ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر : ان کورونا مریضوں اب رکھا جارہا ہے ہوم آئیسولیشن میں ، جانئے کیوں

مرکزی حکومت کی جانب سے علامت کے بغیر کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کے لئے نئی گائیڈ لائنس جاری کرنے کے بعد بانڈی پورہ کے سرحدی علاقے گریز میں باضابطہ طور پر ان گائیڈ لائنس پر عمل در آمد شروع ہوگیا ہے ۔

  • Share this:
جموں و کشمیر : ان کورونا مریضوں اب رکھا جارہا ہے ہوم آئیسولیشن میں ، جانئے کیوں
جموں و کشمیر : ان کورونا مریضوں اب رکھا جارہا ہے ہوم آئیسولیشن میں ، جانئے کیوں

مرکزی حکومت کی جانب سے علامت کے بغیر کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کے لئے نئی گائیڈ لائنس جاری کرنے کے بعد بانڈی پورہ کے سرحدی علاقے گریز میں باضابطہ طور پر ان گائیڈ لائنس پر عمل در آمد شروع ہوگیا ہے اور نئی گائیڈ لائنس کے تحت ہی پہلی بار گریز میں بغیر علامت کے وائرس سے متاثرہ دس مریضوں کو ہوم آئیسولیشن میں رکھا گیا ہے ۔ یہاں یہ بات قابل ذکر کہ گریز نہ صرف ایک سرحدی علاقے ہے ، بلکہ دشوار گزار پہاڑی درے ہونے کی وجہ سے دور دراز بستیوں سے مریضوں کو گریز اسپتال منتقل کرنا انتہائی مشکل کام ہے ۔ یہاں اس بات کا ذکر کرنا بھی ضروری ہے کہ دو تحصیلوں گریز اور تُلیل پر مشتمل اس علاقے میں صحت کا شعبہ انتہائی کمزور ہے ۔


صورت حال کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ گریز میں کورونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کے لئے صرف 30 بیڈ دستیاب ہیں اور اس وقت گریز میں کورونا وائرس سے متاثرہ ایکٹیو مریضوں کی تعداد 22 ہے ۔ چناچہ علامت کے بغیر مریضوں کے لئے نئی گائیڈ لائنس سامنے آنے کے بعد گریز میں مریضوں کا ہوم آئیسولیشن شروع ہوچکا ہے اور محکمہ صحت ان گائیڈ لائنس کو سرحدی علاقوں کے لئے کچھ زیادہ ہی سود مند مان رہے ہیں ۔ کیونکہ سرحدی علاقوں میں ڈھیر سارے مسائل ہونے کی وجہ سے ان مریضوں کی منتقلی کافی دشوار ہوتی ہے ۔


قابل زکر بات یہ ہے کہ گریز میں نوے فی صد سے زائد علاقہ مواصلاتی نظام کے بغیر ہے اور یوں مریضوں کے حوالے سے جانکاری حاصل کرنا کچھ زیادہ ہی مشکل ہوجاتا ہے ۔ ادھر محکمہ صحت کے مطابق انہوں نے مریضوں کے ہوم آیسولیشن پر باریک بینی سے نظر رکھنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ تاکہ تمام تر ایس او  پیز پر عمل درآمد کو یقینی بنایا جاسکے ۔

Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Aug 03, 2020 09:09 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading