ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر : بید بافی کے فن کو آج بھی کچھ لوگ رکھے ہوئے ہیں زندہ

غلام محمد گورو بید کی ٹوکریاں بنانے کے علاوہ گھاس سے بنائی جارہی حصیر یعنی چٹائی جسے کشمیری میں عرف عام وَگُو کہتے ہیں ، بھی بناتے ہیں ۔ تاہم یہ کام اب زوال پذیر ہو رہا ہے ۔

  • Share this:
جموں و کشمیر : بید بافی کے فن کو آج بھی کچھ لوگ رکھے ہوئے ہیں زندہ
جموں و کشمیر : بید بافی کے فن کو آج بھی کچھ لوگ رکھے ہوئے ہیں زندہ

وادی کشمیرمیں ہاتھوں سے بنائی جارہی بید کی ٹوکریاں اور  دیگراشیا بنانے کےفن کے ساتھ آج بھی کچھ لوگ منسلک ہیں ۔ خواجہ باغ مَلورہ شالہ ٹینگ سرینگرسے تعلق رکھنے والےغلام محمد پچھلے پینتیس سالوں سے اس کام کے ساتھ منسلک ہیں ۔ یہ علاقہ بید بافی یعنی بید کی ٹوکریاں بنانے والے کاریگروں کا ایک مرکز مانا جاتا ہے ۔ وادی کشمیردنیا بھر میں دست کاری کی صنعت میں کافی مشہور ہے ۔ یہاں قدیم دور سے ہی دست کاری کے ہر میدان میں کاریگروں نے اپنا لوہا منوایا اور دنیا بھر میں ایک الگ پہچان قائم کی ۔ ٹیکنالوجی کے بڑھتے رجحان کے باوجود بھی کشمیر میں دست کار مختلف قسم کی کاریگری اور فن کاری میں اپنی الگ پہچان قائم کئے ہوئے ہیں ۔


غلام محمد گورو بید کی ٹوکریاں بنانے کے علاوہ گھاس سے بنائی جارہی حصیر یعنی چٹائی جسے کشمیری میں عرف عام وَگُو کہتے ہیں ، بھی بناتے ہیں ۔ تاہم  یہ کام اب زوال پذیر ہو رہا ہے ۔ غلام محمد گورو نے نیوز 18 اردو کو بتایا کہ آہستہ آہستہ حالات کے تبدیل ہونے سے یہ صنعت بھی روبہ زوال ہوگئی ۔ اس کی مثال اس بات سے لگائی جائے کہ پہلے دنیا بھرکے سیاح ان چیزوں کو کشمیر کی نشانی اور نمونے کے طور پر شوق سے خرید تے تھے ۔ اب اس میں بھی بہت زیادہ کمی آئی ہے ۔ غلام محمد گورو مختلف ڈیزائنوں کے ساتھ مختلف ٹوکریاں ، کرسیاں ، گملے اور دیگر اقسا م کے اشیا بناتے ہیں ۔




غلام محمد نے نیوز 18 اردو کو بتایا کہ نئی نسل کے جوان اس دست کاری کو سیکھنے میں ہتک محسوس کرتے ہیں ۔ انہوں نے مزید بتایا کہ نئی نسل اگر یہ کام سیکھ لیتی ، تو وہ اپنے پاوں پر کھڑا ہو کر اپنا روزگارخود ہی پیدا کرسکتی ہے ۔ غلام محمد گورو شالہ ٹینگ سرینگر سے درجن بھر مختلف اقسام کی ٹوکریاں اپنے گدھے پر لاد  کرروزانہ تیس چالیس کلومیٹر کی مسافت طے کر کے مختلف علاقوں اور گاؤں دیہات میں جاکر فروخت کرکے اپنی روزی روٹی کماتے ہیں ۔

ضلع گاندربل میں بید نکلنے کے درخت اگائے جاتے ہیں ۔ دست کار بید کی ٹوکریاں اور دیگر اشیا بنانے کے لئے ضلع گاندر بل سے بید کی لکڑی حاصل کرتے ہیں ۔ بید کی ٹوکریاں بنانا ایک محنت طلب کام ہے ۔ بید کی لکڑی کو پہلے بھگونے ، خشک کرنے اوررنگنے کا کام کیا جاتا ہے۔ اس کے بعد تیار ہوچکی بید کی ان تیلیوں سے مختلف ڈیزائن کی ٹوکریاں اور دیگرچیزیں بنائی جاتی ہیں ۔ غلام محمد کا کہنا ہے کہ انہوں نے اسی روزگار سے اپنے پانچ بچوں کو اعلی تعلیم سے آراستہ کرایا ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 19, 2020 05:13 PM IST