உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں۔کشمیر میں دہشت گردوں کی نئ سازش، نشانے پر 200  لوگ، سکیورٹی فورسز الرٹ

    انٹیلی جنس رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ دہشت گردوں نے جموں و کشمیر میں ٹارگیٹ کلنگ (Target Killing) کے لیے 200 افراد کی فہرست تیار کی ہے۔

    انٹیلی جنس رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ دہشت گردوں نے جموں و کشمیر میں ٹارگیٹ کلنگ (Target Killing) کے لیے 200 افراد کی فہرست تیار کی ہے۔

    انٹیلی جنس رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ دہشت گردوں نے جموں و کشمیر میں ٹارگیٹ کلنگ (Target Killing) کے لیے 200 افراد کی فہرست تیار کی ہے۔

    • Share this:
      جموں و کشمیر  (Jammu and Kashmir) میں دہشت گرد (Terrorist) ایک بار پھر خوف و ہراس پھیلانے کی تیاری کر رہے ہیں۔ انٹیلی جنس رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ دہشت گردوں نے جموں و کشمیر میں ٹارگیٹ کلنگ (Target Killing) کے لیے 200 افراد کی فہرست تیار کی ہے۔ فہرست میں مخبروں ، خفیہ ایجنسیوں ، مرکزی حکومت اور فوج کے قریب سمجھے جانے والے میڈیا کے لوگ، وادی کے باہر کے لوگوں اور کشمیری پنڈتوں کے نام اور ان کی گاڑی کے نمبر شامل ہیں۔

      رپورٹ میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ 21 ستمبر کو پاکستان کے مظفر آباد میں دہشت گرد تنظیموں ایک میٹنگ ہوئی تھی۔ جیش محمد ، لشکر طیبہ ، حزب المجاہدین اور البدر سمیت کئی دہشت گرد تنظیموں کے دہشت گرد میٹنگ میں شریک تھے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ تمام تنظمیوں کے لوگوں کو شامل کرکے ایک نئی دہشت گرد تنظیم تشکیل دی جائے گی۔ جو صرف مخبروں ، انٹیلی جنس ایجنسی کے لوگوں ، وادی سے باہر کے لوگوں اور آر ایس ایس اور بی جے پی کے لوگوں کو نشانہ بنائے گی۔

      رپورٹ کے مطابق میٹنگ میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ آنے والے وقت میں یہ تنظیم وادی میں ٹارگیٹ کلنگ کی ذمہ داری لے گی۔ اس مقصد کے لیے اری اور تنگ دھار کے راستے سرحد پار سے گرینیڈ اور پستول بھیجے جا رہے ہیں۔ رپورٹ میں یہ بھی انکشاف کیا گیا ہے کہ 5 اکتوبر کو اسٹریٹ ورینڈر ویریندر پاسوان کا قتل غلط شناخت کا معاملہ ہو سکتا ہے۔

      پاکستان کی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کی ہدایات پر دہشت گردوں کی جانب سے کی جانے والی اس ٹارگبٹ کلنگ پر سکیورٹی فورسز (security forces) کڑی نظر رکھے ہوئے ہیں۔ پولیس اور انتظامیہ نے اپنی چوکسی بڑھا دی ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: