உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    J&K News: ’جموں و کشمیر انتظامیہ نے نماز عید کیلےغیر معقول شرائط رکھی‘ جامع مسجد انتظامیہ کا بیان

    فائل فوٹو

    فائل فوٹو

    اوقاف کے ذرائع نے کہا کہ پولیس اور سول حکام نے انہیں ہفتے کے روز یہ پیغام دینے کے لیے بلایا کہ پرانے شہر کی عیدگاہ میں نماز ادا کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی، جہاں روایتی طور پر نماز ادا کی جاتی ہے اور صرف سری نگر کی جامع مسجد میں صبح 7 بجے سے پہلے کی اجازت دی جائے گی۔

    • Share this:
      کشمیر کی جامع مسجد کی انتظامی تنظیم انجمن اوقاف جامع مسجد (Anjuman Auqaf Jamia Masjid) نے اتوار کے روز جموں و کشمیر (Jammu and Kashmir) کی انتظامیہ پر غیر معقول شرائط لگا کر نماز عید الفطر (Eid-ul-Fitr prayers) کو ناکام کرنے کا الزام لگایا ہے۔

      اوقاف کے ذرائع نے کہا کہ پولیس اور سول حکام نے انہیں ہفتے کے روز یہ پیغام دینے کے لیے بلایا کہ پرانے شہر کی عیدگاہ میں نماز ادا کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی، جہاں روایتی طور پر نماز ادا کی جاتی ہے اور صرف سری نگر کی جامع مسجد میں صبح 7 بجے سے پہلے کی اجازت دی جائے گی۔ تنظیم نے ایک بیان میں کہا کہ انجمن اوقاف جامع مسجد حکام کی طرف سے عائد کی گئی غیر معقول شرائط پر افسوس کا اظہار کرتی ہے، جس سے عید کی نماز کو ناکام بنایا جا رہا ہے۔

      وادی کشمیر میں عیدالفطر نئے چاند کی رویت سے مشروط پیر یا منگل کو منائی جائے گی۔ اوقاف نے پہلے ہفتے کے روز اعلان کیا تھا کہ عید کی نماز عیدگاہ میں صبح 9.30 بجے ادا کی جائے گی۔ اس کے بعد فیصلہ کیا گیا تھا کہ خراب موسم کی صورت میں جامع مسجد میں ایک ہی وقت میں نماز ادا کی جائے گی۔

      اس میں کہا گیا ہے کہ مسجد وادی میں اجتماعی نمازوں کی مرکزی جگہ ہے۔ اس طرح کی مرکزی عبادت گاہوں کا مقصد مسلمانوں کو ایک جگہ اور موقع فراہم کرنا ہے تاکہ وہ بڑی تعداد میں اکٹھے نماز ادا کر سکیں۔ نماز کے اوقات کا تعین وادی بھر کے لوگوں کو ان مرکزی مقامات تک پہنچنے میں سہولت فراہم کرنے کے لیے کیا گیا ہے۔ یہ عجیب بات ہے کہ اگر دوسری جگہوں پر صبح 10:30 بجے باجماعت نماز کی اجازت دی جا سکتی ہے تو جامع مسجد میں کیوں نہیں؟۔

      اوقاف نے کہا کہ حکام نہیں چاہتے ہیں کہ "عوامی خوف" کی وجہ سے عیدگاہ میں اجازت دینے کے بعد جامع مسجد میں بھی عید کی نماز ادا کی جائے۔ ’’اوقاف کے ارکان نے اس بات پر سخت مایوسی کا اظہار کیا کہ وادی کے مسلمانوں کو رمضان المبارک کے آخری جمعہ اور شب قدر کو جامع مسجد میں نماز ادا کرنے سے منع کرنے کے بعد حکام اب مسلمانوں کو عیدگاہ میں کھلے میں نماز عید ادا کرنے کی اجازت نہیں دے رہے ہیں۔

      مزید پڑھیں: وزیر اعظم مودی نے کہا ہندوستان دوسرے کے نقصان کی قیمت پر اپنی فلاح کے خواب نہیں دیکھتا

      قبل ازیں جموں و کشمیر انتظامیہ کی جانب سے شب قدر اور رمضان المبارک کے آخری جمعہ کی نماز پر پابندی کے فیصلے پر عوام اور سیاست دانوں کی جانب سے شدید ردعمل سامنے آیا تھا۔ پیپلز الائنس فار گپکر ڈیکلریشن (PAGD) نے اسے لوگوں کے مذہبی معاملات میں براہ راست مداخلت قرار دیا تھا۔

      مزید پڑھیں:  IPL 2022: کے ایل راہل کی طوفانی اننگ کی بدولت پر لکھنو کی 7ویں جیت

      حکام نے مسجد میں امن و امان کے مسائل کے امکانات کا حوالہ دیا تھا اور اس لیے اسے احتیاطی اقدام کے طور پر بند کر دیا گیا تھا۔ اوقاف نے یہ بھی کہا کہ انہوں نے مذہبی مقامات اور مزارات کی دیکھ بھال کے ذمہ دار وقف بورڈ کو عید گاہ میں نماز عید کے انتظامات کے حوالے سے ایک خط بھیجا تھا جس کے جواب میں کہا گیا تھا کہ جب تک حکام اجازت نہیں دیتے وہ نماز کے انتظامات کو آسان نہیں بنا سکتے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: