உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    J&K News: وزیراعظم 24 اپریل کو کریں گے سانبہ ضلع کی پالی پنچایت میں لوگوں سے خطاب

    J&K News: وزیراعظم 24 اپریل کو کریں گے سانبہ ضلع کی پالی پنچایت میں لوگوں سے خطاب

    J&K News: وزیراعظم 24 اپریل کو کریں گے سانبہ ضلع کی پالی پنچایت میں لوگوں سے خطاب

    Jammu and Kashmir : اس گاؤں کے مقامی لوگ وزیر اعظم کا استقبال کرنے کے لیے بے چین ہیں۔ تاہم ملک کے دیگر حصوں کی طرح دیہات کے پڑھے لکھے نوجوان بے روزگاری کے مسئلے سے دوچار ہیں۔ انہیں امید ہے کہ وزیر اعظم ضرور اس مسئلہ کو حل کریں گے اور ان کے لیے کچھ روزگار پیکج کا اعلان کریں گے۔

    • Share this:
    جموں : وزیر اعظم نریندر مودی 24 اپریل کو جموں کے ضلع سانبہ کے گاؤں پلی میں قومی پنچایت دن کے موقع پر ایک میگا پنچایت کانفرنس سے خطاب کرنے والے ہیں۔ اس چھوٹے سے گاؤں کے مکین وزیر اعظم نریندر مودی کے آنے والے دورے کو لے کر پرجوش ہیں۔ اس گاؤں میں بہت سے ترقیاتی کام ہو رہے ہیں اور تمام شعبوں میں بڑی تبدیلی بھی آ رہی ہے۔  اہم بات یہ ہے کہ یہ گاؤں جموں و کشمیر کے مرکز کے زیر انتظام علاقہ میں پہلی کاربن فری سولر پنچایت بننے کے لیے بھی تیار ہے۔ یہ گاؤں پلی ضلع سامبا میں واقع ہے اور جموں کے سرمائی دارالحکومت سے 17 کلومیٹر دور واقع ہے۔

    رندھیر کمار شرما، سرپنچ، پلی پنچایت ، سانبہ نے کہا کہ یہ گاؤں 340 گھروں پر مشتمل ہے، ان دنوں ایک اپ گریڈ شدہ پنچایت گھر، مرمت شدہ سرکاری ہائی اسکول کی عمارت، بہتر کھیل کے میدان، پی ایچ ای کے بنیادی ڈھانچے کی اپ گریڈیشن اور دیگر متعلقہ ترقیاتی منصوبوں کے ساتھ ایک بڑی تبدیلی دیکھنے کو مل رہی ہے۔  انہوں نے مزید کہا کہ، "سب کی توجہ پوری طرح سے اس گاؤں پر مرکوز ہو گئی ہے اور یہ صرف اس وجہ کیونکہ وزیراعظم اس گاؤں میں پہلی بار اپنا قدم رکھ رہے ہیں"۔

     

    یہ بھی پڑھئے : 400th Parkash Purab: وزیر اعظم مودی نے جاری کیا سکہ اور ڈاک ٹکٹ


    ایک مقامی باشندے راشپال سنگھ نے کہا کہ گاؤں کے مکین بہت پرجوش ہیں ۔ ان کا ماننا ہے کہ ان کا گاؤں اب تمام سہولیات سے آراستہ ہے، خاص طور پر پانی، بجلی، اپ گریڈ شدہ صحت شعبہ اور اچھی سڑکوں پر کام تیزی سے جاری ہے۔ رہائشیوں کا کہنا ہے کہ یہ گاؤں حکومت نے وزیر اعظم کی ریلی کے لیے اس وجہ سے بھی منتخب کیا ہے کہ یہ پہلے سے  ڈیولپڈ ہے لیکن اب ان کا دورہ یقینی طور پر اس علاقے میں ترقیاتی منصوبوں کو فروغ دے گا۔

    پلی گاؤں کے لیے سب سے بڑی کامیابی یہ ہے کہ یہ جموں و کشمیر میں پہلی کاربن فری سولر پنچایت بننے کے لیے تیار ہے۔  سولر چولہوں سے لے کر الیکٹرک بس کی سواریوں تک، اس گاؤں میں جنگی بنیادوں پر کاربن نیوٹرل جموں کشمیر کی پہلی پنچایت بننے والی ہے۔

     

    یہ بھی پڑھئے : پانچ سے 12 سال کے بچوں کا کورونا ویکسینیشن جلد، اس کورونا ویکسین کو ملی منظوری


    گاؤں پالی سانبہ کے رہنے والے یودھویر شرما نے کہا کہ ایک 500 کے وی سولر پلانٹ صرف تین ہفتوں کے ریکارڈ وقت میں تیار ہونے  جا رہا ہے اور یہ 6,408 مربع میٹر کے وسیع رقبے پر محیط ہے۔ اس پلانٹ کے لگنے سے مزید لوگوں کو بجلی فراہم کرے گا۔  مرکزی حکومت کے پروگرام 'گرام ارجا سوراج' کے تحت 340 سے زیادہ مکانات ، سولر پروجیکٹ سے پیدا ہونے والی بجلی سے پالی گاؤں کے مکینوں کی روزانہ کی 2,000 یونٹس کی ضرورت پوری کرے گی۔

    اس گاؤں کے مقامی لوگ  وزیر اعظم کا استقبال کرنے کے لیے بے چین ہیں۔ تاہم ملک کے دیگر حصوں کی طرح دیہات کے پڑھے لکھے نوجوان بے روزگاری کے مسئلے سے دوچار ہیں۔ انہیں امید ہے کہ وزیر اعظم ضرور اس مسئلہ کو حل کریں گے اور ان کے لیے کچھ روزگار پیکج کا اعلان کریں گے۔ 24 اپریل کو اپنی تقریر میں بےروزگار نوجوانوں کے لئے کوئی تحفہ دے کر جائیں گے۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: