ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر : سرکاری ملازمین کی برطرفی پر سیاست گرم ، محبوبہ مفتی نے دیا بڑا بیان، کہی یہ بات

Jammu and Kashmir News : پی ڈی پی صدر محبوبہ مفتی نے کہا کہ جموں و کشمیر کے لوگوں کو بلاوجہ تنگ کیا جارہا ہے ۔ انہوں نے سرکار کے اس حکم نامہ کو واپس لینے کی مانگ کی ہے۔

  • Share this:
جموں و کشمیر : سرکاری ملازمین کی برطرفی پر سیاست گرم ، محبوبہ مفتی نے دیا بڑا بیان، کہی یہ بات
جموں و کشمیر : 11 ملازمین کی برطرفی پر سیاست تیز ، محبوبہ مفتی نے دیا بڑا بیان، کہی یہ بات

جموں : جموں و کشمیر سرکار نے گزشتہ راز ایک فیصلہ کرتے ہوئے مزید 11 سرکاری ملازمین کو ملک کی سلامتی کے مفاد میں ملازمت سے فارغ کرنے کا حکم جاری کیا ۔ جن ملازمین کو سرکاری ملازمت سے فارغ کردیا گیا ہے ، ان میں حزب المجاہدین کے سرغنہ سید صلاح الدین کے دو بیٹے بھی شامل ہیں ۔ سرکار کا کہنا ہے کہ یہ ملازمین دہشت گردی کو فروغ دے رہے تھے اور سرکاری ملازمت کررہے تھے جو ناقابل برداشت ہے ۔ یہی نہیں جانکاری کے مطابق ایسے اور بھی کئی ملازمین ہیں ، جو دہشت گردوں کا ساتھ دے رہے ہیں اور ان کی فہرست بھی تیار ہو رہی ہے اور یہ سلسہ آگے بھی جاری رہے گا ۔ وہیں دوسری جانب اپوزشن پارٹیوں نے اس معاملہ اپنے شدید رد عمل کا اظہار کیا ہے اور فیصلہ کی تنقید کی ہے ۔


پی ڈی پی صدر محبوبہ مفتی نے کہا کہ جموں و کشمیر کے لوگوں کو بلاوجہ تنگ کیا جارہا ہے ۔ انہوں نے سرکار کے اس حکم نامہ کو واپس لینے کی مانگ کی ہے۔ ادھر نیشنل کانفرس کے ایک پریس بیان کے مطابق انہوں نے بھی اس فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے یہ کشمیری لوگوں کے ساتھ زیادتی ہے اور کشمیروں پر یہ کالے قانون تھوپے جارہے ہیں ۔ انہوں نے بھی اس فیصلہ کو واپس لینے کی مانگ کی ہے ۔


سی پی آیم نے بھی اپنا ردِ عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ایسے فیصلوں سے کشمیریوں کے دل نہیں جیتے جاسکیں گے اور فوراً یہ فیصلہ واپس لے جانا چاہئے ۔ کانگریس کے اعلی ترجمان رویندر شرما نے نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اگر کوئی بھی سرکاری ملازم ملک دشمن سرگرمیوں میں ملوث ہے تو ان کے خلاف ضروری قانونی کارروائی کی جانی چاہئے ۔


انہوں نے بتایا کہ یہ ملازمین کو سرکار کی نوکری کرنی چایئے نہ کہ دہشت گردوں کی اور انہیں سرکار کی جانب دی گئی گایئڈ لائنس پر عمل کرنا چاہئے ۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ اگر ایسے ملازمین کے خلاف پختہ ثبوت ملتے ہیں تو ہی ان کے خلاف کارروائی کی جانی چاہئے اور کسی بے قصور کو بلاوجہ نہیں پھنسایا جانا چاہئے۔

ادھر بی جے پی نے اس فیصلہ کی حمایت کی ہے ۔ پارٹی کے سینیر لیڈر کلویندر گپتا نے نیوز 18 کو بتایا کہ کچھ ملازمین نوے کی دہائی سے ملی ٹینسی کی حمایت کرتے آئے ہیں اور پہلے بھی کئی لوگوں کو ہٹایا گیا ہے اور دبارہ جو یہ قدم سرکار نے اٹھایا ہے ، یہ قابل ستائش ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جو بھی ملازم اس کام میں ملوث پایا جائے ، ان کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جانی چاہئے ۔ انہوں کہا کہ صلاح الدین ایک بین الاقوامی دہشت گرد ہے اور اس کے بیٹے ملک دشمنی میں سرگرم تھے ۔

بتادیں کہ لیفٹیننٹ گورنر نے گزشتہ ماہ بھی پانچ کشمیری سرکاری ملازمین بشمول ایک اسسٹنٹ پروفیسر، ایک نائب تحصیلدار اور تین اساتذہ کو ملازمت سے فارغ کر دیا تھا۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 11, 2021 10:33 PM IST