உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں و کشمیر کی متعدد جماعتیں غیر مقامی ووٹرز کو لسٹ میں شامل کرنے کی مخالف، آخرکیاہےوجہ؟

    آل پارٹی میٹنگ منعقد کی گئی۔ (تصویر ٹوئٹر Mohit Kandhari)

    آل پارٹی میٹنگ منعقد کی گئی۔ (تصویر ٹوئٹر Mohit Kandhari)

    Jammu and Kashmir: سابق بی جے پی وزیر اور ڈوگرہ سوابھیمان سنگٹھن کے بانی چودھری لال سنگھ نے میٹنگ میں کہا ہے کہ ہم 2.5 ملین غیر مقامی ووٹرز کے مجوزہ اضافے سے متعلق ایک مسئلے پر متحد ہیں۔ ہم انہیں یہاں ووٹ ڈالنے کی اجازت نہیں دیں گے۔ اس پر کوئی دو رائے نہیں ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu | Hyderabad | Mumbai | Kolar | Lucknow
    • Share this:
      Jammu and Kashmir: جموں و کشمیر کی سیاسی جماعتیں ووٹنگ لسٹ میں تقریباً 2.5 ملین غیر مقامی لوگوں کو شامل کرنے کی مخالفت کررہی ہیں۔ جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ اور نیشنل کانفرنس کے رہنما فاروق عبداللہ (Farooq Abdullah) کی جانب سے منعقد کردہ ایک آل پارٹی میٹنگ میں کئی رہنماؤں نے مخالفت کی ہے۔

      فاروق عبداللہ نے آل پارٹی میٹنگ کے بعد جموں میں اپنی بھٹنڈی رہائش گاہ پر ایک میڈیا بریفنگ میں کہا کہ تمام سیاسی جماعتوں نے متفقہ طور پر فیصلہ کیا ہے کہ وہ جموں و کشمیر میں غیر مقامی لوگوں کو ووٹ دینے کے حق کو برداشت نہیں کریں گے۔ ہم اسے قبول نہیں کریں گے۔ ووٹ ڈالنا کا حق مقامی لوگوں کا حق ہے باہر والوں کو یہ حق حاصل نہیں ہے۔

      جموں و کشمیر کے چیف الیکٹورل آفیسر ہردیش کمار سنگھ نے 17 اگست کو ایک پریس کانفرنس میں اعلان کیا تھا کہ یکم اکتوبر 2022 کو ہر اس شخص کے لیے حتمی تاریخ کے طور پر سمجھا جائے گا جو 18 سال یا اس سے زیادہ ہے اور وہ جموں و کشمیر میں مقیم ہے۔ وہ ووٹر کے طور پر رجسٹر ہوسکتا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوگا کہ یونین ٹیریٹری میں بڑی تعداد میں غیر مقامی لوگوں کو ووٹنگ کا حق ملے گا۔

      یہ بھی پڑھیں:

      صدر جمہوریہ دروپدی مرمو نے کیا غلام علی کو Rajya Sabha کے لئے نامزد، کشمیر سے رکھتے ہیں تعلق

      عوامی نیشنل کانفرنس کے رہنما مظفر شاہ نے کہا کہ سیاسی جماعتیں اس لڑائی کو منطقی انجام تک پہنچانے کے لیے امکانات تلاش کررہی ہے اور اس کے لیے ایک کمیٹی بنائی گی۔ ہفتہ کی میٹنگ میں پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کی سربراہ اور سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی، جے اینڈ کے کانگریس کے صدر وقار رسول وانی اور کانگریس کے ورکنگ صدر و سابق وزیر رمن بھلا نے بھی شرکت کی۔
      یہ بھی پڑھیں:

      ملکہ برطانیہ الزبتھ دوم کے شوہر شہزادہ فلپ کا 99 برس کی عمر میں انتقال

      سابق بی جے پی وزیر اور ڈوگرہ سوابھیمان سنگٹھن کے بانی چودھری لال سنگھ نے میٹنگ میں کہا ہے کہ ہم 2.5 ملین غیر مقامی ووٹرز کے مجوزہ اضافے سے متعلق ایک مسئلے پر متحد ہیں۔ ہم انہیں یہاں ووٹ ڈالنے کی اجازت نہیں دیں گے۔ اس پر کوئی دو رائے نہیں ہے۔ سنگھ نے کہا کہ جموں میں مقیم جماعتوں کے کشمیر میں مقیم جماعتوں کے ساتھ اپنے اختلافات ہیں، لیکن غیر مقامی لوگوں کو ووٹ دینے کے مجوزہ حقوق کے مسئلہ نے ہمیں ایک متحد پلیٹ فارم پر لایا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: