உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں و کشمیر : سری نگر میں دکاندار کا گولی مار کر قتل، 24 گھنٹے میں دوسرا دہشت گردانہ حملہ

    جموں و کشمیر : سری نگر میں دکاندار کا گولی مار کر قتل، 24 گھنٹے میں دوسرا دہشت گردانہ حملہ

    جموں و کشمیر : سری نگر میں دکاندار کا گولی مار کر قتل، 24 گھنٹے میں دوسرا دہشت گردانہ حملہ

    سری نگر کے بوہری کدل علاقہ میں دہشت گردوں نے پیر کو ایک عام شہری کا گولی مار کر قتل کردیا ۔ کشمیر میں 24 گھنٹوں کے اندر دوسرا دہشت گردانہ حملہ تھا ۔

    • Share this:
      سری نگر : سری نگر کے بوہری کدل علاقہ میں دہشت گردوں نے پیر کو ایک عام شہری کا گولی مار کر قتل کردیا ۔ کشمیر میں 24 گھنٹوں کے اندر دوسرا دہشت گردانہ حملہ تھا ۔ جموں و کشمیر پولیس کے مطابق پیر کو بانڈی پورہ کے رہنے والے محمد ابراہیم خان کو دہشت گردوں نے گولی ماردی ۔ وہ سیلس پرسن کے طور پر کام کرتا تھا ۔ اسپتال میں علاج کے دوران ابرہیم نے دم توڑ دیا ۔ ایک پولیس افسر نے بتایا کہ سری نگر کے بانڈی پورہ کے رہنے والے غلام محمد خان کے بیٹے محمد ابراہیم خان کو قریب سے گولیاں ماری گئیں ، جس سے وہ بری طرح زخمی ہوگیا تھا ۔ اس کو نزدیکی اسپتال میں بھری کیا گیا ، لیکن اس نے دم توڑ دیا ۔ خان کی موت کے ساتھ ہی وادی میں مارے گئے کل شہریوں کی تعداد 15 ہوگئی ہے ۔

      افسر نے کہا کہ ہم نے معاملہ درج کرکے جانچ شروع کردی ہے ۔ اس واقعہ کے بعد سے پولیس نے علاقہ میں گھیرابندی کرکے تلاشی مہم شروع کردی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ ابراہیم خان پاس کے مہاراج گنج علاقہ میں ایک سیلس مین کے طور پر کام کرتا تھا ۔

      اس سے پہلے اتوار کو دہشت گردوں نے کشمیر کے بٹمالو علاقہ کی ایس ڈی کالونی میں پولیس کانسٹیبل 29 سالہ توصیف کا گولی مار کر قتل کردیا ۔ پولیس کانسٹیبل کے سر پر گولی لگی تھی ۔ اس کی شناخت کانسٹیبل توصیف احمد کے طور پر ہوئی ہے ۔ اتوار دیر شام سری نگر کے بٹمالو علاقہ میں دہش گردوں نے گولہ باری کی تھی ۔ دہشت گرد اس واقعہ کو انجام دینے کے بعد فرار ہوگئے تھے ۔

      بتادیں کہ جموں و کشمیر میں فوج کی کارروائی سے خوفزدہ دہشت گرد عام شہریوں ، پولیس اور فوج کے جوانوں کو اپنا نشانہ بنا رہے ہیں ۔ دو دن پہلے ہی دہشت گردوں نے سری نگر میں ایس کے آئی ایم ایس میڈیکل کالج کے باہر دہشت گردوں نے سیکورٹی فورسیز کو نشانہ بنایا اور فائرنگ کی ۔ اس واقعہ کو انجام دینے کے بعد دہشت گرد فرار ہوگئے ۔ راحت کی بات یہ رہی کہ دہشت گردوں کی فائرنگ میں سیکورٹی فورسیز کے کسی بھی جوان کو نقصان نہیں پہنچا ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: