உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کشمیر میں قومی اردو سائنس کانگریس کا انعقاد ، ماہرین کا بہتر سائنسی مواد مہیا کرنے پر زور

    کشمیر میں قومی اردو سائنس کانگریس کا انعقاد ، ماہرین کا بہتر سائنسی مواد مہیا کرنے پر زور

    کشمیر میں قومی اردو سائنس کانگریس کا انعقاد ، ماہرین کا بہتر سائنسی مواد مہیا کرنے پر زور

    Jammu and Kashmir News : کشمیر میں اپنی نوعیت کی پہلی اردو سائنس کانگریس منعقد کی گئی ۔اس پروگرام میں ماہرین نے اردو سے دوری اور سائنسی علوم میں مواد کی کمی کو ایک بڑا چلینج قرار دیا ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
    سرینگر : 2021 وگیان پرسار کی جانب سے آج سرینگر میں قومی اردو سائنس کانگریس منعقد کی گئی ۔ سنٹرل یونیورسٹی کشمیر کے اشتراک سے منعقدہ اس کانگریس میں ملک بھر سے آئے کئی ماہرین نے شرکت کی ۔ اردو کانگریس کا مقصد اردو زبان میں سائنس کی ترویج اور توسیع ہے ۔ وگیان پرسار کے ڈائریکٹر ڈاکٹر نکل پراشر کا کہنا ہے کہ وگیان پرسار سائنس عام لوگوں تک پہنچانے کے لئے ایک بڑے پروجیکٹ پر کام کررہا ہے اور اردو سائنس کی ترسیل اور ترویج کا ایک بہتر ذریعہ ہے۔ انھوں نے کہا کہ اردو میں سائنس کا بہتر مواد فراہم کرنے کی ایک مہم جاری ہے اور اس کے تحت سائنس کمیونیکیشن کا ایک مضمون متعارف کیا جائے گا۔

    اس موقع پر مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی کے وائس چانسلر سید عین الحسن سے جب پوچھا گیا کہ آخر اردو سائنس کے شعبے میں اب پیچھے کیوں ہوگئی تو انھوں نے مانا کہ تراجم کم ہوئے ہیں ، جس کی وجہ سے سائنس کا مواد اردو میں کم منتقل ہوا۔ انہوں نے لیکن کہا کہ نئی تعلیمی پالیسی اب مادری زبانوں میں تعلیم پر زور دے رہی ہے لہذا اب بہتر تعلیمی مواد فراہم ہونے کے امکانات بڑھ گئے ہیں ۔ کئی اردو جرائد کے مصنف اور سابق وائس چانسلر پروفیسر محمد اسلم پرویز کا کہنا ہے کہ اردو کی تعلیم سے دوری سائنس اور دیگر جدید علوم سے دوری کی وجہ بن رہی ہئے۔

    پروفیسر اسلم کہتے ہیں کہ اب عالم یہ ہے کہ سائنس والے اردو نہیں جانتے اور اردو جاننے والے اردو سے نابلد ہیں ۔ اردو کانگریس کے دوران گجر بکروال طبقے کے بچوں کی تعلیم کے لئے تعینات موبائل اساتذہ کی تربیت کے لئے بھی ایک پروگرام منعقد کیا گیا۔ کچھ ماہرین نے نئی سائنس پالیسی کے تحت اردو صحافیوں کو سائنس اور دیگر علوم کی رپورٹنگ کے لئے تربیتی کورس منعقد کروانے پر بھی زور دیا۔

    ان کا کہنا تھا کہ سائنسی علوم کی اردو صحافت میں خاص طور سے بہت کم کوریج ملتی ہے۔ دو دن کی یہ کانفرنس کل اختتام پذیر ہوگی ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: