالہ باری نے کاشت کاروں کو کمر توڑ دی۔ اگر چہ میوہ باغات میں میوہ پھل کے درختوں پر پھول کی کلیاں نکلی ہے تو ان کے گرنے سے کافی نقصان ہواہے۔ اگر چہ گزشتہ کئی سالوں سے میوہ صنعت خسارے میں چل رہی تھی تاہم اب جہاں کاشت کاروں کو اس نقصان کی برپائی کی امید تھی ژالہ باری نے ان امیدوں پر بھی پانی پھیر دیا۔ان علاقوں میں کاشت کار کافی مایوس نظر آئے۔

    نقصان کو دیکھتے ہوئے ڈائریکٹر ہاٹی کلچر کشمیر اعجاز احمد بٹ نے پٹن کے زنگم ،شرپورہ، ماموسہ اور لالپورہ کنزر میں کل شدید ژالہ باری سے ہوئے نقصانات کا جائزہ لینے کی غرض سے ان مقامات کا دورہ کیا۔ ڈائریکٹر نے میوہ باغات میں جاکر از خود نقصان کاجائزہ لیا۔ ڈائریکٹر نے کہاکہ تیس سے پینتیس فیصد باغات میں نقصان ہواہے۔اس دوران ڈائریکٹر ہاٹی کلچر نے میوہ کاشت کاروں کے ساتھ بھی تبادلہ خیال کیا۔ ان کے ہمراہ متعلقہ محکمہ کے دیگر افسران بھی تھے۔ ڈائریکٹر نے کاشت کاروں کو مشورہ دیاکہ وہ اپنے باغات میں فی الحال مینکوزب اور یوریا جیسے دوائیوں کا چھڑکاؤ کریں۔

    انہوں نے کہاکہ محکمہ جلد کاشت کاروں کے لئے ایڈوائزری جاری کریں گے جس پر کاشت کاروں کو عمل کرنا ہوگا۔تاکہ میوہ باغات نقصان سے بچ سکیں۔ ڈائریکٹر کے ہمراہ چیف ہارٹیکلچر آفیسر بھی تھے۔اس موقع پر ڈائریکٹر جنرل نے متاثرین کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کیا۔نقصان کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ تقریباً 20 ایسے علاقوں میں 25 فیصد نقصان ہوا ہے۔

    کشمیر میں کئی اسکولی بچے بیمار، موسمی Flu سے بیماری لیکن کووڈ کا بھی ہے کنکشن

    انہوں نے باغبانوں کو مشورہ دیا کہ وہ احتیاط برتیں۔ انہوں نے کہا کہ نقصانات کا تخمینہ لگانے کے لیے متاثرہ اضلاع میں خصوصی ٹیمیں تشکیل دے دی گئی ہیں۔مزید برآں، متاثرہ علاقوں کے باغبانوں کو ہدایت کی گئی کہ وہ اس حکم نامے پر عمل کریں۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: