உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    J&K News: بہت جلد پارلیمنٹ کی نئی عمارت کی فرش پر دیکھیں گے کشمیری قالین

    J&K News: بہت جلد پارلیمنٹ کی نئی عمارت کی فرش پر دیکھیں گے کشمیری قالین

    J&K News: بہت جلد پارلیمنٹ کی نئی عمارت کی فرش پر دیکھیں گے کشمیری قالین

    Jammu and Kashmir : وسطی کشمیر کے بڈگام ضلع کے خان پور، شنگلی پورہ اور ژھل براس دیوس علاقوں کے اس دور افتادہ گاؤں کے کاریگر نئی دہلی میں پارلیمنٹ کی عمارت کے لئے کشمیری سلک قالین بنانے کے لیے دن رات کام کر رہے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir | Srinagar | Jammu | Badgam
    • Share this:
    سرینگر : ہندوستان کی پارلیمنٹ کی نئی عمارت کی فرش پر بہت جلد آپ  کشمیری قالین دیکھیں گے، جن کے لئے وسطی کشمیر کے بڈگام ضلع کے خان پور، شنگلی پورہ اور ژھل براس دیوس علاقوں کے اس دور افتادہ گاؤں کے کاریگر نئی دہلی میں پارلیمنٹ کی عمارت کے لئے کشمیری سلک قالین بنانے کے لیے دن رات کام کر رہے ہیں۔ بہت جلد پارلیمنٹ کی نئی عمارت کی خوبصورتی میں اضافہ ہوگا۔ اس دور دراز علاقے میں کشمیری کاریگر نئی پارلیمنٹ کے لئے ریشمی قالین بنانے میں مصروف ہیں۔ مجموعی طور پر پارلیمنٹ کے لیے بارہ قالین بنائے جارہے ہیں ، جن میں نو مکمل ہو چکے ہیں اور تین پر کام جاری ہے۔ اس قالین کے ڈیلر قمر علی کا کہنا ہے کہ نئی پارلیمنٹ عمارت کے لیے بنائے جارہے ان قالینوں پر کام کرتے ہوئے کئی ماہ ہوچکے ہیں اور اب چند دنوں میں انہیں مکمل کیا جائے گا۔ ان کا کہنا ہے کہ ملک کے اعلیٰ ترین آئینی ادارے کے لئے قالین بنانا ان کے لیے قابل فخر لمحہ ہے۔

    قمر علی کا کہنا ہے کہ انہیں نومبر دوہزار اکیس میں یہ آرڈر موصول ہوا۔ تقریباً نوے فیصد کام مکمل ہوچکا ہے اور یہ ان کے لئے خوشی کا لمحہ ہے کہ زندگی میں پہلی مرتبہ انہیں ایسا آرڈر ملا ہے۔ اس کام  سے اس صنعت کو مزید فروغ دینے میں مدد ملے گی۔ جب اسے پارلیمنٹ میں پیش کیا جائے گا تو یہ ہمیں ایک نئی شناخت دے گا۔ قالین کے ڈیلر قمر علی نے نیوز18 جموں وکشمیر لداخ ہماچل کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ یہ جو آرڈر ملا تھا یہ طاہری کارپٹس کو ملا تھا، جو ایک فرم ہے ۔ دراصل پہلے اس پروجیکٹ کا نمونہ بنایا گیا اور وہ دکھایا گیا۔ اس کی بنا پر طاہری کارپٹس کو یہ اکتوبر 2021میں ملا تھا تب سے اس پر کام جاری ہے۔ اب تک 95 فیصد کام مکمل ہوچکا ہے۔ خوشی کا کوئی ٹھکانہ نہیں ہے۔ یہ ہمارے لئے قابل فخر بات ہے بلکہ ایک کشمیری کے لئے فخر کی بات ہے کہ قالین کشمیر سے جارہا ہے وہ بھی ہاتھ سے بنا ہواہے ۔

     

    یہ بھی پڑھئے: جموں و کشمیر کے شوپیاں میں گولیوں سے چھلنی لاش ملی، جانچ میں پولیس مصروف


    قالین بنانے والے کاریگر انتہائی خوشی کا اظہار کررہے ہیں کہ ان کے ہاتھوں سے بنائی جارہی قالینوں کو پارلیمنٹ میں بچھایا جائےگا ۔ ان کاریگروں کا کہنا ہے کہ ڈیزائن بہت مختلف ہے اور اس کو بنانا تھوڑا مشکل تھا لیکن آخر کار انہوں  نے اسے بنا لیا۔ کاریگر طارق احمد خان  نے نیوز18 سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں یقین نہیں تھا کہ ہم پارلیمنٹ کے لئے کام کریں گے، یہ بہت خوشی کی بات ہے کہ ہم پارلیمنٹ کے لئے کام کررہے ہیں اور قالین بنارہے ہیں۔ ۔

     

    یہ بھی پڑھئے: پی ڈی پی کا اہم اجلاس منعقد، محبوبہ مفتی نے کہا: واجپئی کی پالیسی اپنائے سرکار 


    کاریگر منظور احمد نے بھی نیوز18 کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں بہت خوشی ہوئی جب ٹھیکہ دارنے ہمیں یہ آرڈر دیا اور یہ کہا گیا کہ اس کے عوض اچھا خاصا معاوضہ بھی حاصل ہوگا۔ ہم نے دل وجان سے یہ کام شروع کیا۔  اس کو جب پارلیمنٹ میں بچھایا جائے گا تو پوری دنیا دیکھے گی۔ اس سے ہماری رونق بڑھے گی اور اس سے دستکاری کی ترقی ہوگی ۔

    قالین بافی کے ڈیلر قمر علی کا کہنا ہے کہ جب سے انہیں ان قالینوں کا آرڈر ملا ہے تب سے انہیں اچھی خاصی کمائی ہورہی ہے۔ بلکہ اچھی کمائی پر کاریگر بھی خوش کا اظہار کررہے ہیں۔ قمر علی نے کہا کہ جب سے یہ پروجیکٹ ہمیں ملا تب سے ہماری کمائی اچھی خاصی ہورہی ہے۔ دستکاروں کی بھی اچھی خاصی کمائی ہورہی ہے اور امید ہے کہ آگے چل کر سرکار اس انڈسٹری پر دھیان دے گی  تاکہ یہ انڈسٹری زوال پذیری سے بچ سکے اور اس کو نئی روح پھونک دی جائے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: