ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں کشمیر کے چیف سکریٹری کی اظہار رائے، اس سال شری امرناتھ جی یاترا میں 6 لاکھ یاتریوں کی آمد متوقع

مذہبی اعتبار سے اہمیت کی حامل شری امرناتھ جی یاترا (amarnath yatra) میں اس برس یاتریوں کا ہدف 6 لاکھ کا ہے۔ ان باتوں کا اظہار جموں کشمیر کے چیف سکریٹری بی وی آر سبرا منیم (jammu and kashmir chief secretary bvr subrahmanyam) نے کیا ہے۔

  • Share this:
جموں کشمیر کے چیف سکریٹری کی اظہار رائے، اس سال شری امرناتھ جی یاترا میں 6 لاکھ یاتریوں کی آمد متوقع
amarnath yatra

جموں کشمیر: مذہبی اعتبار سے اہمیت کی حامل شری امرناتھ جی یاترا (amarnath yatra) میں اس برس یاتریوں کا ہدف 6 لاکھ کا ہے۔ ان باتوں کا اظہار جموں کشمیر کے چیف سکریٹری بی وی آر سبرا منیم (jammu and kashmir chief secretary bvr subrahmanyam)  نے کیا ہے۔ انہوں نے شری امرناتھ جی یاترا کے سلسلے میں منعقدہ ایک اہم اجلاس کی صدارت کی اور اس دوران انہوں نے ایک محفوظ اور بلا رکاوٹ شری امرناتھ جی یاترا 2021 کے لئے کی جارہی تیاریوں کا جائزہ لیا۔ پرنسپل سکریٹری کے لیفٹیننٹ گورنر / سی ای او شری امرناتھ بورڈ ، محکمہ پبلک ورکس (آر اینڈ بی) ، انتظامی و تجارت اور سیاحت کے انتظامی سیکرٹریوں کے علاوہ کشمیر و جموں کے صوبائی کمشنر، متعلقہ ڈپٹی کمشنرز اور ایڈیشنل سی ای او شرائن بورڈ نے اس میٹنگ میں شرکت کی۔ چیف سکریٹری نے جموں سرینگر قومی شاہراہ کے ساتھ یاتریوں کی محفوظ ، ہموار اور بنا خلل آمدورفت کے انتظامات کا بھی جائزہ لیا۔ انہوں نے انتظامیہ کو ہدایت دی کہ رواں سال 6 لاکھ یاتریوں کی متوقع آمد کے سلسلے میں غیر معمولی تیاریوں کا آغاز کرے۔


یاتریوں کے بحفاظت راہ کو یقینی بنانے کے لئے ، لکھن پور سے مقدس غار اور اس کے دیگر راستوں پر سیکورٹی سمیت تمام تر انتظامات پر بھی تبادلہ خیال ہوا اور ہر ممکنہ اقدام اٹھانے کی متعلقین کو سخت ہدایت دی گئ ۔ یاتریوں کی رہائش اور عوامی سہولیات کی مناسب طریقے سے ریمپنگ کی ہدایت جاری کی گئی۔ موسم کی شدت کو مدنظر رکھتے ہوئے انتظامات پر خصوصی توجہ کے ساتھانہوں نے کشمیر اور جموں کے ڈویژنل کمشنروں کو ہدایت کی کہ وہ یاترا کے راستے خاص طور پر کٹھوعہ ، سانبہ ، جموں ، ادھمپور ، رامبن ، اننت ناگ ، سری نگر ، بال تل اور چندن واڑی میں ٹرانزٹ کیمپوں میں لگائے جانے والے انتظامات کی کڑی نگرانی کریں۔


ڈپٹی کمشنروں کو ہدایت دی گئی کہ وہ اپنے دائرہ اختیار کے تحت ٹرانزٹ کیمپوں کے قیام کی گنجائش کو بڑھا دیں جو تقریبا 1.22لاکھ یاتریوں کے لۓ قابل رہائش ہو۔ ان یاتریوں میں روزانہ بنیادوں پر مقدس گپھا کو جانے والے اور وہاں سے مقدس شیو لنگم کے درشن کر کے واپس لوٹنے والے یاتری شامل ہیں جنکو ان ٹرانزٹ کیمپوں میں رہائش کی معقول سہولیات فراہم کی جائیں گی۔ چیف سکریٹری نے ڈویژنل کمشنروں سے کہا کہ وہ ان راہداری کیمپوں میں بنیادی سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنائے ، اس کے علاوہ راستے میں مناسب سہولیات کی فراہمی کو بھی یقینی بنائے اور بروقت تخمینہ اور منظوری کے لئے محکمہ سیاحت کو وسائل کی اضافی ضرورت پیش کرنے کو کہا گیا۔

مختلف کاموں اور انتظامات کی بروقت تکمیل کو یقینی بنانے کے متعلقین کو اپریل 2021 کے یکم ہفتہ میں منصوبوں اور منصوبوں پر عمل درآمد شروع کرنے کی ہدایت بھی دی گئی۔

واضح رہے کہ اگست 2019 میں دفعہ 370 کے خاتمے سے قبل امرناتھ یاترا کو سیکورٹی کی بنا پر سرکار نے روک دیا تھا اور سرکار نے اس وقت یہ اقدام یاتریوں کی حفاظت کو ممکن بنانے کےلئے اٹھایا تھا۔ جسکے بعد گزشتہ سال کووڈ کی سنگین وبائ صورتحال کے تناظر میں یاترا کو معطل کر دیا گیا تھا۔ تاہم اس سال اب سرکار نے لگ بھگ 6 لاکھ یاتریوں کی آمد کو یقینی بنانے کےلئے بڑے پیمانے پر اقدامات شروع کۓ ہیں۔ جبکہ جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ میں قائم ہمالیائی پربتوں پر قائم مقدس امرناتھ گپھا اور شیو لنگم کے درشن کےلئے یاتریوں کے سفر کو آسان و محفوظ بنانے کےلئے بھی سیکورٹی سمیت دیگر غیر معمولی اقدامات کو جلد ہی حتمی شکل دے دی جاۓ گی ۔
Published by: Sana Naeem
First published: Mar 24, 2021 11:02 PM IST