உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    J&K News : ڈل جھیل میں آلودگی کا معاملہ ، ہاوس بوٹس سے نکلنے والی گندگی روکنے کا نیا منصوبہ شروع

    J&K News : ڈل جھیل میں آلودگی کا معاملہ ، ہاوس بوٹس سے نکلنے والی گندگی روکنے کا نیا منصوبہ شروع

    J&K News : ڈل جھیل میں آلودگی کا معاملہ ، ہاوس بوٹس سے نکلنے والی گندگی روکنے کا نیا منصوبہ شروع

    Jammu and Kashmir: کشمیر کے ہاوس بوٹس سے نکلنے والی گندگی کو ڈل جھیل (Dal Lake) میں جانے سے روکنے کے لئے کئی ناکام تجربوں کے بعد اب ایک نیا پروجیکٹ شروع کیا گیا ہے۔ اس کے تحت ہاوس بوٹس کو سِیور لائن یعنی گٹر لائن کے ساتھ جوڑ دیا جارہا ہے۔

    • Share this:
    سری نگر : کشمیر (Jammu and Kashmir) کے ہاوس بوٹس سے نکلنے والی گندگی کو ڈل جھیل (Dal Lake) میں جانے سے روکنے کے لئے کئی ناکام تجربوں کے بعد اب ایک نیا پروجیکٹ شروع کیا گیا ہے۔ اس کے تحت ہاوس بوٹس کو سِیور لائن یعنی گٹر لائن کے ساتھ جوڑ دیا جارہا ہے۔ یہ کام جھیل کے حضرت بل والے حصے یعنی نگین میں شروع کیا گیا ہے۔ اس منصوبہ پر لیکس کنزرویشن اتھاریٹی کے وائس چیئرمین بشیر احمد کا کہنا ہے کہ اسرو کی طرف سے بائیو ڈایجسٹر  نصب کرنے کے پائلٹ پراجیکٹ کے بعد پتہ چلا کہ یہ پروگرام کارگر نہیں رہا ، لہذا ہاوس بوٹس سے ہونے والی آلودگی کو ختم کرنے کے لئے یہ منصوبہ شروع کیا گیا ہے۔

    منصوبے کی تفصیلات بتاتے ہوئے ایگزیکٹیو انجینئر محمد اشرف بابا کہتے ہیں کہ دو یا تین ہاوس بوٹوں کے پاس موجود زمین میں گہرے ٹرنچ بنائے جارہے ہیں جن میں ان سے نکلنے والی گندگی جمع ہوگی اور اس کے بعد اس گندے مواد کو موٹرس کے ذریعہ پہلے سے موجود سِیور لائن میں ڈالا جارہا ہے اور پھر اس پانی کو کنارے میں نصب سیویج ٹریٹمنٹ پلانٹ کے ذریعہ صاف کرکے باہر ڈالا جائے گا۔ لیکس کنزرویشن اتھاریٹی کے اس منصوبہ پر ہاوس بوٹ مالکان فی الحال مطمئن دکھائی دے رہے ہیں۔

    راشد احمد نامی ایک ہاوس بوٹ مالک نے کہا کہ منصوبہ اچھا ہے اور کام کی رفتار بھی اچھی ہے ، لیکن یہ کتنا کارگر ثابت ہوگا یہ بعد میں پتہ چلے گا۔ ادھر اس پروجیکٹ کو لیکر کچھ ماہرین خوش نہیں ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ اب عدالت کے اُس حکم نامہ پر عمل نہیں ہوگا ، جس کے تحت ہاوس بوٹس کو پیچھے لے جاکر ایک قطار میں لگایا جائے گا۔ یہ حکم نامہ برسوں سے عمل کے انتظار میں ہے۔ اب جبکہ ہاوس بوٹس کے ساتھ ہی یہ ٹرنچ بنائے جارہے ہیں تو اس کا مطلب صاف ہے کہ انھیں اپنی جگہ سے ہٹانے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

    دوسری طرف انتظامیہ نے اب جھیل کے اندرونی علاقے میں آباد لوگوں کو منتقل کرنے اور ان کی بازآبادکاری کے معاملہ میں تقریبا ہاتھ کھڑے کردئے ہیں۔ ان لوگوں کی بازآبادکاری انتظامیہ کیلئے برسوں سے گلے کی ہڈی بن گیا ہے۔ کچھ لوگوں کو جھیل سے منتقل کردیا گیا لیکن اُن کی صحیح بازآبادکاری نہیں کی جاسکی ہے ۔ اس عمل میں خرد برد کے الزامات لگے ہیں اور اینٹی کرپشن بیورو کی تحقیقات جاری ہے۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: