ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر : حد بندی کمیشن کی مزید کئی وفود سے ملاقات، سیاسی پارٹیوں نے کیا یہ بڑا مطالبہ

Jammu and Kashmir News : ملاقات کے دوران سیاسی جماعتوں نے مجموعی طور پر جموں خطے کے ساتھ ماضی میں مبینہ امتیازی سلوک ختم کرنے اور جموں ڈویژن میں اسمبلی نشستوں کی تعداد بڑھانے کی وکالت کی ۔

  • Share this:
جموں و کشمیر : حد بندی کمیشن کی مزید کئی وفود سے ملاقات، سیاسی پارٹیوں نے کیا یہ بڑا مطالبہ
جموں و کشمیر : حد بندی کمیشن کی مزید کئی وفود سے ملاقات، سیاسی پارٹیوں نے کیا یہ بڑا مطالبہ

جموں و کشمیر: جموں و کشمیر کے اپنے چار روزہ دورے کے تیسرے روز حد بندی کمیشن نے آج چناب وادی اور جموں میں مختلف سیاسی وفود اور سماجی تنظیموں سے بات چیت کی ۔ ملاقات کے دوران سیاسی جماعتوں نے مجموعی طور پر جموں خطے کے ساتھ ماضی میں مبینہ امتیازی سلوک ختم کرنے اور جموں ڈویژن میں اسمبلی نشستوں کی تعداد بڑھانے کی وکالت کی ۔ کشمیر سے روانگی کے بعد کمیشن نے آج صبح ڈوڈہ میں سیاسی جماعتوں کے وفود کے ساتھ ملاقات کی ۔ وفود میں کانگریس ، بی جے پی اور اپنی پارٹی کے لیڈران شامل رہے۔


ملاقات کے بعد نیوز 18 اُردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے جموں و کشمیر کانگریس کے نائب صدر جی ایم سروری نے کہا کہ انہوں نے کمیشن سے درخواست کی کہ وہ علاقہ میں رقبے کے مطابق اسمبلی نشستوں کی ازسر نو حد بندی کرے ۔ سروری نے کہا کہ انہوں نے چناب ویلی کے تین اضلاع ڈوڈہ ، کشتواڑ اور رام بن میں رقبے کو مدنظر رکھتے ہوئے ہر ضلع میں مزید ایک اسمبلی نشست کو معرض وجود میں لانے کی سفارش کرے ۔ تاکہ چناب خطے کے دور دراز اور پسماندہ علاقوں میں رہائش پذیر لوگوں کو اسمبلی میں مناسب نمائندگی مل پائے۔ بی جی پی وفد کی سربراہی کر رہے پارٹی کے سینئر لیڈر سنیل شرما نے کہا کہ انہوں نے علاقے میں 2011 کی مردم شماری کے دوران چناب خطے میں آبادی کے تناسب کو غلط طریقے سے اندراج کرنے کا معاملہ اٹھایا۔ شرما نے کہا کہ کمیشن کو 2021 کی مردم شماری کے مطابق اسمبلی نشستوں کی حد بندی کرنی چاہیے۔


ڈوڈہ میں مختلف وفود سے ملاقات کرنے کے بعد کمیشن آج سہ پہر جموں پہنچ گیا۔ کمیشن نے جموں میں جن سیاسی جماعتوں کے وفود سے ملاقات کی ان میں بی جے پی ، این سی ، کانگریس ، پینتھرس پارٹی، کشمیری پنڈتوں کی انجمنوں کے نمائندے اور مغربی پاکستان سے تعلق رکھنے والے پناہ گزینوں کے وفود قابل ذکر ہیں ۔


بھارتیہ جنتا پارٹی کے یوٹی صدر رویندر رینہ نے کمیشن سے ملاقات کرنے کے بعد کہا کہ پارٹی کے وفد نے جموں کے ساتھ ماضی میں سیاسی امتیاز برتنے کے مبینہ معاملہ کو کمشین کے سامنے رکھا ۔ انہوں نے کہا کہ وفد نے کمیشن سے مطالبہ کیا کہ جموں خطے کے لوگوں کو اسمبلی میں مناسب نمائندگی دینے کے لیے ضروری سفارشات درکار ہیں ۔ نیوز 18 اُردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے رینہ نے کہا کہ انہوں نے کمیشن سے کہا کہ کشمیری پنڈتوں کے لئے وادی میں 3 اسمبلی نشتیں مخصوص رکھی جانی چاہیے۔ رویندر رینہ نے کہا کہ پارٹی نے درجہ فہرست قبائل کےلئے بھی سیٹیں مخصوص رکھنے کا کمیشن سے مطالبہ کیا۔

نیشنل کانفرنس کے وفد نے ملاقات کے دوران کمیشن کو ایک یادداشت پیش کی ۔ پارٹی کے جموں کے صوبائی صدر دیویندر رانا کی سربراہی میں ملاقی ہوئے وفد نے یادداشت میں جموں خطے کے خلاف ماضی میں سیاسی طور پر مبینہ امتیازی سلوک برتنے کا ذکر کیا ۔ یادداشت میں کمیشن سے اپیل کی گئی کہ وہ اسمبلی نشستوں کی ازسرنو حد بندی کے فیصلے کے دوران جموں خطے کے لوگوں کو مناسب نمائندگی فراہم کرنے کا معاملہ ذہن نشین کرے ۔ یادداشت میں کمیشن سے امید ظاہر کی گئی کہ وہ اپنے حتمی رپورٹ میں جموں خطے کے لوگوں کے سیاسی حقوق کو ملحوظ رکھے گا ۔ تاکہ رپورٹ کے منظر عام پر آنے کے بعد کمیشن کی کارکردگی پر سوال نہ اٹھایا جائے ۔

کانگریس کے سینئر لیڈر رمن بھلا نے کہا کہ انہوں نے حد بندی کمیشن سے ملاقات کے دوران کشمیر اور جموں میں مساوی طور پر اسمبلی نشستوں کی از سر نو حد بندی پر زور دیا۔ کشمیری پنڈت لیڈر اشونی چرنگو نے کہا کہ انہوں نے کشمیری پنڈت برادری کے لئے اسمبلی میں 5 نشستیں مخصوص رکھنے کی بات رکھی۔

کمیشن جمعہ کی صبح انتظامیہ کے اہلکاروں کے ساتھ بھی ملاقات کرنے کا پروگرام رکھتا ہے ۔ تاکہ جموں و کشمیر میں اسمبلی نشستوں کی از سر نو حد بندی سے متعلق ان کی آرا کو سنا جا سکے۔

چار روزہ دورے کے اختتام پر حد بندی کمیشن ہفتے کے روز جموں میں ایک نیوز کانفرنس بھی کرے گا ، جس میں اس دورے کے دوران جموں و کشمیر کی مختلف سیاسی جماعتوں اور انتظامیہ سے حاصل کردہ جانکاری کے بارے میں جانکاری فراہم کی جا سکتی ہے۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 08, 2021 10:07 PM IST