உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بدعنوانی کے خلاف جموں و کشمیر سرکار کی بڑی کارروائی ، 8 افسران برخاست ، جانئے پورا معاملہ

    بدعنوانی کے خلاف جموں و کشمیر سرکار کی بڑی کارروائی ، 8 افسران برخاست ، جانئے پورا معاملہ (FILE PHOTO)

    بدعنوانی کے خلاف جموں و کشمیر سرکار کی بڑی کارروائی ، 8 افسران برخاست ، جانئے پورا معاملہ (FILE PHOTO)

    J&K government sacked Corrupt Officers: سبھی آٹھ افسران کو بدعنوانی اور خراب رویہ کے الزم میں برخاست کیا گیا ہے ۔ سبھی ملازمین کو جموں و کشمیر سول سروسز ایکٹ کے آرٹیکل 226 (2) (article 226 (2) of the Jammu Kashmir Civil Service Regulations) کے تحت نکالا گیا ہے ۔

    • Share this:
      سری نگر : جموں و کشمیر سرکار کے آٹھ 'داغی' افسران کو جمعرات کو برخاست کردیا گیا ۔ یہ کارروائی بدعنوانی کے خلاف انتظامیہ کی زیرو ٹالرینس پالیسی (zero-tolerance policy against corruption) کے تحت کی گئی ہے ۔ سبھی آٹھ افسران کو بدعنوانی اور خراب رویہ کے الزم میں برخاست کیا گیا ہے ۔ سبھی ملازمین کو جموں و کشمیر سول سروسز ایکٹ کے آرٹیکل 226 (2) (article 226 (2) of the Jammu Kashmir Civil Service Regulations)  کے تحت نکالا گیا ہے ۔

      جموں و کشمیر سرکار نے رویندر کمار بھٹ ، محمد قاسم وانی ، نور عالم ، محمد مجیب الرحمان ، ڈاکٹر فیاض احمد ، غلام محی الدین ، راکیش کمار ، پرشوتم کمار کو سروس سے برخاست کیا ہے ۔ اس سے پہلے 16 اکتوبر کو پاکستان حامی سید علی شاہ گیلانی کے پوتے اور ڈوڈہ کے ایک ٹیچر کو جموں و کشمیر میں دہشت گردوں کا مبینہ طور پر ساتھ دینے کے الزام میں سرکاری نوکری سے برخاست کردیا گیا تھا ۔

      لیفٹیننٹ گورنر نے انہیں آئین کے آرٹیکل 311 (2) میں حاصل خصوصی اختیارات کے تحت حقائق اور حالات کی جانچ پڑتال کرنے کے بعد برخاست کیا تھا ۔ آئین کے اس آرٹیکل کے تحت برخاست کئے گئے ملازمین اپنی برخاستگی کو صرف جموں و کشمیر ہائی کورٹ میں چیلنج کرسکتے ہیں ۔

      جموں و کشمیر میں زرعی زمین باہر کا کوئی شخص خرید نہیں سکتا: لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا

      ادھر لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا کہ جموں و کشمیر کی ایک انچ زرعی زمین بھی باہر کے کسی شخص کو نہیں دی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یونین ٹریٹری کے نئے اراضی قوانین کے مطابق یہاں زرعی زمین کوئی باہر کا شخص خرید نہیں سکتا ہے اور اگر کوئی خرید سکتا ہے تو اس کا کسان ہونا ضروری ہے۔ لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے یہ باتیں جمعرات کو یہاں شہرہ آفاق ڈل جھیل کے کناروں پر واقع شیر کشمیر انٹرنیشنل کنونشن کمپلیکس میں منعقدہ 'ایپل فیسٹول' کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہیں۔

      انہوں نے کہا کہ 'بڑا شور ہو رہا ہے کہ یہاں کی زمین باہر والوں کو دی جا رہی ہے۔ میں آپ سب سے پوچھنا چاہتا ہوں کہ کسی بھی گائوں میں اگر کسی کی ایک انچ زمین کسی باہر کے آدمی کو دی گئی ہے تو مہربانی کر کے ہمیں بتائیں'۔ لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ میں یہ بات ذمہ داری سے کہنا چاہتا ہوں کہ کسی بھی کسان کی ایک انچ زمین بھی باہر کے کسی شخص نے نہیں لی ہے۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: