உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں وکشمیر: پلوامہ میں سیکورٹی اہلکاروں پر دہشت گردانہ حملے میں پولیس اہلکار شہید، ایک سی آر پی ایف جوان زخمی

    جموں وکشمیر: پلوامہ میں سیکورٹی اہلکاروں پر دہشت گردانہ حملے میں پولیس اہلکار شہید

    جموں وکشمیر: پلوامہ میں سیکورٹی اہلکاروں پر دہشت گردانہ حملے میں پولیس اہلکار شہید

    کشمیر زون کی پولیس نے ٹوئٹ کیا ’پلوامہ کے پنگلانہ میں سی آر پی ایف اور پولیس کی مشترکہ ٹیم پر دہشت گردوں نے گولی باری کی۔ اس دہشت گردانہ حملے میں ایک پولیس اہلکار شہید ہوگیا اور سی آرپی ایف کا ایک جوان زخمی ہوگیا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Pulwama, India
    • Share this:
      سری نگر: جموں وکشمیر کے پلوامہ ضلع میں اتوار کو سیکورٹی اہلکاروں کی ٹیم پر دہشت گردوں کے حملے میں ایک پولیس اہلکار شہید ہوگئے، جبکہ سی آر پی ایف کا ایک جوان زخمی ہوگیا۔ پولیس نے یہ جانکاری دی۔ انہوں نے کہا کہ حملے کا حادثہ جنوبی کشمیر ضلع کے پنگلانہ علاقے میں ہوا۔

      کشمیر زون کی پولیس نے ٹوئٹ کیا ’پلوامہ میں پنگلانہ میں سی آر پی ایف اور پولیس کی مشترکہ ٹیم پر دہشت گردوں نے گولی باری کی۔ اس دہشت گردانہ حملے میں ایک پولیس اہلکار شہید ہوگیا اور سی آرپی ایف کا ایک جوان زخمی ہوگیا۔ پولیس نے کہا کہ اضافی پولیس اہلکاروں کو موقع پر روانہ کیا گیا ہے اور علاقے کی گھیرا بندی کی جارہی ہے۔

      جموں وکشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے اس حادثے کی مذمت کی ہے۔
      جموں وکشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے اس حادثے کی مذمت کی ہے۔


      سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے اس حملے کی مذمت کرتے ہوئے ٹوئٹ کرکے کہا، ’اس حملے کی مذمت کرتے ہوئے میں جموں وکشمیر پولیس اہلکاروں کے اہل خانہ کے تئیں اپنے رنجم وغم کا اظہار کرتا ہوں، جنہوں نے آج فرض نبھاتے ہوئے اپنی زندگی داوں پر لگا دی۔ میں سی آر پی ایف کے زخمی جوانوں کے جلد صحتیاب ہونے کی دعا بھی کرتا ہوں‘۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      جموں وکشمیر: شوپیاں میں سیکورٹی اہلکاروں کا سرچ آپریشن، دو دہشت گردوں کے گھرنے کا دعویٰ

      یہ بھی پڑھیں۔

      کولگام کے سیب کے باغات میں خطرناک بیماری نمودار، کسان پریشان، فصلیں تباہ

      اس سے پہلے پلوامہ ضلع کے کھرپورہ رتنی پورہ میں 24 ستمبر کو دہشت گردوں نے دو غیر مقامی مزدوروں کو گولی مار دی تھی، جس میں وہ زخمی ہوگئے۔ شمشاد اور فیضان قاصری کے طور پر شناخت کئے گئے دونوں مزدور بہار کے رہنے والے ہیں۔ ایسا ہی ایک اور حملہ دو ستمبر کو جنوبی کشمیر ضلع میں ہوا تھا، جب ایک دیگر غیرمقامی شخص زخمی ہوگیا تھا۔

      اس سال اب تک ٹارگٹ کلنگ میں کل 14 شہری مارے گئے ہیں اور سیکورٹی اہلکاروں کے چھ جوان شہید ہوئے ہیں۔ اسی سال جنوری میں اننت ناگ میں ٹارگیٹ کلنگ میں ایک پولیس اہلکار کی موت ہوگئی تھی۔

       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: