ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

پلوامہ دہشت گردانہ حملہ : این آئی اے نے مزید دو افراد کو کیا گرفتار ، کل عدالت میں ہوگی پیشی

این آئی اے نے جموں و کشمیر کے پلوامہ ضلع میں سی آر پی ایف کے قافلے پر ہوئے فدائین حملے کے سلسلے میں پلوامہ کے دو اور مقامی باشندوں کو جمعہ کی شام گرفتار کیا ہے ۔

  • UNI
  • Last Updated: Mar 06, 2020 10:46 PM IST
  • Share this:
پلوامہ دہشت گردانہ حملہ : این آئی اے نے مزید دو افراد کو کیا گرفتار ، کل عدالت میں ہوگی پیشی
پلوامہ خود کش حملہ میں سی آر پی ایف کے چالیس جوان شہید ہوگئے تھے ۔ فائل فوٹو ۔

قومی جانچ ایجنسی (این آئی اے) نے جموں و کشمیر کے پلوامہ ضلع میں سی آر پی ایف کے قافلے پر ہوئے فدائین حملے کے سلسلے میں پلوامہ کے دو اور مقامی باشندوں کو جمعہ کی شام گرفتار کر لیا ۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ خفیہ اطلاع کی بنیاد پر آج شام واعظ الاسلام اور محمد عباس کو گرفتار کیا گیا ۔ دونوں کو ہفتہ کو این آئی اے کی عدالت میں پیش کیا جائے گا۔


قابل ذکر ہے کہ گزشتہ سال فروری میں پلوامہ میں سی آر پی ایف کے قافلے پر حملے کے سلسلے میں منگل کو پلوامہ کے ایک شخص اور اس کی بیٹی کو گرفتار کیا گیا تھا ۔ گرفتار ملزم طارق احمد شاہ (50) اور اس کی بیٹی کے انشاء جان (23) کو این آئی اے کی خصوصی عدالت نے اسی دن 10 دن کی پولیس ریمانڈ پر بھیج دیا۔





ذرائع نے بتایا کہ باپ اور بیٹی دونوں نے قافلے میں دھماکہ کرنے والے عادل احمد ڈار اور جیش محمد کے دیگر کمانڈروں کو حملے کے واقعہ سے پہلے اپنے گھر میں پناہ دی تھی ۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ شاہ نے اپنے گھر میں ان دہشت گردوں کو پناہ دی تھی اور یہیں رہ کر انہوں نے حملے کی سازش رچی تھی ۔ سیکورٹی فورسز کو ان کے گھر سے کچھ قابل اعتراض دستاویزات بھی برآمد ہوئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں :

پلوامہ دھماکہ : دہشت گردوں کو پناہ دینے کے الزام میں این آئی نے باپ اور بیٹی کو کیا گرفتار
جموں و کشمیر: فائرنگ اور گرینیڈ پھینکنے کے دو الگ الگ واقعات میں 2 عام شہریوں کی موت ، ایک زخمی
First published: Mar 06, 2020 10:46 PM IST