ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

غلام نبی آزاد کے جموں پہنچتے ہی کھل کر سامنے آئی کانگریس کی آپسی رسہ کشی اور بغاوت ، جانئے کیوں

غلام نبی آزاد نے بھی اپنی تقریر کے دوران کافی جارہانہ رخ اپنایا ۔ اپنی تقریر کے دوران غلام نبی آزاد کا کہنا تھا کہ وہ راجیہ سبھا سے ریٹائر ہوئے ہیں سیاست سے نہیں ۔

  • Share this:
غلام نبی آزاد کے جموں پہنچتے ہی کھل کر سامنے آئی کانگریس کی آپسی رسہ کشی اور بغاوت ، جانئے کیوں
غلام نبی آزاد کے جموں پہنچتے ہی کھل کر سامنے آئی کانگریس کی آپسی رسہ کشی اور بغاوت ، جانئے کیوں

جموں میں غلام نبی آزاد کے پہنچتے ہی کانگریس کی آپسی رسہ کشی اور بغاوت کھل کر سامنے آگئی ہے ۔ جموں پہنچتے ہی غلام نبی آزاد نے مختلف پروگراموں میں شرکت کی ۔ ان پروگراموں میں غلام نبی آزاد نے کھل کر راہل گاندھی اور سونیا گاندھی کے کام کاج کے طریقے پر کئی سوالات اُٹھائے ۔ یہاں یہ بات قابل زکر ہے کہ نہ صرف غلام نبی آزاد بلکہ G23 کے دیگر لیڈران ، جس میں کپل سبل ،آنند شرما و دیگر لیڈران شامل ہیں ، نے بھی ایک پروگرام کے دوران جموں میں یہ کہا کہ گزشتہ دس سال کے دوران کانگریس کافی کمزور ہوگئی ہے اور اب وقت آگیا ہے کہ ایسے ٹھوس اقدامات اُٹھائے جائیں ، جس سے کانگریس کی کھوئی ہوئی ساخت بحال ہو ۔ اس موقع پر کپل سبل کا مزید کہنا تھا کہ غلام نبی آزاد کو درکنار کرنے سے کانگریس کو کوئی فائدہ نہیں ہوگا ۔ بلکہ کانگریس کے اس اقدام سے اپوزیشن پارٹیوں کو فائدہ ملے گا ۔


کپل سبل کا کہنا تھا کہ غلام نبی آزاد ایک منجھے ہوئے سیاستدان ہیں اور انہوں نے کانگریس پارٹی کے لئے ناقابل فراموش خدمات انجام دی ہیں اور ایسے میں ان کو راجیہ سبھا سے ریٹائر کرنا صیح نہیں ہے ۔ کپل سبل کا مزید کہنا تھا کہ وہ اور ان کے دیگر ساتھیوں کی بھی یہی خواہش تھی کہ غلام نبی آزاد کو راجیہ سبھا میں بطور اپوزیشن لیڈر برقرار رکھا جائے ۔ حالانکہ ایسا بالکل نہیں ہوا اور کانگریس کا یہ فیصلہ ان کے لئے کافی حیران کن تھا ۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ کانگریس کو زمینی سطح پر جا کر دیکھنا چاہئے اور اپنی خامیوں کا پتہ لگا کر ان خامیوں کو دور کرنا چاہیے ۔


غلام نبی آزاد نے بھی اپنی تقریر کے دوران کافی جارہانہ رخ اپنایا ۔ اپنی تقریر کے دوران غلام نبی آزاد کا کہنا تھا کہ وہ راجیہ سبھا سے ریٹائر ہوئے ہیں سیاست سے نہیں ۔ غلام نبی آزاد کا مزید کہنا تھا کہ وہ اور ان کے ساتھی مسلسل یہ کوشش کر رہے ہیں کہ کس طرح کانگریس کی کھوئی ہوئی ساخت کو دوبارہ بحال کیا جاسکے ۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ گزشتہ دس سال کے دوران کانگریس بہت کمزور ہوگئی ہے اور اس ساخت کو دوبارہ بحال کرنے کے لئے بہت محنت درکار ہے ۔ کانگریس لیڈران کی ان تقاریر سے ایک بات واضح ہوگئی ہے کہ کانگریس میں سب کچھ ٹھیک نہیں چل رہا ہے اور جس طرح  G23 لیڈران نے جموں میں راہل اور سونیا گاندھی کے خلاف کھل کر مورچہ کھولا ، اس سے اس بات کے اشارے ملے ہیں کہ آنے والے دنوں میں کانگریس کی آپسی رسہ کشی کو اور ہوا ملے گی ۔


اس رسہ کشی کی وجہ سے اس وقت ساری نظریں غلام نبی آزاد پر مرکوز ہیں کہ ان کا آئندہ لائحہ عمل کیا رہے گا ۔ کیونکہ جموں دورے کے دوران تمام تر پروگراموں میں کانگریس کے ریاستی صدر جی اے میر اور دیگر لیڈران جو کہ راہل گاندھی اور سونیا گاندھی کے کافی قریب سمجھے جاتے ہیں ، ان پروگراموں سے دور ہی رہے ۔ ان تمام چیزوں سے اس بات کو مزید تقویت مل رہی ہے کہ کانگریس کے اندر سب کچھ ٹھیک ٹھاک نہیں ہے ۔ اس درمیان کچھ لوگ یہ بھی کہہ رہے ہیں کہ غلام نبی آزاد کوئی نئی پارٹی بنا سکتے ہیں یا بی جے پی کے ساتھ جاسکتے ہیں ۔ حالانکہ اس حوالے سے ابھی کوئی ٹھوس بات سامنے نہیں آئی ہے ۔ لیکن ایک بات طے ہے کہ اپنے تین روزہ دورے سے غلام نبی آزاد نے کانگریس کی آپسی رسہ کشی اور بغاوت کی ایک نئی بنیاد رکھی ہے ۔

جہاں تک راہل گاندھی کا تعلق ہے G23 لیڈران ان کے خلاف ہی بول رہے ہیں ۔ کیرالہ کے لوگوں کی سوچ و سمجھ کے  حوالے سے راہل گاندھی کے بیان کے حوالے سے کپل سبل اور غلام نبی آزاد کا کہنا تھا کہ ہندوستان کے ہر حصے اور علاقے میں لوگوں کی سوچ و سمجھ صحیح ہے اور اس سوچ سمجھ کو ہمیں علاقوں اور خطوں میں نہیں باٹنا چاہئے اور یوں ان دونوں لیڈران نے راہل گاندھی کے بیان کو ہدف تنقید بنایا ۔ اس طرح غلام نبی آزاد کے جموں دورے اور کانگریس سے ان کی بڑھتی دوری کے آنے والے دنوں میں مزید طول پکڑنے کے آثار ہیں ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Feb 27, 2021 10:44 PM IST