உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ایل اےسی پرفوجیوں کی تیزی سےنقل وحرکت، ہندوستان کی جانب سےسرحدی رابطوں میں اضافہ

    ذرائع نے بتایا کہ سرنگوں، غاروں اور زیر زمین گولہ بارود کی حفاظت گاہوں کی تعمیر کا کام جاری ہے۔

    ذرائع نے بتایا کہ سرنگوں، غاروں اور زیر زمین گولہ بارود کی حفاظت گاہوں کی تعمیر کا کام جاری ہے۔

    اعلی دفاعی ذرائع کے مطابق زیادہ تر تعمیراتی کام فوج کے لڑاکا انجینئرز اور بارڈر روڈز آرگنائزیشن کر رہے ہیں جو وزارت دفاع کے تحت کام کرتی ہے۔ ایل اے سی کے لیے متبادل سڑکوں کی تعمیر اور ان کو جوڑنے والی دیگر فیڈر سڑکیں حکومت کی جانب سے شروع کیے گئے اسٹریٹجک سرحدی بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں میں شامل ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Mumbai | Jammu
    • Share this:
      اعلی دفاعی ذرائع نے کہا کہ چین کے ساتھ مسلسل تعطل کے درمیان ہندوستان نے گزشتہ دو سال میں لائن آف ایکچوئل کنٹرول (LAC) کے ساتھ سرحدی رابطے کو نمایاں طور پر بڑھایا ہے۔ جس میں متعدد سڑکوں، پلوں، پٹریوں اور سرنگوں کی تعمیر شامل ہیں۔ کئی دیگر اہم بنیادی ڈھانچے کے منصوبے اس وقت جاری ہے۔ جن کا مقصد شہریوں کی رسائی کو مزید بہتر بنانا اور سرحدی علاقوں میں فوجیوں کی تیزی سے نقل و حرکت ہے۔

      اعلی دفاعی ذرائع کے مطابق زیادہ تر تعمیراتی کام فوج کے لڑاکا انجینئرز اور بارڈر روڈز آرگنائزیشن کر رہے ہیں جو وزارت دفاع کے تحت کام کرتی ہے۔ ایل اے سی کے لیے متبادل سڑکوں کی تعمیر اور ان کو جوڑنے والی دیگر فیڈر سڑکیں حکومت کی جانب سے شروع کیے گئے اسٹریٹجک سرحدی بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں میں شامل ہیں۔

      مجموعی طور پر بی آر او نے 60,000 کلومیٹر سے زیادہ سڑکیں، 693 بڑے مستقل پل (جن کی کل لمبائی 53,000 میٹر ہے) اور 19 کلومیٹر کے فاصلے کے ساتھ چار سرنگیں بنائی ہیں۔ اس میں اٹل ٹنل بھی شامل ہے جس میں 10,000 فٹ سے اوپر دنیا کی سب سے لمبی سرنگ (9.02 کلومیٹر) ہونے کا عالمی ریکارڈ ہے اور املنگلا پر دنیا کی سب سے اونچی موٹر ایبل سڑک کی تعمیر شامل ہے۔

      ایک اسٹریٹجک سڑک پر کام جاری ہے۔ جو کہ ہماچل پردیش کے منالی کو مغربی لداخ اور زنسکار وادی سے جوڑنے والا ایک متبادل راستہ ہوگا۔ 298 کلومیٹر لمبی سڑک جسے جلد ہی وزارت دفاع کی منظوری ملنے کا امکان ہے۔ جو کہ 2026 تک مکمل ہو جائے گی، یہ سڑک ہر موسم میں رابطہ فراہم کرنے کے لیے 4.1 کلومیٹر کی جڑواں ٹیوب سرنگ بھی ہوگی۔ جو کہ ہماچل پردیش کے پہاڑی علاقہ شنکن لا میں تعمیر ہوگی۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      ذرائع نے بتایا کہ سرنگوں، غاروں اور زیر زمین گولہ بارود کی حفاظت گاہوں کی تعمیر کا کام جاری ہے۔ اس وقت نو سرنگوں کی تعمیر جاری ہے، جس میں 2.535 کلومیٹر لمبی سیلا سرنگ بھی شامل ہے، جو مکمل ہونے کے بعد دنیا کی بلند ترین دو لین سرنگ ہوگی۔ مزید گیارہ سرنگوں کی منصوبہ بندی بھی جاری ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: