ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر : کشمیری مہاجرین کی وادی واپسی کیلئے ایل جی منوج سنہا نے تیز کی کوششیں، کئے کئی اہم فیصلے

Jammu and Kashmir News : ایل جی کی طرف سے کشمیری مہاجرین کے لئے اس اعلی سطحی میٹنگ کے انعقاد اور پھر اس میں کئے گئے فیصلوں کا کشمیری پنڈتوں نے خیر مقدم کیا ہے۔

  • Share this:
جموں و کشمیر : کشمیری مہاجرین کی وادی واپسی کیلئے ایل جی منوج سنہا نے تیز کی کوششیں، کئے کئی اہم فیصلے
جموں و کشمیر : کشمیری مہاجرین کی وادی واپسی کیلئے ایل جی منوج سنہا نے تیز کی کوششیں، کئے کئی اہم فیصلے

جموں : جموں و کشمیر کی ایل جی انتظامیہ نے حال ہی میں کشمیری مہاجرین کے متعلق ایک اعلی سطحی میٹنگ کا انعقاد کیا ۔ 17 جولائی کو سرینگر میں منعقد ہوئی اس میٹنگ کی صدارت ایل جی منوج سنہا نے کی ۔ اس میٹنگ میں کشمیری مائیگرنٹوں کو درپیش مشکلات کے بارے میں غور و خوض کی گیا۔ سب سے بڑا معاملہ ان کی وادی واپسی ہی رہا ، جس سے متعلق میٹنگ میں کئی فیصلے کئے گئے۔ وادی میں پی ایم پیکیج کے تحت کام کر رہے ملازمین کے بارے میں  بھی کی فیصلے کئے گئے۔ میٹنگ میں ایل جی نے حکم جاری کیا کہ چھ ہزار ٹرانزٹ فلیٹس کی تعمیر کے کام کو جلد مکمل کیا جائے۔ کولگام میں تین سو چار، بڈگام میں 96 اور گاندربل، شوپیاں، بانڈی پورہ ، بارہمولہ اور کپواڑہ میں ایسے بارہ سو ٹرنزٹ فلیٹس پر کام اس وقت جاری ہے۔ گاندربل میں یہ فلیٹس نومبر دو ہزار اکیس اور باقی مقامات پر یہ فلیٹس نومبر دو ہزار بائیس تک مکمل کئے جانے کی میٹنگ میں ایل جی نے ہدایات جاری کیں۔ ایک اور اہم فیصلے میں یہ بھی کہا گیا کہ سبھی مہاجرین کے ریلیف محکمہ میں رجسٹریشن کو یقینی بنایا جائے۔ ایل جی کا کہنا تھا کہ جب سبھی مہاجرین کا رجسٹریشن ہوگا ، تبھی سرکار ان کی وادی واپسی سے متعلق ایک جامع پالسی مرتب کر پائے گی۔ ایل جی نے یہ بھی کہا کہ کشمیری پنڈتوں کی گھر واپسی کے لئے سرکار کوئی بھی کسر باقی نہیں چھوڑے گی اور ان کی بحفاظت  گھر واپسی کا عمل جلد شروع کیا جائے گا۔


ایل جی کی طرف سے کشمیری مہاجرین کے لئے اس اعلی سطحی میٹنگ کے انعقاد اور پھر اس میں کئے گئے فیصلوں کا کشمیری پنڈتوں نے خیر مقدم کیا ہے۔ کشمیری پنڈت لیڈر اور سماجی کارکن اشونی چرنگو نے ایل جی کی طرف سے لئے گئے فیصلوں کا خیر مقدم کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ مودی سرکار اور جموں و کشمیر کی سرکار اب کشمیری پنڈتوں کی وادی واپسی کے لئے سنجیدہ لگ رہی ہے۔ ان کا مطالبہ ہے کہ سرکار وادی میں لوگوں کو واپس بھیجنے سے پہلے ایک جامع منصوبہ مرتب کرے۔ انہوں نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ سرکار مہاجرین کے لئے ریاستی اسمبلی اور پارلیمنٹ میں کچھ سیٹیں ریزرو کرے اور ان کو سیاسی طور پر با اختیار بنانے کے لئے کوشش تیز کرے ۔ چرنگو نے یہ بھی کہا کہ  گزشتہ تین دہائیوں سے بے گھر ہوئے مہاجرین کی باز آباد کاری کے لئے قدم اٹھائے جانے چاہئے تھے ۔ تاکہ ان کی گھر واپسی کا خواب شرمندہ تعبیر ہوتا۔


یوتھ آل انڈیا کشمیری سماج کے صدر آر کے بٹ کا کہنا ہے کہ سرکار کو ایک اپیکس کمیٹکی کا قیام عمل میں لانا چاہئے ، جس میں سبھی کشمیری پنڈت لیڈران کو شامل کیا جانا چاہئے اور اس کمیٹی سے بات کرکے ہی مائیگرنٹوں کی باز آبادکاری کا پلان مرتب کیا جانا چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ کمیٹی وزیر داخلہ امت شاہ کی زیر نگرانی ہونی چاہئے ۔ آر کے بٹ نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ سرکار کو مائیگرنٹوں کی وادی واپسی سے پہلے ایسا ماحول بنانا ہوگا ۔ تاکہ واپس جانے والے مائیگرنٹ کسی خوف کے بغیر وہاں قیام کرسکیں ۔


جگی مائیگرنٹ ٹینمینٹ کمیٹی کے صدر شادی لعل پنڈتا کا کہنا ہے کہ سرکار کو چاہئے کہ وہ  پہلے کشمیر وادی میں مائیگرنٹوں کی زمین اور جائیداد کی بحالی کو یقینی بنائیں اور اس کے ساتھ ساتھ فی مہاجر خاندان کے ایک شخص کو سرکاری نوکری فراہم کی جائے ۔ ان کا کہنا ہے کہ کشمیری پنڈت مالی طور پر بہت غریب ہیں اور ایسے میں سرکار کی ذمہ داری ہے کہ وہ ان کو کشمیر میں زمین خریدنے اور مکان تعمیر کرنے کے لئے مالی پیکیج جاری کرے ۔ ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ واپسی سے پہلے کشمیری پنڈتوں سے صلاح مشورہ لازمی ہے ۔ تاکہ آگے کا منصوبہ مرتب کیا جاسکے۔

ادھر پنُن کشمیر کے چیئرمین اگنی شیکھشر کا کہنا ہے کہ یہ سب وعدے کھوکھلے لگ رہے ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ پنڈتوں کی وادی واپسی اتنی آسان نہیں ہے ، جتنا لگ رہا ہے ۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ وادی میں الگ سے کشمیری پنڈتوں کے لئے پنُن کشمیر کا قیام عمل میں لایا جائے ۔ تاکہ کشمیری پنڈتوں کو پھر سے وادی نہ چھوڑنا پڑے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 22, 2021 06:39 PM IST