உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں و کشمیر : ویل چیئر سے پدم ایوارڈز تک جاوید ٹاک نے کا مشکلوں سے بھرا سفر

    جموں و کشمیر : ویل چیئر سے پدم ایوارڈز تک جاوید ٹاک نے کا مشکلوں سے بھرا سفر

    جموں و کشمیر : ویل چیئر سے پدم ایوارڈز تک جاوید ٹاک نے کا مشکلوں سے بھرا سفر

    Jammu and Kashmir News : بجبہاڑہ اننت ناگ کے جاوید ٹاک دونوں ٹانگوں سے معذوری کے باوجود گزشتہ کئی برسوں سے جسمانی طور پر کمزور افراد خاص کر بچوں کی فلاح و بہبود کے مشن پر گامزن ہیں۔ ویل چئیر سے پدم شری ایوارڈ حاصل کرنے تک کا سفر جاوید احمد ٹاک کے لئے آسان نہیں تھا۔

    • Share this:
    جموں و کشمیر : کئی لوگ زندگی سے تنگ آکر زندگی سے ہار مانتے ہیں، جبکہ کئی لوگ زندگی کے چیلینجز کو قبول کر کے ہر مشکل کو پار کر لیتے ہیں۔ آج آپ کو ایسے ہی شخص سے ملاتے ہیں ، جنہوں نے ویل چئیر کی مدد سے اپنا سفر پدم ایوارڈز تک طے کیا۔ بجبہاڑہ اننت ناگ کے جاوید ٹاک دونوں ٹانگوں سے معذوری کے باوجود گزشتہ کئی برسوں سے جسمانی طور پر کمزور افراد خاص کر بچوں کی فلاح و بہبود کے مشن پر گامزن ہیں۔ ویل چئیر سے پدم شری ایوارڈ حاصل کرنے تک کا سفر جاوید احمد ٹاک کے لیے آسان نہیں تھا۔ اس سفر کے دوران جاوید کے سامنے ایسی مشکلات آئی جن سے اکثر انسان تنگ آکر عام زندگی سے کنارہ کر لیتا ہے۔

    دراصل 1993 میں جاوید ٹاک ملی ٹینٹوں کی جانب سے ان کے چچا پر کئے گئے حملے کی زد میں آگیا اور ہمیشہ ہمیشہ کیلئے اپنی ٹانگوں سے محروم ہو گیا۔ لیکن جاوید نے بڑی ہمت کا مظاہرہ کرکے ویل چئیر کو اپنا ساتھی بنایا اور معذوریت کو قریب دیکھ کر اپنے جیسے افراد کی فلاح و بہبود کےلیے مشن کا آغاز کیا ، جس کے بعد حال ہی میں انہیں صدر ہند رام ناتھ کووند نے ملک کے چوتھے اعلیٰ ترین سویلین ایوارڈ پدم شری سے نوازا۔ جاوید کے مطابق جب ان کے کمر میں گولی لگی اور وہ ہمیشہ ہمیشہ کیلئے معذور ہوگئے تو انہوں نے جینے کی امید چھوڑ دی اور ان کا سامنا گم نام اندھیروں سے ہوا۔ لیکن کچھ دوستوں اور عزیزوں نے جاوید کے حوصلے کو پست نہیں ہونے دیا اور ہمت جٹا کر جاوید نے نئے سرے سے اپنی زندگی کا آغاز کیا۔

    جاوید نے اپنے جیسے جسمانی طور پر کمزور افراد کے حقوق کی لڑائی لڑنے کا فیصلہ کیا۔ جاوید کے مطابق انہیں جینے کی راہ تب ملی جب انہوں نے جسمانی طور پر کمزور بچوں کیلئے بجبہاڑہ میں زیبا آپا انسٹیچیوٹ قائم کیا۔ جہاں پر ہزاروں بچے جسمانی کمزوریوں کے باوجود بھی تعلیم حاصل کر چکے ہیں اور ایسے سینکڑوں بچوں کو مین اسٹریم میں لانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ جبکہ ہیلپ لائن نامی این جی او کے ذریعہ بھی جاوید نے سماجی خدمات میں ایک منظم رول ادا کیا۔ جاوید کی گراں قدر خدمات کے مدنظر سرکار نے بالآخر انہیں پدم شری ایوارڈ سے سرفراز کیا۔

    جاوید ٹاک کے مطابق جسمانی طور پر کمزور افراد کے حقوق کے عملی نفاذ کیلئے ابھی بھی بہت کچھ کرنا باقی ہے۔ جبکہ تمام متعلقین کو ایسے افراد کی فلاح و باز آبادکاری کیلئے آنا ہوگا۔ ویل چئیر پر سرگرم جاوید کشمیر میں جاری شورش کی ایک تصویر بھی ہے۔ جبکہ اس کی ہمت اور جذبہ اس وقت کئی لوگوں کے لیے مشعل راہ بھی ہے، جس کا ذکر ملک کے وزیراعظم نریندر مودی نے بھی اپنے "من کی بات" پروگرام میں کیا ہے۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ جاوید کےمشن کو پائے تکمیل تک پہنچانے کے لیے ہر طبقہ سامنے آئے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: