ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر : رضاکار تنظیم کو ملی بال تل میں لنگر لگانے کی جازت ، لوگوں میں پیدا ہوئی امرناتھ یاترا کے انعقاد کی امید

Jamm and Kashmir News : سالانہ امرناتھ یاترا 2021 کے انعقاد سے متعلق اگرچہ شری امرناتھ شرائین بورڈ کی طرف سے باقاعدہ اعلان ہونا ابھی باقی ہے ۔ تاہم بورڑ کی طرف سے ایک بار پھر اشارے ملنے لگے ہیں کہ اس سال امرناتھ یاترا منعقد کی جاسکتی ہے۔

  • Share this:
جموں و کشمیر : رضاکار تنظیم کو ملی بال تل میں لنگر لگانے کی جازت ، لوگوں میں پیدا ہوئی امرناتھ یاترا کے انعقاد کی امید
جموں و کشمیر : رضاکار تنظیم کو ملی بال تل میں لنگر لگانے کی جازت ، لوگوں میں پیدا ہوئی امرناتھ یاترا کے انعقاد کی امید ۔ فائل فوٹو ۔

جموں و کشمیر : سالانہ امرناتھ یاترا 2021 کے انعقاد سے متعلق اگرچہ شری امرناتھ شرائین بورڈ کی طرف سے باقاعدہ اعلان ہونا ابھی باقی ہے ۔ تاہم بورڑ کی طرف سے ایک بار پھر اشارے ملنے لگے ہیں کہ اس سال امرناتھ یاترا منعقد کی جاسکتی ہے۔ اس کا تازہ اشارہ شری امرناتھ شرائین بورڈ کے ایڈیشن چیف ایکزیکٹو افسر کی طرف سے لنگر لگانے والی ایک رضاکار تنظیم کو یاترا کے بیس کیمپ بال تل میں لنگر لگانے کی اجازت دئیے جانے سے ملا ہے۔ ریاست ہریانہ کی برفانی سیوا منڈل نامی تنظیم کے نام جاری کئے گئے اجازت نامے میں تنظیم سے کہا گیا ہے کہ وہ بال تل بیس کیمپ میں اٹھائیس جون سے بائیس اگست دو ہزار اکیس تک لنگر قائم کر سکتے ہیں۔ لنگر قائم کئے جانے سے متعلق اس اجازت نامے میں ، جس کی کاپی نیوز 18 اردو کے پاس ہے ، مذکورہ تنظیم سے کہا گیا ہے کہ وہ رواں ماہ کی اُنیس تاریخ تک لنگر میں خدمت انجام دینے والے سبھی رضاکاروں سے متعلق تمام تفصیلات بشمول پولیس ویریفیکیشن سرٹیفیکٹ اور آر ٹی پی سی آر سرٹفیکیٹ متعلقہ حکام کو سونپ دے اور بیس جون تک بال تل بیس کیمپ پہنچ جائے۔ تنظیم سے کووڈ ایس او پی ایز کا خاص دھیان رکھنے کے لئے بھی کہا گیا ہے۔


ایس اے ایس بی کے اس اقدام سے سالانہ امرناتھ یاترا سے وابستہ مقامی افراد میں ایک بار پھر امید کی کرن جاگ گئی ہے۔ چیئرمین ٹریڈرس یونین سونمرگ محمد یوسف شیرا نے نیوز 18 اردو کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ بال تل میں لنگر لگانے کی اجازت ملنے سے ان کی امیدیں مزید بڑھ گئی ہیں کہ اس سال امرناتھ یاترا کا انعقاد ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اگرچہ انہیں بیس کیمپ میں عارضی دکانیں قائیم کرنے یا گھوڑے بانوں کو اجازت دئیے جانے کے بارے میں ابھی تک کچھ بھی نہیں بتایا گیا ہے ۔ تاہم ایک رضاکار تنظیم کو لنگر لگانے کی اجازت ملنے سے یاترا سے منسلک افراد میں خوشی کی لہر دوڑ گئی ہے۔


انہوں نے کہا کہ ضلع گاندربل اور جموں و کشمیر کے دیگر علاقوں سے تعلق رکھنے والے ہزاروں افراد کا روزگار پوتر امرناتھ یاترا کے ساتھ جُڑا ہوا ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ شری امرناتھ شرائین بورڈ جلد از جلد یاترا منعقد کرانے کے حوالے سے باقاعدہ اعلان کرے ۔ کشمیر کے ساتھ ساتھ جموں کے یاترا سے وابستہ افراد بھی چاہتے ہیں کہ اس سال امرناتھ یاترا منعقد کی جائے ۔ تاکہ ان کے نقصانات کی کسی حد تک بر پائی ہوسکے۔ جموں ٹورسٹ ٹیکسی آپریٹرس فیڈریشن کے صدر اندرجیت شرما نے نیوز 18 اردو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ٹیکسی ٹیور آپریٹرس گزشتہ تین برس سے نقصانات جھیل رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ اس طبقے سے وابستہ لوگوں کا روزگار براہ راست سیاحت ، ویشنو دیوی اور امرناتھ جی کی پویتر یاترا پر منحصر ہے لہذا وہ چاہتے ہیں کہ یاترا کو منعقد کرانے کا اعلان کیا جائے ۔


انہوں نے کہا کہ ایک تنظیم کو بال تل میں لنگر لگانے کی اجازت مل جانے سے انہیں مسرت ہے کیونکہ اس سے ایک بار پھر یہ اشارہ مل رہا ہے کہ اس سال یاترا منعقد کی جاسکتی ہے ۔ روگناتھ بازار ٹریڈرس ایسوسی ایشن کے صدر برج موہن شرما نے کہا کہ یاترا شروع ہوجانے سے جموں کے کاروباریوں کو بھی فائدہ پہنچ سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے مختلف حصوں سے آنے والے امرناتھ یاتری مندروں کے شہر جموں میں بھی خریداری کرتے ہیں ، جس سے یہاں کے کاروبار کو فروغ حاصل ہوتا ہے۔

واضح رہے کہ شری امرناتھ شرائین بورڑ کی طرف سے امرناتھ یاترا دو ہزار اکیس کے لئے اپریل ماہ کے آغاز میں یاتریوں کی رجسٹریشن کا عمل شروع کیا گیا تھا ۔ تاہم جموں و کشمیر اور ملک کے دیگر حصوں میں کووڈ وبا پھیلنے کی وجہ سے بائیس اپریل کو یہ عمل ملتوی کیا گیا تھا ۔ حالانکہ رجسٹریشن کا عمل ابھی بھی بحال نہیں کیا گیا ہے ۔ تاہم یاترا شروع ہوجانے سے متعلق اشارے ملنے سے اب دوبارہ یہ امیدیں پیدا ہوگئی ہیں کہ اسبار سالانہ یاترا منعقد کی جاسکتی ہے ۔ اب سب کی نگاہیں شری امرناتھ شرائین بورڈ کے چیئرمین لیفٹننٹ گورنر منوج سنہا پر لگی ہوئی ہیں کہ وہ کب مقدس امرناتھ یاترا دو ہزار اکیس کے بارے میں فیصلہ لیتے ہیں ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jun 17, 2021 06:00 PM IST