ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر: کپواڑہ میں فوج اور پولس کی بڑی کارروائی ، 10 گرنیڈ ، ایک پستول اور دو میگزین کے ساتھ ایک او جی ڈبلیو گرفتار

Jammu and Kashmir News : پولس ذرائع کے مطابق گرفتار کئے گئے او جی ڈبلیو کے پاس سے بھاری مقداد میں اسحلہ بارود ضبط کیا گیا ۔ ضبط کئے گئے اسحلہ میں دس گرنیڈ ، ایک پستول اور دو پستول میگزین برآمد کئے گئے ۔

  • Share this:
جموں و کشمیر: کپواڑہ میں فوج اور پولس کی بڑی کارروائی ، 10 گرنیڈ ، ایک پستول اور دو میگزین کے ساتھ ایک او جی ڈبلیو گرفتار
جموں و کشمیر: کپواڑہ میں فوج اور پولس کی بڑی کارروائی ، 10 گرنیڈ ، ایک پستول اور دو میگزین کے ساتھ ایک او جی ڈبلیو گرفتار

کپواڑہ : جموں و کشمیر میں کپواڑہ ضلع کے لولاب علاقہ میں پولیس کو ایک مصدقہ اطلاح ملی تھی کہ علاقہ میں دہشت گردوں کا ایک بالائی ورکر علاقہ میں اسحلہ بارود سیمت گھوم رہا ہے اور کسی جگہ پر دہشت گردوں تک پہچانے کی کوشش کررہا ہے ۔ تاہم پولیس کے مطابق انہوں نے مختلف علاقوں میں چیکینک اسکواڈ تشکیل دی اور لولاب میں ناکے کے دوران اس او جی ڈبلیو کو گرفتار کیا گیا ۔


پولس ذرائع کے مطابق گرفتار کئے گئے او جی ڈبلیو کے پاس سے بھاری مقداد میں اسحلہ بارود ضبط کیا گیا ۔ ضبط کئے گئے اسحلہ میں دس گرنیڈ ، ایک پستول اور دو  پستول میگزین برآمد کئے گئے ۔ بتایا جاتا کہ اگر یہ اسلحہ بارود دہشت گردوں تک پہچانے میں او جی ڈبلیو کامیاب ہوجاتا ہے تو ایک بڑا حادثہ پیش آسکتا تھا ۔ پولیس اور فوج اسے ایک بڑی کارروائی سے تعبیر کررہے ہیں ۔ ان کا کہنا کہ ایک بڑا حادثہ ٹل گیا اور مزید معصوم نوجوان دہشت گردی کی صف میں شامل ہونے سے بچ گئے ۔


پولیس کا کہنا ہے گرفتار کئے گئے او جی ڈبلیو سے تفتیش جاری ہے کہ آیا اس نے اتنی بڑی تعداد میں یہ اسحلہ بارود کہاں سے حاصل کیا اور یہ کس طرح کی کارروائی انجام دینے کی تاک میں تھا ۔ یہ کس دہشت گردی تنظیم کیلے کام کررہا تھا ۔ کیا اس کا مقصد لولاب اور کپواڑہ میں دہشت گردانہ سرگرمیوں کو مزید فعال بنانے کی کوشش کرنا  تھا یا پھر کسی بڑی تخریبی کارروائی کو انجام دینے کی تاک میں تھا ۔


پولیس اس نیٹ ورک کا پردہ فاش کرنے کیلئے بڑے پیمانے  پرجانچ کررہی ہے ۔ کیونکہ پھچلے کئی سالوں سے شمالی کشمیر کا کپواڑہ علاقہ دہشت گردی سے پرامن ہے اور کپواڑہ میں دہشت گردانہ سرگرمیوں میں کمی آئی ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Apr 24, 2021 08:04 PM IST