ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جنوبی کشمیر سے ٹی آر ایف کا سرگرم ملی ٹینٹ گرفتار ، فوج اور جموں کشمیر پولیس کے خصوصی آپریشن میں زندہ پکڑا گیا

ایس ایس پی اننت ناگ سندیپ چودھری نے طالب کی گرفتاری کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ مذکورہ ملی ٹینٹ کے قبضے سے ہتھیار و گولہ بارود بھی برآمد کیا گیا ہے ، جس میں ایک پستول، ایک میگزین ، ہینڈ گرینیڈ اور گولیوں کے کئی راؤنڈ شامل ہیں ۔

  • Share this:
جنوبی کشمیر سے ٹی آر ایف کا سرگرم ملی ٹینٹ گرفتار ، فوج اور جموں کشمیر پولیس کے خصوصی آپریشن میں زندہ پکڑا گیا
جنوبی کشمیر سے ٹی آر ایف کا سرگرم ملی ٹینٹ گرفتار ، خصوصی آپریشن میں زندہ پکڑا گیا ۔ علامتی تصویر

جنوبی کشمیر: جنوبی ضلع اننت ناگ کے کپرن ڈورو جنگلاتی علاقے سے سیکورٹی فورسز نے ایک مصدقہ اطلاع کی بنا پر ٹی آر ایف سے منسلک ایک خود ساختہ ملی ٹینٹ کو زندہ گرفتار کیا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق فوج کی 19 راشٹریہ رائفلز اور جموں و کشمیر پولیس نے کپرن ویری ناگ کے جنگلاتی علاقے میں ملی ٹینٹوں کی موجودگی کی ایک اطلاع کی بنیاد پر خصوصی آپریشن لانچ کیا ، جس دوران طالب نامی ٹی آر ایف کے ایک سرگرم ملی ٹینٹ کو گرفتار کر لیا گیا ۔


ذرائع کے مطابق مذکورہ ملی ٹینٹ گاڑی میں سفر کر رہا تھا ۔ اس دوران کپرن ویری ناگ سڑک پر ایک خصوصی ناکے کے دوران طالب کو پکڑا گیا ۔ ایس ایس پی اننت ناگ سندیپ چودھری نے طالب کی گرفتاری کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ مذکورہ ملی ٹینٹ کے قبضے سے ہتھیار و گولہ بارود بھی برآمد کیا گیا ہے ، جس میں ایک پستول، ایک میگزین ، ہینڈ گرینیڈ اور گولیوں کے کئی راؤنڈ شامل ہیں ۔


ایس ایس پی اننت ناگ کے مطابق مذکورہ ملی ٹینٹ دہرنہ اننت ناگ کا رہنے والا ہے اور وہ گزشتہ کچھ عرصے سے سرگرم تھا ۔ طالب اپنے گھر سے اچانک لاپتہ ہوا تھا جس کے بعد اس کو تلاش کرنے کیلئے اس کے اہل خانہ نے پولیس میں شکایت بھی درج کر لی تھی اور اس کو گھر واپس لانے کیلئے پولیس سے مدد بھی طلب کی تھی ۔ جبکہ اس کا سراغ لگانے کیلئے اس کے اہل خانہ نے سوشل میڈیا پر ایک پیغام بھی جاری کیا تھا ۔ تاہم اس کے کچھ روز بعد ہی طالب نے سوشل میڈیا پر اپنا ایک آڈیو وائرل کروایا ، جس میں اس نے گھر والوں سے اس کی تلاش ترک کرنے کیلئے کہا اور اس بات کی تصدیق کی کہ وہ ملی ٹینٹوں کی صف میں شامل ہو گیا ہے ۔ اس آڈیو کے بعد طالب سیکورٹی فورسز و پولیس کیلئے مطلوبہ ملی ٹینٹوں کی فہرست میں شامل ہو گیا اور اس کو پکڑنے کیلئے ایک حکمت عملی وضع کی گئی ۔


پولیس کے مطابق طالب کو زندہ پکڑنا یقینی طور پر ایک بڑی کامیابی ہے اور طالب جیسے نوجوانوں کو بندوق کی راہ ترک کرنے اور مین اسٹریم میں واپس لانے کیلئے سرکار اور پولیس کی جانب سے کوششیں جاری رہیں گی ۔ تاکہ کشمیر میں ملیٹینسی کے گراف میں مزید کمی لائی جا سکے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Sep 26, 2020 08:59 PM IST