உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Exclusive: کشمیر کے علیحدگی پسند لیڈر گیلانی کے آخری ویڈیو سے پاکستان شرمسار، آئی ایس آئی کے منصوبوں کی کھل پول

    Exclusive: کشمیر کے علیحدگی پسند لیڈر گیلانی کے آخری ویڈیو سے پاکستان شرمسار، آئی ایس آئی کے منصوبوں کی کھل پول

    Exclusive: کشمیر کے علیحدگی پسند لیڈر گیلانی کے آخری ویڈیو سے پاکستان شرمسار، آئی ایس آئی کے منصوبوں کی کھل پول

    Syed Ali Shah Geelani: جموں وکشمیر (Jammu and Kashmir) کے مرحوم لیڈر سید علی شاہ گیلانی (Separatist Leader SAS Geelani) کے انتقال سے کچھ دن پہلے کا ایک ویڈیو پاکستان کی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کے لئے شرمندگی کا سبب بن گیا ہے۔

    • Share this:
      سری نگر: جموں وکشمیر (Jammu and Kashmir) کے مرحوم لیڈر سید علی شاہ گیلانی (Separatist Leader SAS Geelani) کے انتقال سے کچھ دن پہلے کا ایک ویڈیو پاکستان کی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی (ISI) کے لئے شرمندگی کا سبب بن گیا ہے۔ دراصل، سید علی شاہ گیلانی کا ستمبر میں طویل بیماری کے بعد انتقال ہوگیا تھا، لیکن انہوں نے موت سے کچھ دن پہلے عبداللہ گیلانی Abdullah Gilani) کو اپنا جانشین مقرر کیا تھا۔ وہیں آئی ایس آئی کی کوشش تھی کہ سینئر علیحدگی پسند لیڈر مسرت عالم (Masarat Alam) کو اپنا جانشین اعلان کریں۔

      ؒاعلیٰ خفیہ ذرائع نے کہا کہ موت سے کچھ دن پہلے کا سید علی شاہ گیلانی کا ویڈیو تیارکیا گیا تھا اور پیرکو اسے جاری کیا گیا۔ اس ویڈیو کو پاکستان کے اعلیٰ رہنماوں اور صحافیوں نے جاری کیا اور شیئر بھی کیا۔ ذرائع کی پختہ جانکاریوں کی بنیاد پر کہا کہ آئی ایس آئی ہیڈ کوارٹر سید علی شاہ گیلانی کے اس ویڈیو سے خوش نہیں ہے اور کہا ہے کہ اس کے افسران نے معاملے کو ٹھیک سے ہینڈل نہیں کیا، اس بارے میں پاکستانی ایجنسی نے رپورٹ بھی منگائی ہے۔

      سید علی شاہ گیلانی کے بعد آئی ایس آئی کی کوشش مسرت عالم کو ان کا اصل جانشین پروجیکٹ کرنے اور سیاسی جانشین کے طور پر آگے بڑھانے کی تھی، لیکن سید علی شاہ گیلانی کے ویڈیو ریلیز نے آئی ایس آئی کے منصوبوں پر پانی پھیر دیا ہے۔ 5 ستمبر کو سید علی شاہ گیلانی کے جانشین کے طور پر مسرت عالم کے نام کا اعلان کیا جانا تھا اور اس سے ایک دن پہلے ’کوورٹ ایکشن ڈویژن‘ نے عبداللہ گیلانی کے اسلام آباد میں چھاپہ مارا اور ان سے کہا کہ وہ ویڈیو کو جاری نہ کریں۔ خدشہ اس بات کا ہے کہ عبداللہ گیلانی کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔

      سید علی شاہ گیلانی کے انتقال کے بعد مسرت عالم کو آل پارٹییز حریت کانفرنس یا تحریک حریت کا چیئرمین اعلان کیا گیا ہے۔ سری نگر میں حریت کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا، ‘ہمارے لائف چیئرمین گیلانی اور سینئرلیڈر محمد اشرف صحرائی کی موت کے بعد آل پارٹیز حریت کانفرنس کے لئے نقصان کی بھرپائی کرپانا ممکن نہیں ہے۔ حالانکہ حریت لیڈر شپ کے سامنے کھڑے چیلنجز اور اس کے کردار کو دیکھتے ہوئے مسرت عالم کو حریت کا نیا چیئرمین منتخب کیا گیا ہے‘۔

      واضح رہے کہ مسرت عالم جموں وکشمیر کے پاکستان میں انضمام کے حق میں تھا۔ حالانکہ موجودہ وقت میں وہ دہلی واقع تہاڑ جیل میں بند ہے۔ سال 1990 کے بعد سے مسلسل دو دہائی سے وہ جیل میں ہیں۔ اسے آخر بار 17 اپریل 2015 کو سری نگر میں گیلانی کے استقبال میں منعقدہ ریلی میں پاکستان حامی نعرے بازی لگوانے اور پاکستان کا پرچم لہرانے کی وجہ سے گرفتار کیا گیا تھا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: