உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں و کشمیر کے معروف صحافی شاہد مسعود بخاری کا دل کا دورہ پڑنے سے انتقال ، صحافتی حلقوں میں رنج وغم کی لہر

    جموں و کشمیر کے معروف صحافی شاہد مسعود بخاری کا دل کا دورہ پڑنے سے انتقال

    جموں و کشمیر کے معروف صحافی شاہد مسعود بخاری کا دل کا دورہ پڑنے سے انتقال

    Jammu and Kashmir News : شاہد مسعود بخاری کو ایک معتبر صحافی سمجھا جاتا تھا۔ شاہد نے اپنی مختصر سی زندگی میں شہرت حاصل کی۔ وہ ایک قابل تجزیہ نگار بھی تھے۔

    • Share this:
    ٹنگمرگ : جموں و کشمیر کے معروف صحافی اور ایڈیٹر شاہد مسعود بخاری حرکت قلب بند ہونے انتقال کرگئے۔ شاہد مسعود بخاری کو ایک معتبر صحافی سمجھا جاتا تھا۔ شاہد نے اپنی مختصر سی زندگی میں شہرت حاصل کی۔ وہ ایک قابل تجزیہ نگار بھی تھے۔ ان کے ہم عصر کہتے ہیں کہ شاہد بخاری تنقید ضرور کرتے تھے لیکن وہ کبھی بد دیانتی پر مبنی نہیں ہوتی تھی۔ وہ ایک جینٹل مین صحافی کے طور پر مشہور تھے۔ شاہد مسعود بخاری نے گزشتہ تیس برسوں سے ریڈیو اور ٹی وی کے ساتھ وابستہ تھے اور انہوں نے بحثیت نیوز ریڈر، نیوز اینکراور شہر بین کے لئے ضلع بڈگام سے نمائندے کے طور پر کام کیا ۔ ریڈیو اور ٹی وی پر کئی برسوں تک کام کیا۔ شاہد بخاری اپنی منفرد آواز، بیباک انداز کے لئے جانے جاتے تھے ۔ شاہد بخاری آج کل ٹی وی کے ایڈیٹر تھے۔ براڈ کاسٹنگ انہیں وراثت میں ملی تھی۔ ان کے والد سید الطاف بخاری آل انڈیا ریڈیو کے معروف براڈ کاسٹوں میں شامل ہیں۔

    شاہد بخاری کو اپنے آبائی قبرستان قاضی پورہ ٹنگمرگ میں سپرد خاک کیا گیا۔ شاہد بخاری نے نہ صرف صحافی کا ہی رول نبھایا بلکہ انہوں نے مختلف شعبوں کے ذریعہ سے سوسائٹی کی بھر پور مدد کی۔ معروف ماہر تعلیم پروفیسر عبد الجبار گوکہمی کہتے ہیں کہ شاہد بخاری مخلص اور انسان دوست تھے۔ وہ ہر وقت سماج کے درپیش مسائل اجاگر کرتے رہے۔ پیپلز کانفرنس کے سینئر لیڈر سید بشارت بخاری نے نیوز18 اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ شاہد بخاری میرے دوست تھے اور ان کا ہمارے گھر آنا جانا تھا۔ صحافت کو ایمان سمجھتے تھے اور ایک دلچسپ امتزاج کی شخصیت کے مالک تھے اور یہی ان کی کامیابی تھی۔

    شاعر وادیب گلشن بدرنی نے نیوز18 اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ شاہد بخاری کی موت شاید اللہ کو پہلے ہی منظور تھی ۔ تاہم ابھی قوم کی تعمیر میں شاہد کی بہت ضرورت تھی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ شاہد کی موت ان کے لئے ذاتی نقصان ہے کیونکہ ہم ایک ہی پلیٹ فارم پر پلے بڑھے ہیں، ایک ساتھ کام کرنے کا موقع ملا۔ میں ان کی شخصیت سے کافی متاثر ہوں ، وہ احسن طریقے سے کام نبھاتے تھے۔

    وادی کے مشہور افسانہ نگار رحیم رہبر نے نیوز18 اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ شاہد بہت ہی ملنسار، شریف النفس تھے۔ ان کی موت کا بدل نہیں ہوسکتا اور یہ ناقابل تلافی نقصان ہے۔ نوجوان صحافی سید جاوید نے نیوز18 اردو کو بتایاکہ شاہد بخاری کی موت سے انہیں دلی صدمہ ہوا ۔ شاہد سے انہیں بہت کچھ سیکھنے کو ملا ۔ ماہر تعلیم غلام حسن بابا نے نیوز18 اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ "شاہد کی موت میرے لئے ذاتی نقصان ہے ان کے ساتھ میرے ذاتی تعلقات تھے شاہد  شریف النفس انسان تھے جوانی کی حالت میں ان کی افسوسناک ہے۔ان کا کام قابل ستائش ہوتا تھا۔

    شاہد بخاری کی موت پر مختلف سیاسی جماعتوں کے علاوہ صحافتی، ادبی، سماجی اور دیگر انجمنوں نے گہرے صدمے کا اظہار کیا۔ مختلف شخصیات نے قاضی پورہ ٹنگمرگ میں گھر جاکر شاہد بخاری کے لواحقین سے تعزیت کی ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: