اپنا ضلع منتخب کریں۔

    J&K News : دہشت گردی کو ختم کرنے کیلئے حفاظتی ایجنسیوں کی اہم میٹنگ ، پاکستان کے ناپاک منصوبوں کو ناکام بنانے کیلئے وضع کی گئی حکمت عمل

    Jammu and Kashmir News : میٹنگ میں پاکستان کی جانب سے دہشت گردوں کو کنٹرول لائن اور سرحد کے اس پار داخل کرنے ڈرونز کے ذریعے ہتھیار اور منشیات بھیجنے کی کوششوں کو ناکام بنانے کے لیے کئے جانے والے احتیاطی تدابیر کے بارے میں تفصیلی غور وخوض کیا گیا۔ مشترکہ اجلاس میں پاکستان کی جانب سے جموں وکشمیر بالخصوص جموں خطے میں دہشت گردی کو بڑھاوا دینے کی سازشوں کو ناکام بنانے کے لیے نئی حکمت عملی وضع کی گئی ۔

    Jammu and Kashmir News : میٹنگ میں پاکستان کی جانب سے دہشت گردوں کو کنٹرول لائن اور سرحد کے اس پار داخل کرنے ڈرونز کے ذریعے ہتھیار اور منشیات بھیجنے کی کوششوں کو ناکام بنانے کے لیے کئے جانے والے احتیاطی تدابیر کے بارے میں تفصیلی غور وخوض کیا گیا۔ مشترکہ اجلاس میں پاکستان کی جانب سے جموں وکشمیر بالخصوص جموں خطے میں دہشت گردی کو بڑھاوا دینے کی سازشوں کو ناکام بنانے کے لیے نئی حکمت عملی وضع کی گئی ۔

    Jammu and Kashmir News : میٹنگ میں پاکستان کی جانب سے دہشت گردوں کو کنٹرول لائن اور سرحد کے اس پار داخل کرنے ڈرونز کے ذریعے ہتھیار اور منشیات بھیجنے کی کوششوں کو ناکام بنانے کے لیے کئے جانے والے احتیاطی تدابیر کے بارے میں تفصیلی غور وخوض کیا گیا۔ مشترکہ اجلاس میں پاکستان کی جانب سے جموں وکشمیر بالخصوص جموں خطے میں دہشت گردی کو بڑھاوا دینے کی سازشوں کو ناکام بنانے کے لیے نئی حکمت عملی وضع کی گئی ۔

    • Share this:
    Jammu and Kashmir News : پاکستان کی جانب سے جموں و کشمیر میں دہشت گردی کی کاروائیاں انجام دینے اور کنٹرول لائن نیز بین الاقوامی سرحد پر دہشت گردوں کی دراندازی کو ناکام بنانے کے لئے فوج سمیت دیگر حفاظتی ایجنسیاں کوشاں ہیں ۔ ایک جانب جہاں فوج اور سرحدی حفاظتی فورس پاکستان کے ناپاک عزائم کو ناکام کرنے کے لئے کنٹرول لائن اور بین الاقوامی سرحد پر چوکس ہیں تو وہیں دوسری جانب جموں وکشمیر پولیس سی آر پی ایف اور فوج رہائشی علاقوں میں دہشت گردوں کے خلاف کامیاب آپریشن مشترکہ طور پر انجام دیتے رہے ہیں۔ حفاظتی ایجنسیوں کے مابین بہتر تال میل کو یقینی بنانے کے لیے وقتاً فوقتاً ان ایجنسیوں کے درمیان مشترکہ میٹنگوں کا انعقاد ہوتا رہا ہے۔ ایسی ہی ایک میٹنگ آج جموں خطے کے ٹائیگر ڈویژن میں منعقد ہوئی۔

    میٹنگ میں دہشت گردی مخالف تمام حفاظتی ایجنسیوں اور انٹیلیجنس کے اعلیٰ افسران نے شرکت کی۔ میٹنگ کی مشترکہ صدارت جنرل آفیسر کمانڈنگ رائزنگ اسٹار کور پی این اننت نارائن اور ڈی جی پی جموں وکشمیر دلباغ سنگھ نے کی۔ میٹنگ میں پاکستان کی جانب سے دہشت گردوں کو کنٹرول لائن اور سرحد کے اس پار داخل کرنے ڈرونز کے ذریعے ہتھیار اور منشیات بھیجنے کی کوششوں کو ناکام بنانے کے لیے کئے جانے والے احتیاطی تدابیر کے بارے میں تفصیلی غور وخوض کیا گیا۔ مشترکہ اجلاس میں پاکستان کی جانب سے جموں وکشمیر بالخصوص جموں خطے میں دہشت گردی کو بڑھاوا دینے کی سازشوں کو ناکام بنانے کے لیے نئی حکمت عملی وضع کی گئی ۔

    اس موقع پر بتایا گیا کہ تمام حفاظتی ایجنسیوں کے درمیان قریبی تال میل ہے جس سے جموں وکشمیر کے عام لوگوں کو دہشت گردوں کی کارروائیوں سے محفوظ رکھا جا سکتا ہے۔ چنانچہ حفاظتی عملے کے اہلکار تمام دیہات میں ہر وقت موجود نہیں رہ سکتے ، لہذا دہشت گردوں کی سرگرمیوں کو روکنے کے لئے ان دیہات میں ویلیج ڈیفنس کمیٹیاں قائم کی گئی ہیں۔ اپنے علاقوں کو دہشت گردی سے پاک رکھنے کے لیے ان دیہات کے مکینوں کو ولیج ڈیفنس کمیٹی کے ممبران کو رضاکارانہ طور پر منتخب کیا جاتا ہے اور انہیں دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے درکار ہتھیار بھی فراہم کئے جاتے ہیں۔

    ولیج ڈیفنس کمیٹی کے ممبران ان ہتھیاروں کو دہشت گردوں کے خلاف بہتر طور پر استعمال کرسکیں ، اس کے لئے انہیں ہتھیار چلانے کی تربیت بھی فراہم کی جاتی ہے۔ اسی طریقے کا ایک کیمپ آج پونچھ میں ایک تربیتی کیمپ منعقد ہوا۔ جس کے دوران فوج نےولیج ڈیفنس کمیٹی (وی ڈی سی) کے اراکین کے ساتھ ایک انٹرایکٹو ورکشاپ کا اہتمام کیا۔ ورکشاپ کے دوران، اراکین نے دہشت گردوں سے نمٹنے کے لئے ہتھیاروں کی ضروری تربیت حاصل کی۔

    ہندوستانی فوج نے وی ڈی سی کے تمام ممبران کو اپنی دفاعی صلاحیتوں میں مزید بہتری لانے کی تربیت فراہم کی اور گاؤں کی دفاعی کمیٹی کے کردار پر زور دیا۔ ورکشاپ کے ایک حصے کے طور پر ہتھیاروں کی صفائی اور ان کی مرمت پر ایک لیکچر بھی دیاگیا۔ اس تقریب وی ڈی سی ممبران پر زور دیاگیا کہ وہ نوجوانوں کو دفاعی خدمات میں شامل ہونے اور منشیات سے دور رہنے کی ترغیب دیں۔ ورکشاپ کے دوران ممبران کی بڑی تعداد موجود تھی۔

    واضح رہے کہ ولیج ڈیفنس کمیٹیوں نے ماضی میں بھی جموں اور چناب ویلی خطے میں دہشت گردی کو ختم کرنے میں اہم رول ادا کیا ہے۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: