ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر : نوگام حملے میں پولیس اہلکار کی شہادت پر اس کے آبائی گاؤں میں غم کی لہر

رمیض کی آخری رسومات اور نماز جنازہ میں ہزاروں لوگوں نے شرکت کی اور پر نم آنکھوں سے گاوں کے ہر دل عزیز نوجوان کو سپرد لحد کیا ۔ مقامی لوگوں کے مطابق رمیض ایک شریف النفس اور باکردار شخص ہونے کے ساتھ ساتھ انسانیت کا دل رکھنے والے انسان بھی تھے ، جو دوسروں کی مدد کے لئے ہمیشہ تیار رہتے تھے ۔

  • Share this:
جموں و کشمیر : نوگام حملے میں پولیس اہلکار کی شہادت پر اس کے آبائی گاؤں میں غم کی لہر
جموں و کشمیر : نوگام حملے میں پولیس اہلکار کی شہادت پر اس کے آبائی گاؤں میں غم کی لہر

جموں و کشمیر: سرینگر کے نوگام علاقہ میں ڈیوٹی کے دوران اپنی جان کا نذرانہ پیش کرنے والے جموں و کشمیر پولیس اہلکار رمیض احمد کی موت پر اس کے آبائی گاوں آر خوشی پورہ میں غم کی لہر دوڑ گئی اور پورا علاقہ ماتم کناں ہو گیا ۔ جوں ہی رمیض کا جسد خاکی اس کے آبائی گھر پہنچا ، تو ہزاروں کی تعداد میں لوگ امنڈ پڑے اور اشکبار آنکھوں سے رمیض کا استقبال کیا ۔ اس موقع پر ایس ایس پی اننت ناگ امتیاز حسین و دیگر افسران بھی موجود تھے ۔


دراصل رمیض کی کچھ عرصہ بعد شادی ہونے والی تھی اور گھر میں اس حوالے سے تیاریاں زوروں پر تھیں ۔ لیکن قدرت کو کچھ اور ہی منظور تھا اور موت نے رمیض کو اپنے چاہنے والوں سے ہمیشہ کیلئے جدا کر دیا ۔ رمیض نے کم عمری میں ہی اپنے والد کو کھو دیا ، جس کے بعد پورے عیال کی کفالت کا بوجھ اس کے کمسن کاندھوں پر پڑ گیا ۔ رمیض کے والد ٹیومر کا شکار ہونے کے بعد رمیض کو اکیلا چھوڑ گئے ، جس کے بعد رمیض نے ایس آر او کے تحت جموں و کشمیر پولیس جوائن کیا ۔


رمیض کی آخری رسومات اور نماز جنازہ میں ہزاروں لوگوں نے شرکت کی اور پر نم آنکھوں سے گاوں کے ہر دل عزیز نوجوان کو سپرد لحد کیا ۔ مقامی لوگوں کے مطابق رمیض ایک شریف النفس اور باکردار شخص ہونے کے ساتھ ساتھ انسانیت کا دل رکھنے والے انسان بھی تھے ، جو دوسروں کی مدد کے لئے ہمیشہ تیار رہتے تھے اور لوگوں کے سکھ دکھ میں شریک ہوتے تھے ۔ ایک مقامی نوجوان بلال احمد نے رمیض کو باصلاحیت نوجوان قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ کافی کم عمری میں ان سے رخصت ہوئے ۔


بلال کے مطابق حال ہی میں علاقہ کی ایک مفلس لڑکی کی شادی کیلئے رمیض نے اپنی ساری تنخواہ وقف کی ۔ جبکہ دوسروں کا درد محسوس کرتے ہوئے رمیض نے کئی مرتبہ ضرورت مندوں کی مدد کی ہے ۔ لوگوں نے جہاں رمیض کی موت پر افسوس اور تعزیت کا اظہار کیا وہیں کشمیر میں جاری خون خرابے کو مکمل طور پر بند کرنے کی خواہش بھی ظاہر کی ۔

ادھر آئی جی پی کشمیر وجے کمار کے مطابق نوگام میں بی جے پی لیڈر کی رہائش پر حملہ کرنے والے چار ملیٹینٹوں میں سے دو کی پہچان کی گئی ہے اور ان کا تعلق لشکر طیبہ سے بتایا جا رہا ہے ۔ وجے کمار کے مطابق ایک برقع پوش ملیٹینٹ نے بی جے پی لیڈر کی رہائش گاہ کا داخلی دروازہ کھٹکھٹایا ، جس کے بعد ڈیوٹی پر تعینات پولیس اہلکار نے جوں ہی دروازہ کھولا تو دیگر تین ملیٹینٹوں نے اندھا دھند فائرنگ کر کے رمیض کو ہلاک کر دیا ۔ آئی جی پی نے کہا کہ مفرور حملہ آور ملیٹینٹوں کی بڑے پیمانے پر تلاش شروع کر دی گئی ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Apr 01, 2021 08:49 PM IST