ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر: اسمبلی سیٹوں کی نئے سرے سے حد بندی کرنےکا عمل جاری، ڈی لیمٹیشن کمیشن کر رہا ہے اپنا کام

جموں کشمیرمیں اسمبلی انتخابات سےقبل اسمبلی سیٹوں کی ازسر نو حد بندی کا عمل جاری ہے۔ ڈیلیمٹیشن کمشن نے اپنا کام شروع کیا ہے اور اس سلسلے میں دہلی میں کئی میٹنگیں منقعد ہوچکی ہیں اور اب انتظار ہےکہ کب کمیشن کا چیئرمین اور اس کے ممبران جموں وکشمیرکا دورہ کرکے یہاں حالات کا جائزہ لیں گے۔

  • Share this:
جموں وکشمیر: اسمبلی سیٹوں کی نئے سرے سے حد بندی کرنےکا عمل جاری، ڈی لیمٹیشن کمیشن کر رہا ہے اپنا کام
جموں وکشمیر: اسمبلی سیٹوں کی نئے سرے سے حد بندی کرنےکا عمل جاری، ڈی لیمٹیشن کمیشن کر رہا ہے اپنا کام

جموں: جموں کشمیر میں اسمبلی انتخابات سے قبل اسمبلی سیٹوں کی ازسرنو حد بندی کا عمل جاری ہے۔ ڈیلیمٹیشن کمشن نے اپنا کام شروع کیا ہے اور اس سلسلے میں دہلی میں کئی میٹنگیں منقعد ہوچکی ہیں اور اب انتظار ہےکہ کب کمیشن کا چیئرمین اور اس کے ممبران جموں وکشمیرکا دورہ کرکے یہاں حالات کا جائزہ لیں گے۔ بعد میں نئی سیٹوں کی تشکیل ہوگی۔ مرکزی سرکار نے بھروسہ دلایا ہے کہ ڈیلیمٹیشن کے بعد ہی جموں کشمیر میں الیکشن منعقد کئے جائیں گے۔ جموں کشمیر کی سیاسی پارٹیاں جن میں  بی جے پی، کانگریس اور دیگر پارٹیاں  شامل ہیں، اب اس انتظار میں ہیں کہ ڈیلیمٹیشن کمشن یہاں کب اپنا کام ختم کرے گا اور از سر نو سیٹوں کی حد بندی ہوگی تاکہ یہاں الیکشن منعقد کئے جائیں۔


جموں وکشمیر اور باقی ریاستوں میں مقیم 8 لاکھ کے قریب کشمیری پنڈتوں نے اب کمشین کے چیئرمین سے مطالبہ کیا ہے کہ پنڈتوں کے لئے بھی جموں کشمیر میں دو سے پانچ سیٹوں کو محفوظ کیا جائے۔ پنڈتوں کی کچھ انجمنوں کا کہنا ہے کہ اگرچہ مائیگریشن کے بعد انہیں سخت مشکلات جھیلنے پڑے ہیں اور اب وہ بھی چاہتے ہیں کہ انہیں بھی سیاسی طاقت دی جائے اور ان کے لئے کچھ سیٹیں مختص رکھی جائیں۔ ان کا کہنا ہے کہ پچھلے 30 سالوں سے پنڈت طبقے کے لوگ در درکی ٹھوکریں کھا رہے ہیں، انہیں اب امید ہےکہ مرکزی سرکار پنڈت طبقے کو نظر انداز نہیں کرے گی، انہیں سیاسی پلیٹ فارم مہیا کیا جائے گا۔


 جموں وکشمیر اور باقی ریاستوں میں مقیم 8 لاکھ کے قریب کشمیری پنڈتوں نے اب کمشین کے چیئرمین سے مطالبہ کیا ہے کہ پنڈتوں کے لئے بھی جموں کشمیر میں دو سے پانچ سیٹوں کو محفوظ کیا جائے۔

جموں وکشمیر اور باقی ریاستوں میں مقیم 8 لاکھ کے قریب کشمیری پنڈتوں نے اب کمشین کے چیئرمین سے مطالبہ کیا ہے کہ پنڈتوں کے لئے بھی جموں کشمیر میں دو سے پانچ سیٹوں کو محفوظ کیا جائے۔


وہی کشمیر پنڈتوں کی ایک تنظیم یوتھ آل انڈیا کشمیری سماج نے اس حوالے سے ایک سیمنار کا بھی اہتمام کیا ہے، جس میں تنظیم کے چیئرمین آرکے بٹ نے مایوسی کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ پچھلی سرکاروں نے کشمیری پنڈتوں کو نظر انداز کیا ہے اورانہیں بی جے پی پر امید تھی کہ پنڈتوں کی باز آباد کاری ، وطن واپسی ، روزگار، اور دیگر مسائل کو وہ حل کریں گی لیکن ابھی تک ان کا کوئی مسلہ حل نہیں ہوا ہے ان کا کہنا ہے اگرچہ باقی فرقوں کو ریزر ویشن ملتی ہے لیکن کشمیر پنڈتوں کو نظر اندز کیا گیا ہے انہوں اب مرکزی سرکار سے اپیل کی ہے کہ اس بار کشمیری پنڈتوں کو نظر انداز نہ کیا جائے اور انہیں سیاسی طور پر اپنا حق دیا جائے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Mar 25, 2021 02:22 AM IST