உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    J&K News: کشمیری پنڈت ملازمین کا دسویں روز بھی احتجاج جاری، اب مظاہرین نے اپنایا یہ نیا طریقہ

    J&K News: کشمیری پنڈت ملازمین کا دسویں روز بھی احتجاج جاری، اب مظاہرین نے اپنایا یہ نیا طریقہ

    J&K News: کشمیری پنڈت ملازمین کا دسویں روز بھی احتجاج جاری، اب مظاہرین نے اپنایا یہ نیا طریقہ

    Jammu and Kashmir: بڈگام میں کشمیری پنڈت راہل بٹ قتل کے دسویں روز بھی مٹن اننت ناگ میں پی ایم پیکیج کشمیری پنڈت ملازم احتجاجیوں نے احتجاجی مظاہرے کئے۔ جبکہ وادی بھر میں احتجاجی مظاہروں کا نہ تھمنے والا سلسلہ جاری ہے۔

    • Share this:
    جموں و کشمیر: بڈگام میں کشمیری پنڈت راہل بٹ قتل کے دسویں روز بھی مٹن اننت ناگ میں پی ایم پیکیج کشمیری پنڈت ملازم احتجاجیوں نے احتجاجی مظاہرے کئے۔ جبکہ وادی بھر میں احتجاجی مظاہروں کا نہ تھمنے والا سلسلہ جاری ہے۔ کشمیری پنڈت ملازمین نے مٹن کے مائیگرنٹ ٹرانزٹ کیمپ سے احتجاجی مارچ نکالا اور نعرہ بازی کرتے ہوئے سوریہ مندر کے باہر دھرنا دیا۔ اس موقع پر کئی احتجاجیوں نے رضاکارانہ طور پر اپنے سر منڈوائے اور مقتول راہل بٹ کو شاندار الفاظ میں خراج عقیدت پیش کیا۔ سوریہ مندر میں ایک خصوصی پوجا بھی کی گئی اور راہل بٹ کے قاتلوں کو سزا دینے اور کشمیری پنڈتوں کے تحفظ کا مطالبہ دہرایا گیا۔ اس موقع پر احتجاجیوں نے پھر ایک بار سرکار پر نشانہ سادھتے ہوئے کہا کہ سرکار ان کے مطالبات کو تسلیم کرنے میں تاحال کسی نتیجے پر نہیں پہنچی ہے، جبکہ ان کا سب سے بڑا مطالبہ ان کی وادی سے باہر تعیناتی کا ہے۔

     

    یہ بھی پڑھئے: آئی جی پی کشمیر وجےکمارکا بڑا دعویٰ- کشمیرمیں سرگرم تمام پرانے دہشت گردوں کا خاتمہ


    رنجن جوتشی نامی احتجاجی نے اپنا سر منڈوا کر بڑے ہی جذباتی طریقے میں راہل بٹ کو خراج عقیدت پیش کیا اور کہا کہ سرکار اس وقت جو اقدامات اٹھا رہی ہے وہ ناکافی ہیں۔ جبکہ ان کی واحد مانگ یہ ہے کہ انہیں فی الفور کشمیر سے نکال کر جموں یا دیگر جگہوں میں تعینات کیا جائے۔ رنجن جوتشی نے کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی پر ان کی کافی امیدیں ٹکی تھی، لیکن افسوس کی بات یہ ہے کہ وزیراعظم کی جانب سے کشمیری پنڈتوں کیلئے تاحال کچھ مثبت سامنے نہیں آیا ہے، جس کی وجہ سے کشمیری پنڈتوں کی پوری قوم پر مایوسی چھا گئی ہے۔

     

    یہ بھی پڑھئے: جموں وکشمیر میں سرنگ گرنے کے بعد ایک اورحادثہ، دیکھتے ہی دیکھتے پہاڑکا ایک حصہ گرا


    ویسو قاضی گنڈ کے مائیگرنٹ ٹرانزٹ کیمپ سے آنے والے سنجے نے بھی راہل بٹ کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے دیگر کئی افراد کے ساتھ رضاکارانہ طور پر مندر کے احاطے میں سر منڈوا دیا۔ سنجے کا کہنا ہے کہ انہیں راہل بٹ کے قتل کا ہمیشہ افسوس رہے گا اور وہ چاہتے ہیں کہ سرکار ان کی باز آبادکاری کیلئے ٹھوس اقدامات اٹھائے۔ جبکہ وادی میں قیام پزیر کشمیری پنڈتوں کی مانگوں کو بھی عملی جامہ پہنا کر سرکار سنجیدگی کا مظاہرہ کرے۔

    دیگر احتجاجیوں نے اس موقع پر نعرہ بازی کرتے ہوئے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ سرکار نیند سے جاگ جائے اور کشمیری پنڈتوں کو ان کا حق دلانے میں پہل کرے۔ انہوں نے کہا کہ اب وہ دن گئے جب کشمیری پنڈتوں کو سیاسی چارہ بنا کر قربانی کا بکرا بنایا جاتا تھا اور اپنے سیاسی مفادات کی خاطر کشمیری پنڈتوں کا استعمال کیا جاتا تھا ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: